ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

معاشقہ میں رکاوٹ بن رہا تھا باپ ، بیٹی نے عاشق کے ساتھ مل کر اٹھایا ایسا قدم ، سبھی رہ گئے دنگ

Ayodhya News : جائے واقعہ پر پہنچی پولیس نے جانچ کرتے ہوئے بیٹی سے پوچھ گچھ کی تو وہ ٹوٹ گئی اور قتل کی بات کا اعتراف کرلیا ۔ پولیس نے لڑکی اور اس کے عاشق کو گرفتار کرلیا ہے ۔

  • Share this:
معاشقہ میں رکاوٹ بن رہا تھا باپ ، بیٹی نے عاشق کے ساتھ مل کر اٹھایا ایسا قدم ، سبھی رہ گئے دنگ
معاشقہ میں رکاوٹ بن رہا تھا باپ ، بیٹی نے عاشق کے ساتھ مل کر اٹھایا ایسا قدم ، سبھی رہ گئے دنگ

ایودھیا میں گلا دبا کر ایک شخص کا قتل کردیا گیا ۔ پولیس نے معاملہ کی جانچ کرتے ہوئے اس قتل کیس میں بیٹی کو شریک پایا ۔ پولیس نے دعوی کیا ہے کہ ناجائز تعلقات میں روکاوٹ بن رہے باپ کا قتل بیٹی نے اپنے عاشق کے ساتھ مل کر کیا ہے ۔


یہ واقعہ پٹرنگ تھانہ کے چک سریٹھا گاوں میں پیش آیا ۔ یہاں صبح جب باپ چارپائی سے نہیں اٹھے تو گھر والے پریشان ہوگئے ۔ انہیں جب بیدار کرنے کی کوشش کی گئی تو معلوم ہوا کہ ان کی موت ہوچکی ہے ۔ گھر والوں نے دیکھا کہ ان کے گلے پر رگڑ کے نشان ہیں ۔ فوری طور پر گاوں والوں نے پولیس کو اس کی اطلاع دی ۔ جائے واقعہ پر پہنچی پولیس نے جانچ کرتے ہوئے بیٹی سے پوچھ گچھ کی تو وہ ٹوٹ گئی اور قتل کی بات کا اعتراف کرلیا ۔ پولیس نے لڑکی اور اس کے عاشق کو گرفتار کرلیا ہے ۔


رودولی کے سی او ڈاکٹر دھرمیندر یادو کے مطابق درباری لال راوت کی چار بیٹیاں ہیں ۔ ان میں سے تین کی شادی ہوچکی ہے ۔ چوتھی بیٹی رنجو دیوی کی شادی ابھی نہیں ہوئی ہے ۔ گاوں کے ہی روی نام کے لڑکے سے اس کے تعلقات ہیں ۔ اس تعلقات میں روکاوٹ بن رہے باپ کو راستے سے ہٹانے کیلئے بیٹی نے اپنے عاشق روی کو ساتھ لیا اور جب باپ رات میں سوگیا تو بکری باندھنے والی پلاسٹک کی رسی سے دونوں نے گلا گھونٹ کر اس کا قتل کردیا ۔ پولیس نے قتل کے الزام میں بیٹی اور اس کے عاشق کو گرفتار کرلیا ہے ۔


سی او ڈاکٹر دھرمیندر یادو نے بتایا کہ بیٹی نے اپنا گناہ قبول کرلیا ہے ۔ اس نے اعتراف کیا ہے کہ وہ گاوں کے ہی روی نام کے لڑکے سے پیار کرتی ہے اور جب وہ کہیں آتی جاتی تھی تو اس کا باپ اس میں روکاوٹ بنتا تھا ۔ ایک دن اس کے عاشق روی نے ہی مشورہ دیا کہ کیوں نہ باپ کو راستے سے ہٹا دیا جائے ۔ عاشق کے بہکاوے میں آنے کے بعد بیٹی نے اپنے باپ کو راستہ سے ہٹا دیا اور اب سلاخوں کے پیچھے ہے ۔
Published by: Imtiyaz Saqibe
First published: Mar 21, 2021 11:53 PM IST