உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    راجیہ سبھا الیکشن: کراس ووٹنگ کے خدشہ سے بڑھی اترپردیش میں سیاسی جماعتوں میں ہلچل

    لکھنؤ۔ راجیہ سبھا کے دو سالہ انتخابات میں 'کراس ووٹنگ' کے خدشہ کی خبروں سے حرکت میں آئیں اتر پردیش کی اہم سیاسی پارٹیاں اب اپنے ممبران اسمبلی کو متحد رکھنے کے لئے کوئی کسر باقی نہیں رکھ رہی ہیں۔

    لکھنؤ۔ راجیہ سبھا کے دو سالہ انتخابات میں 'کراس ووٹنگ' کے خدشہ کی خبروں سے حرکت میں آئیں اتر پردیش کی اہم سیاسی پارٹیاں اب اپنے ممبران اسمبلی کو متحد رکھنے کے لئے کوئی کسر باقی نہیں رکھ رہی ہیں۔

    • Share this:
      لکھنؤ۔ راجیہ سبھا کے دو سالہ انتخابات میں 'کراس ووٹنگ' کے خدشہ کی خبروں سے حرکت میں آئیں اتر پردیش کی اہم سیاسی پارٹیاں اب اپنے ممبران اسمبلی کو متحد رکھنے کے لئے کوئی کسر باقی نہیں رکھ رہی ہیں۔ ووٹنگ میں اب تین دن باقی ہیں۔ راجیہ سبھا میں 11 سیٹوں کے لئے الیکشن ہونا ہے اور 12 امیدوار مقابلے میں ہیں۔ یہی حال قانون ساز کونسل کا ہے۔ کل 13 سیٹوں کے لئے الیکشن ہونا ہے لیکن مقابلے میں 14 امیدوار ہیں۔ حکمراں سماج وادی پارٹی کے خیمے میں سرگرمیاں دیکھنے کو ملیں۔ ایس پی سربراہ ملائم سنگھ یادو دن بھر اپنی پارٹی کے ممبران اسمبلی سے غیر رسمی طور پر ملے اور متحد رہنے کا پیغام دیا۔

      ملائم سے ملاقات کرنے والے ایک رکن اسمبلی نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بتایا کہ ایس پی سربراہ نے کہا ہے کہ کراس ووٹنگ سے آئندہ اسمبلی انتخابات سے پہلے ووٹروں میں غلط پیغام جائے گا۔ راجیہ سبھا کے لئے ایس پی نے سات امیدوار کھڑے کئے ہیں لیکن ساتویں امیدوار کے پاس جیت کے لئے پہلی ترجیح والے نو ووٹ کم ہیں۔ اسمبلی میں 403 نشستیں ہیں۔ حکمراں سماج وادی پارٹی کے 229 رکن اسمبلی ہیں۔ بی ایس پی کے 80، بی جے پی کے 41، کانگریس کے 29 ممبران اسمبلی ہیں۔ باقی چھوٹی پارٹیوں کے یا پھر آزاد امیدوار رکن اسمبلی ہیں۔ راجیہ سبھا میں جیت کے لئے ایک امیدوار کو 34 ووٹوں کی ضرورت ہو گی۔

      آزاد امیدوار پریتی مہاپاتر کے حق میں کراس ووٹنگ کے خدشہ کو دیکھتے ہوئے بی ایس پی سپریمو مایاوتی نے نو جون کو پارٹی ممبران اسمبلی کی میٹنگ بلائی ہے۔ پریتی نے 12 ویں امیدوار کے طور پر کاغذات نامزدگی داخل کی ہیں۔ بی جے پی نے اترپردیش یونٹ کے نائب صدر اور سابق وزیر شیو پرتاپ شکلا کو امیدوار بنایا ہے۔ شکلا کی جیت یقینی ہونے کے بعد بھی بی جے پی کے پاس سات اضافی ووٹ رہیں گے۔ دلت ووٹ بینک میں نقب لگانے کی بی جے پی کی کوششوں سے چوکنا بی ایس پی کا ساتھ کانگریس امیدوار کپل سبل کو مل سکتا ہے۔ پریتی کے انتخابی میدان میں اترنے سے سب سے زیادہ دباؤ سبل پر ہی ہے۔

      آٹھ ممبران اسمبلی والی آر ایل ڈی کی اہمیت بڑھ گئی ہے۔ کئی پارٹیاں آر ایل ڈی سربراہ اجیت سنگھ کے رابطے میں ہیں۔ راجیہ سبھا انتخابات میں سماج وادی پارٹی سے امر سنگھ، بینی پرساد ورما، کنور ریوتی رمن سنگھ، وشوبھر پرساد نشاد، سکھرام سنگھ یادو، سنجے سیٹھ اور سریندر ناگر امیدوار ہیں۔ بی ایس پی نے ستیش چندر مشرا اور اشوک سدھارتھ کو امیدوار بنایا ہے۔ کانگریس کی جانب سے سبل، بی جے پی کی جانب سے شکلا اور آزاد امیدوار پریتی بھی میدان میں ہیں۔

      کم و بیش یہی حال قانون ساز کونسل کا بھی ہے۔ یہاں 13 سیٹوں کے لئے ہونے والے انتخابات میں 14 امیدوار میدان میں ہیں۔ کراس ووٹنگ کا خدشہ زیادہ ہے۔ ایک آزاد ممبر اسمبلی کی حمایت سے بی جے پی نے دو امیدوار اتارے ہیں لیکن دوسرے امیدوار کے لئے اسے 16 اضافی ووٹوں کی ضرورت ہو گی۔ قانون ساز کونسل کے لئے ووٹ دس جون کو اور راجیہ سبھا کے لئے 11 جون کو ہونا ہے۔
      First published: