ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

یو پی: عتیق احمد کے قریبی آصف درانی کے عالی شان مکان کو کیا گیا مندہم

کئی دنوں کی خاموشی کے بعد یوگی حکومت کی انہدامی کارروائی ایک بار پھر سے شروع ہو گئی ہے ۔ اس بار سماج وادی پارٹی کے سابق ممبر پارلیمنٹ عتیق احمد کے قریبی تصور کئے جانے والے آصف درانی کے مکان کو مہندم کر دیا گیا ہے۔

  • Share this:
یو پی: عتیق احمد کے قریبی آصف درانی کے عالی شان مکان کو کیا گیا مندہم
کئی دنوں کی خاموشی کے بعد یوگی حکومت کی انہدامی کارروائی ایک بار پھر سے شروع ہو گئی ہے ۔ اس بار سماج وادی پارٹی کے سابق ممبر پارلیمنٹ عتیق احمد کے قریبی تصور کئے جانے والے آصف درانی کے مکان کو مہندم کر دیا گیا ہے۔

الہ آباد ۔ کئی دنوں کی خاموشی کے بعد یوگی حکومت کی انہدامی کارروائی ایک بار پھر سے شروع ہو گئی ہے ۔ اس بار سماج وادی پارٹی کے سابق ممبر پارلیمنٹ عتیق احمد کے قریبی تصورکئے جانے والے آصف درانی کے مکان کو مہندم کر دیا گیا ہے۔ الہ آباد میں عتیق احمد ، ان کے رشتے داروں اور قریبی افراد کے مکانوں کو زمین دوز کرنے کی کارروائی گذشتہ چھ ماہ سے جاری ہے۔ الہ آباد میں یوگی حکومت اب تک ۴۸ ؍ مکانوں کو منہدم کرا چکی ہے ۔ آصف درانی کے کریلی کالونی میں واقع رہائش گاہ کو جے سی بی مشینوں کے ذریعے منہدم کر دیا گیا ہے ۔


’’ الہ آباد ڈیو لپمنٹ اتھارٹی ‘‘ کے اعلیٰ افسران کی نگرانی میں آصف درانی کےعالی شان مکان کو منہدم کیا گیا ۔ اعلیٰ افسران کے مطابق چارسو مربع گزمیں تعمیر اس مکان کی مالیت چار کروڑ سے زیادہ کی بتائی جاتی ہے۔ واضح رہے کہ الہ آباد ہائی کورٹ نے گذشتہ ستمبر ماہ میں عتیق احمد کے قریبی آصف درانی کی گرفتاری پر روک لگا دی تھی۔ آصف درانی پر شہر کے کریلی اور دھومن گنج پولیس تھانے میں کئی مقدمات درج ہیں۔




گذشتہ سال مقامی پولیس نے آصف درانی کے خلاف گؤ کشی اورگائے کی اسمگلنگ سمیت کئی سنگین دفعات کے تحت مقدمات درج کئے تھے ۔ اپنی گرفتاری سے بچنے کے لئے آصف درانی نے الہ آباد ہائی کورٹ کا دروازہ کھٹکھٹایا تھا ۔ آصف درانی کی عرضی پر سماعت کرتے ہوئے الہ آباد ہائی کورٹ کے جسٹس انل کمار کی بنچ نے آصف درانی کی گرفتاری پر روک لگا دی تھی ۔ ساتھ ہی ہائی کورٹ نے پولیس کو یہ بھی حکم دیا تھا کہ معاملے کی جانچ مکمل ہونے تک آصف درانی کو گرفتار نہ کیا جائے ۔ یوگی حکومت کی تازہ کار روائی سے شہر کے مسلم اکثریتی علاقوں میں ایک بار پھرانہدامی کار روائی کا خوف پیدا ہو گیا ہے ۔
Published by: Sana Naeem
First published: Jan 23, 2021 10:48 PM IST