ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

میرٹھ : کورونا مریض کی موت کے بعد بھی 15 دِنوں تک اہل خانہ کو کرتے رہے گمراہ ، میڈیکل اسٹاف کا کارنامہ

Meerut News : بریلی کے رہنے والے کورونا متاثر مریض سنتوش کمار کو ان کے اہل خانہ نے 21 اپریل کو میڈیکل میں داخل کرایا تھا ، جن کی دو دن بعد ہی موت ہو گئی تھی ، لیکن میڈیکل کنٹرول روم سے سنتوش کے اہل خانہ کو ان کے زندہ ہونے کی اطلاع ملتی رہی ۔

  • Share this:
میرٹھ : کورونا مریض کی موت کے بعد بھی 15 دِنوں تک اہل خانہ کو کرتے رہے گمراہ ، میڈیکل اسٹاف کا کارنامہ
میرٹھ : کورونا مریض کی موت کے بعد بھی 15 دِنوں تک اہل خانہ کو کرتے رہے گمراہ ، میڈیکل اسٹاف کا کارنامہ

میرٹھ : میرٹھ کے لالا لاجپت رائے میڈیکل کالج میں کورونا مریضوں کے علاج اور دیکھ ریکھ میں لاپروائی کے کئی معاملات اُجاگر ہونے سے میڈیکل کالج انتظامیہ اور اسٹاف کی کارکردگی پہلے ہی سوالوں کے گھیرے میں ہے ، ایسے میں کورونا وارڈ  اسٹاف کی ایک بڑی چوک نے میڈیکل میں بدنظمی کی پول کھول دی ہے ۔ معاملہ یہ ہے کہ بریلی کے رہنے والے کورونا متاثر مریض سنتوش کمار کو ان کے اہل خانہ نے 21 اپریل کو میڈیکل میں داخل کرایا تھا ، جن کی دو دن بعد ہی موت ہو گئی تھی ، لیکن میڈیکل کنٹرول روم سے سنتوش کے اہل خانہ کو ان کے زندہ ہونے کی اطلاع ملتی رہی ۔


میڈیکل کالج کا کو وڈ کنٹرول روم 3 مئی تک سنتوش کے ٹھیک ہونے کی جانکاری اہل خانہ کو دیتا رہا ۔ اس کے بعد جانکاری حاصل کرنے پر مریض کے وارڈ میں نہ ہونے کی بات کہی گئی ۔ اہل خانہ نے جب میڈیکل پہنچ کر اپنے مریض کی تلاش کی تو میڈیکل اسٹاف نے مریض سے متعلق کسی طرح کی جانکاری نہ ہونے کی بات کہی ۔ اہل خانہ نے جب اپنے مریض تلاش شروع کی تو میڈیکل تھانہ سے یہ جانکاری حاصل ہوئی کہ سنتوش کمار کا لاوارث حالت میں انتم سنسکار کیا جا چکا ہے ۔


دو روز قبل اس سے متعلق ایک ویڈیو جاری کرکے سنتوش کمار کی بیٹی نے ضلع انتظامیہ اور وزیر اعلیٰ سے مدد کی فریاد بھی کی تھی ۔ میڈیکل اسٹاف کی لاپروائی اور چوک کا معاملہ اُجاگر ہونے کے بعد اب میڈیکل انتظامیہ نے معاملہ کی جانچ کے لیے کمیٹی تشکیل دی ہے ۔

Published by: Imtiyaz Saqibe
First published: May 09, 2021 11:59 PM IST