ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

بی ایچ یو طالب علم شیو کمار ترویدی کے پولیس حراست سے لاپتہ ہونے کا معاملہ

واضح رہے کہ آٹھ مہینے پہلے پولیس حراست سے پر اسرار طریقے سے غائب ہونے والے بنارس ہندو یونیورسٹی کے طالب علم شیو کمارترویدی کے معاملے میں الہ آباد ہائی کورٹ نے بنارس پولیس انتظامیہ پر اپنی سخت ناراضگی کا اظہار کیا تھا۔ عدالت نے بنارس پولیس کو حکم دیا تھا کہ شیو کمار ترویدی کو ۲۲؍ ستمبر سے پہلے تلاش کرکے ان کے گھر والوں کے سامنے پیش کیا جائے۔ لیکن پولیس انتظامیہ مختلف تاریخوں پر عدالت سے مذید مہلت طلب کرتی رہی۔

  • Share this:
بی ایچ یو طالب علم شیو کمار ترویدی کے پولیس حراست سے لاپتہ ہونے کا معاملہ
بی ایچ یو طالب علم شیو کمار ترویدی کی پولیس حراست سے لاپتہ ہونے کا معاملہ

الہ آباد۔ بنارس ہندو یونیورسٹی کے طالب علم شیو کمار ترویدی کے پولیس حراست سے پر اسرار طریقے سے لا پتہ ہونے کی جانچ یوگی حکومت نے سی بی آئی سے کرانے سے انکار کر دیا ہے۔ اس معاملے میں یوگی حکومت نے ہائی کورٹ میں حلف نامہ داخل کرکے  معاملے کی جانچ سی بی سی آئی ڈی کے ذریعے کرانے کی اطلاع دی ہے ۔ جبکہ شیو کمار ترویدی کے اہل خانہ نے اس معاملے کی جانچ سی بی آئی سے کرانے کی عدالت سے درخواست  کی ہے۔ یوگی حکومت نے ہائی کورٹ میں جسٹس پریتیکر دواکر کی بنچ  کو مطلع کیا ہے کہ شیو کمار گمشدگی معاملے کی جانچ ۲۹؍ اکتوبر سے سی بی سی آئی ڈی نے شروع کر دی ہے ۔


واضح رہے کہ  آٹھ مہینے  پہلے  پولیس حراست سے پر اسرار طریقے سے غائب ہونے والے بنارس ہندو یونیورسٹی ( بی ایچ یو ) کے طالب علم شیو کمارترویدی کے معاملے میں الہ آباد ہائی کورٹ نے بنارس پولیس انتظامیہ پر اپنی سخت ناراضگی کا اظہار کیا تھا۔ عدالت نے بنارس پولیس کو حکم دیا  تھا کہ شیو کمار ترویدی کو ۲۲؍ ستمبر سے پہلے تلاش کرکے  ان کے گھر والوں کے سامنے پیش کیا جائے۔ لیکن  پولیس انتظامیہ مختلف تاریخوں پر عدالت سے مذید مہلت طلب کرتی رہی۔ شیو کمار کے والد پردیپ کمار ترویدی کی طرف سے داخل عرضی پرسماعت کرتے ہوئے الہ آباد ہائی کورٹ نے بنارس پولیس کو شیو کمار کو تلاش کرنے  کے لئے ۲۲؍ ستمبر تک کا وقت دیا  تھا۔عدالت نے حکومت کو یہ بھی حکم دیا تھا کہ اگر ۲۲؍ ستمبر تک پولیس شیو کمار کا پتہ نہیں لگا پاتی تو اس کیس کو سی بی آئی  کے حوالے کر دیا جائے۔


الہ آباد ہائی کورٹ کے جسٹس ششی کانت  گپتا اور جسٹس شمیم احمد کی بنچ نے پولیس کی کار کردگی پر بھی کئی سنگین سوال اٹھائے تھے ۔ عدالت کا کہنا تھا کہ پولیس ابھی تک یہ نہیں بتا پائی ہے کہ اس کی حراست میں ہونے کے با وجود شیو کمار کہاں لا پتہ ہو گیا۔ واضح رہے کہ گذشتہ ۱۳؍ فروری کو بنارس ہندو یونیورسٹی میں بی ایس سی سیکنڈ ائیر کے طالب علم  شیور کمار کومقامی پولیس نے صبح ساڑھے آٹھ  ایمفی تھیٹر گراؤنڈ سے گرفتار کیا تھا۔ پولیس شیو کمار کو گرفتار کرکے مقامی لنکا تھانے لے آئی تھی اور اس کو حوالات میں بند کر دیا تھا۔


پولیس کا کہنا  ہے کہ شیو کمار حوالات سے غائب ہو گیا ۔ لیکن شیو کمار پولیس حراست سے کیسے غائب ہوا ؟ اس کا جواب پولیس عدالت کے سامنے ابھی تک نہیں دے پائی ہے ۔ بی ایچ یو کے طلبہ اور کئی سماجی تنظیموں نے شیو کمار کی برآمدگی کے لئے مہم چلائی ہوئی ہے۔ ریاست کے وزیراعلیٰ یوگی آدتیہ ناتھ کے حالیہ بنارس دورے کے موقع پر بھی بی ایچ یو طلبہ نے سی ایم یوگی کو میمورنڈم پیش کیا تھا۔ سی ایم یوگی آدتیہ ناتھ نے اس معاملے میں مؤثر کار روائی کرنے کی یقین دہانی بھی کرائی تھی۔ لیکن اس معاملے میں ابھی تک کوئی ٹھوس نتیجہ بر آمد نہیں ہوا ہے۔ الہ آباد ہائی کورٹ میں اب اس معاملے کی سماعت ۴؍ جنوری کو ہوگی۔
Published by: Nadeem Ahmad
First published: Nov 04, 2020 09:33 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading