உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    وی ایچ پی کا الزام: رام مندر کی تعمیر کے لیے راجستھان سے پتھرلانے میں اکھلیش حکومت رخنہ ڈال رہی ہے

    اکھلیش یادو: فائل فوٹو

    اجودھیا۔ وشو ہندو پریشد (وی ایچ پی) نے اترپردیش کی اکھلیش یادو حکومت پر الزام لگایا ہے کہ وہ اجودھیا میں رام مندر کی تعمیر کے لیے تراشے جانے والے پتھروں کو راجستھان سے لانے میں رخنہ ڈال رہی ہے۔

    • UNI
    • Last Updated :
    • Share this:

      اجودھیا۔  وشو ہندو پریشد (وی ایچ پی) نے اترپردیش کی اکھلیش یادو حکومت پر الزام لگایا ہے کہ وہ اجودھیا میں رام مندر کی تعمیر کے لیے تراشے جانے والے پتھروں کو راجستھان سے لانے میں رخنہ ڈال رہی ہے۔ وی ایچ پی کے صوبائی میڈیا انچارج شرد شرما نے آج یہاں یو این آئی کو بتایا کہ اجودھیا میں رام مندر کی تعمیر کے لیے شری رام جنم بھومی نیاس کے ورکشاپ میں تراشے جانے والے پتھروں کو راجستھان سے لانے پر اتر پردیش کی حکومت نے روک لگا دی ہے۔ انہوں نے بتایا کہ راجستھان میں مندر کے لیے پتھر کاٹ کر رکھے گئے ہیں جس کو لانے میں کمرشیل ٹیکس ڈپارٹمنٹ نے فارم ۔39 دینے سے انکار کر دیا ہے۔


      مسٹر شرما نے بتایا کہ جب محکمہ سے یہ پوچھا گیا کہ پتھر لانے کیلئے فارم کیوں نہیں دیا جا رہا ہے تو انہوں نے زبانی روک لگانے کی بات کہی ہے۔ اس سے لگتا ہے کہ اتر پردیش کی سماج وادی پارٹی حکومت ایک طبقہ کو خوش رکھنے کے لیے راجستھان سے اجودھیا پتھر لانے میں رخنہ ڈال رہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ رام مندر کی تعمیر کے لیے اجودھیا میں واقع شری رام جنم بھومی نیاس ورکشاپ میں 1990 سے راجستھان کی کانوں سے مندر کے لئے تراشے جا رہے پتھروں کو منگایا جا رہا تھا۔


      مارچ میں پتھر منگانے کے لئے ایک بار پھر سے رام جنم بھومی نیاس کی جانب سے کامرس ٹیکس ڈیپارٹمنٹ فیض آباد میں درخواست دی گئی تھی جسے قبول کرتے ہوئے فارم 39 فراہم کر ادیا گیا لیکن ٹرسٹ کی جانب سے جب دوبارہ فارم 39 کی مانگ کی گئی تو محکمہ نے یہ کہہ کر فارم فراہم کرنے سے انکار کر دیا کہ اعلی حکام کی جانب سے روک ہے اس لئے ہم فارم نہیں دے سکتے۔

      First published: