உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    گیانواپی معاملے پر بڑا فیصلہ: ہندو فریق کی عرضی منظور، مسلم فریق کی درخواست خارج

    Youtube Video

    GyanVapi : گیانواپی معاملے میں ہندو فریق کی عرضی کو قبول کر لیا گیا ہے۔ اس معاملے میں جہاں مسلم فریق 1991 کے پوجا ایکٹ کے تحت اپنی دلیل پیش کر رہا ہے، وہیں ہندو فریق شرینگر گوری میں پوجا کرنے کی اجازت چاہتا ہے۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Varanasi, India
    • Share this:
      Gyanvapi-Shringar Gauri Case Verdict وارانسی کے گیانواپی-شرینگر گوری کیس کا فیصلہ آ گیا ہے۔ گیانواپی معاملے میں ہندو فریق کی عرضی کو قبول کر لیا گیا ہے۔ اس معاملے میں جہاں مسلم فریق 1991 کے پوجا ایکٹ کے تحت اپنی دلیل پیش کر رہا ہے، وہیں ہندو فریق شرینگر گوری میں پوجا کرنے کی اجازت چاہتا ہے۔ سپریم کورٹ کی ہدایت پر وارانسی کی ضلعی عدالت میں معاملہ چل رہا ہے۔

      گیانواپی کیمپس میں واقع شرنگر گوری کی باقاعدہ درشن پوجا کے معاملے پر ضلع جج کی عدالت نے بڑا فیصلہ سنایا ہے۔ عدالت نے مسلم فریق کی اپیل خارج کر دی۔ عدالت نے کہا کہ یہ معاملہ قابل سماعت ہے۔ کاشی وشوناتھ دھام کھیترا-گیانواپی کمپلیکس ایک چھاؤنی میں تبدیل ہو گیا ہے۔ عدالت نے ہندو فریق کی اپیل منظور کر لی ہے۔ اس معاملے کی اگلی سماعت اب 23 ستمبر کو ہوگی۔ فیصلے کے دوران مسلم فریق عدالت میں موجود نہیں تھا۔

      گیانواپی مسجد انجمن انتظامیہ کمیٹی کی پٹیشن 7 رول 11 کو خارج کرتے ہوئے، ڈسٹرکٹ جج نے ہندو فریق کے دعوے کو صحیح ٹھہرایا اور کہا کہ مقدمہ قابل سماعت ہے۔ اب اس معاملے کی اگلی سماعت 22 ستمبر کو ہوگی۔ ڈسٹرکٹ جج کے فیصلے کے بعد اب اس معاملے کی سپریم کورٹ میں سماعت ہوگی۔

       

      دوسری جانب اس فیصلے کے بعد بی جے پی کی جانب سے بھی ردعمل سامنے آیا ہے۔ ریاستی بی جے پی کے ترجمان راکیش ترپاٹھی نے کہا کہ عدالت کا فیصلہ خوش آئند ہے۔ ابھی تو پوجا کے حق کو لیکر یہ لڑائی تھی۔ اب یہ لڑائی لمبے عرصے تک چلے گی۔ انہوں نے عوام سے امن برقرار رکھنے کی اپیل بھی کی ہے۔ راکیش ترپاٹھی نے کہا کہ بی جے پی ہمیشہ 1991 کے پوجا ایکٹ کی مخالفت کرتی رہی ہے۔ اب عدالت کا فیصلہ آ گیا ہے۔ سب کو امن اور ہم آہنگی برقرار رکھنے کی ضرورت ہے۔
      Published by:Sana Naeem
      First published: