ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

اعظم خان نے ریپ متاثرہ سے کہا : بدنامی کا شہرت لیں گی تو شکل کس طرح دكھائیں گي؟

کانپور: اپنے بیانات کے لئے ہمیشہ تنازعات میں رہنے والے یوپی کے قدآور لیڈر اعظم خان نے اب آبروریزی کا شکار ہوئی ایک خاتون کو لے کر متنازعہ بیان دیا ہے۔ اعظم خاں کانپور میں ایک پروگرام میں شامل ہونے پہنچے تھے۔ اسی دوران اسٹیج سے انہوں نے ایک ریپ متاثرہ پر نشانہ سادھا ۔

  • IBN7
  • Last Updated: Nov 20, 2015 12:57 PM IST
  • Share this:
  • author image
    NEWS18-Urdu
اعظم خان نے ریپ متاثرہ سے کہا : بدنامی کا شہرت لیں گی تو شکل کس طرح دكھائیں گي؟
کانپور: اپنے بیانات کے لئے ہمیشہ تنازعات میں رہنے والے یوپی کے قدآور لیڈر اعظم خان نے اب آبروریزی کا شکار ہوئی ایک خاتون کو لے کر متنازعہ بیان دیا ہے۔ اعظم خاں کانپور میں ایک پروگرام میں شامل ہونے پہنچے تھے۔ اسی دوران اسٹیج سے انہوں نے ایک ریپ متاثرہ پر نشانہ سادھا ۔

کانپور: اپنے بیانات کے لئے ہمیشہ تنازعات میں رہنے والے یوپی کے قدآور لیڈر اعظم خان نے اب آبروریزی کا شکار ہوئی ایک خاتون کو لے کر متنازعہ بیان دیا ہے۔ اعظم خاں کانپور میں ایک پروگرام میں شامل ہونے پہنچے تھے۔ اسی دوران اسٹیج سے انہوں نے ایک ریپ متاثرہ پر نشانہ سادھا ۔


دراصل متاثرہ خاتون ایک خاتون وکیل کے ساتھ یہاں آئی تھی اور اعظم خاں سے مل کر اپنی شکایت کرنا چاہتی تھی ، لیکن پروگرام کے منتظمین نے اسے روک دیا ، جس کی وجہ سےپروگرام میں تھوڑا ہنگامہ ہوگیا۔ اسی بات کو لے کر شاید اعظم خان متاثرہ خاتون سے ناراض ہو گئے۔


انہوں نے اسٹیج سے ہی متاثرہ خاتون پر نشانہ سادھا۔ انہوں نے کہا کہ جن بہنوں نے ہنگامہ آرائی کی ہے، ہم ان کا میمورنڈم لے کر جائیں گے ، لیکن انہیں یہاں سے شہرت ضرور مل گئی ہے۔


یہی نہیں اعظم نے یہ بھی کہا کہ ان کی جو شکایت ہے وہ بدنامی کی شکایت ہے۔ اگر وہ اس بدنامی کو اتنی شہرت دیں گی تو زمانے کو شکل کس طرح دكھائیں گي؟ تاہم بعد میں انہوں نے کہا کہ میں ابھی پوری وجہ نہیں جان پایا ہوں ، لیکن جس بہن نے یہاں ہنگامہ کیا ہے اس نے یہ اندازہ لگا لیا ہے کہ بات ضرور سنگین ہو جائے گی ۔


اعظم خاں کے اس تبصرہ کے بعد متاثرہ خاتون کی ناراضگی مزید بڑھ گئی۔ متاثرہ خاتون کا کہنا ہے اعظم خان ان کو برا بھلا کہے ہیں اور اب وہ اعظم خاں سے کبھی نہیں ملیں گی۔ متاثرہ خاتون نے بتایا کہ جب وہ اپنے شوہر کے ساتھ کہیں جا رہی تھی تو بدمعاشوں نے چاقو دکھا کر اس کو اپنی گاڑی میں زبردستی بٹھا لیا اور اس کے ساتھ ریپ کیا اور پھر سبزی منڈی میں چھوڑ کر بھاگ گئے۔ متاثرہ نے بتایا کہ پولیس نے اس معاملے میں صرف چھیڑ چھاڑ کا کیس درج کیا ہے۔


وہیں اعظم خاں کے اس بیان کی کافی مذمت ہو رہی ہے۔ سماجی کارکن شامينا شافك نے کہا کہ اس قسم کے بیان سے لوگوں کے جذبات مجروح ہوتے ہیں۔ اکھلیش یادو کو دیکھنا چاہئے کہ ریاست میں ایسا نہ ہو اور انہیں اپنے رہنماؤں پر لگام لگانا چاہئے۔

First published: Nov 20, 2015 12:57 PM IST