ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

یو پی: مبینہ لوجہاد کے نام پر مسلم نوجوانوں کو نشانے پر لینے کی کوشش

واضح رہے کہ گذشتہ ۳۱؍ اکتوبر کو یو پی کے جونپور میں منعقد ہونے والے ایک جلسہ عام کے دوران سی ایم یوگی آدتیہ ناتھ نے مبینہ لوجہاد کے خلاف سخت اور متنازعہ لب و لہجہ اختیار کیا تھا۔ جلسہ عام میں سی ایم یوگی آدتیہ ناتھ نے نہ صرف لو جہاد کے خلاف قانون بنانے کا اعلان کیا تھا بلکہ لوجہاد میں ملوث نوجوانوں کا ’’ رام نام ستیہ ‘‘ کرنے کی بھی بات کہی تھی۔

  • Share this:
یو پی: مبینہ لوجہاد کے نام پر مسلم نوجوانوں کو نشانے پر لینے کی کوشش
علامتی تصویر

الہ آباد۔ ایک بار پھر مبینہ لو جہاد کے نام پر ملک کی سیاسی فضا گرمانے کی کوشش کی جا رہی ہے ۔ یو پی کے سی ایم یوگی آدتیہ ناتھ کی طرف سے لو جہاد کے خلاف قانون بنانے اور اس میں ملوث پائے جانے والے نوجوانوں کا ’’ رام نام ستیہ ‘‘ کئے جانے کے بیان پر اکھل بھارتیہ اکھاڑا پریشد نے بھی اپنی پوری حمایت کا اعلان کر دیا ہے۔ وہیں دوسری جانب لو جہاد کے خلاف قانون بنانے کے سوال پر قانون دانوں نے اپنی سخت تشویش کا اظہار کیا ہے۔ قانون دانوں کا کہنا ہے کہ لو جہاد ایک فرضی اصطلاح  ہے ، ایسے میں اس  کے خلاف قانون بنانے کی بات کرنا  خود  آئینی اصولوں کی خلاف ورزی ہے۔


واضح رہے کہ گذشتہ ۳۱؍ اکتوبر کو یو پی کے جونپور میں منعقد ہونے والے ایک جلسہ عام کے دوران سی ایم یوگی آدتیہ ناتھ نے مبینہ  لوجہاد کے خلاف سخت اور متنازعہ لب و لہجہ اختیار کیا تھا۔ جلسہ عام میں سی ایم یوگی آدتیہ ناتھ نے  نہ صرف لو جہاد کے خلاف قانون  بنانے کا اعلان کیا تھا بلکہ  لوجہاد میں ملوث نوجوانوں  کا ’’ رام نام ستیہ ‘‘ کرنے کی بھی بات کہی تھی۔ سی ایم یوگی کے اس متنازعہ بیان پر قانون دانوں نے اپنی سخت تشویش کا اظہار کیا ہے۔


آئینی امور کے ممتاز قانون داں سید فرمان احمد نقوی نے  سی ایم یوگی کے اس بیان کو خود قانون کی خلاف ورزی سے تعبیر کیا ہے۔ سید فرمان احمد  نقوی کا کہنا ہے کہ لو جہاد ایک فرضی  اصطلاح ہے جس کو ایک مخصوص فرقے کے خلاف سیاسی مقاصد حاصل کرنے کے لئے استعمال کیا جا رہا ہے۔ دوسری جانب یوگی آدتیہ ناتھ کے اس متنازعہ بیان پر فرقہ وارنہ سیاست بھی شروع ہو گئی ہے۔ لو جہاد کے خلاف یوگی آدتیہ ناتھ کے بیان کی اکھل بھارتیہ اکھاڑا پریشد نے کھل کر حمایت کی ہے ۔ اکھاڑا پریشد ملک کے سادھو سنتوں کی نمائندہ تنظیم تصور کی جاتی ہے۔ اس وقت اکھاڑا پریشد پر یوگی آدتیہ ناتھ کا کافی اثر سمجھا جاتا ہے۔


اکھاڑا پریشد کے  صدر مہنت نرندر گری کا کہنا ہے کہ  یوگی آدتیہ ناتھ کا بیان  قابل ستائش ہے ۔ ان کا کہنا ہے کہ لوجہاد کے خلاف سخت قانون بنانا بہت ضروری ہو گیا ہے۔ لیکن  قانون دانوں  میں اس بات کو لیکر کافی تشویش پائی جا رہی ہے ۔ ان کا کہنا ہے  کہ لو جہاد ایک ایسی سیاسی  اصطلاح ہے جوایک مخصوص فرقے کو نشانہ بنانے کے لئے وضع کی گئی ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ لو جہاد جیسی اصطلاح کو ہوا دے کر پورے ملک میں ایک بے چینی کا ماحول پیدا کرنے کی کوشش کی جا رہی ہے تاکہ اس سے سیاسی فائدہ حاصل کیا جا سکے۔
Published by: Nadeem Ahmad
First published: Nov 02, 2020 07:53 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading