உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    نائب صدارتی انتخابات، پہلے دن Ramayani Chaiwala سمیت 5 امیدواروں کے کاغذات داخل

    اس لیے ہر رکن پارلیمان کے ووٹ کی قدر ایک جیسی ہوگی۔ انتخابات متناسب نظام کے مطابق ہوتے ہیں۔

    اس لیے ہر رکن پارلیمان کے ووٹ کی قدر ایک جیسی ہوگی۔ انتخابات متناسب نظام کے مطابق ہوتے ہیں۔

    موجودہ ایم وینکیا نائیڈو کی میعاد 10 اگست کو ختم ہو رہی ہے اور اگلے نائب صدر 11 اگست کو حلف لیں گے۔بی جے پی کی قیادت والے قومی جمہوری اتحاد (این ڈی اے) کو انتخابات میں واضح برتری حاصل ہے، جس میں لوک سبھا کے ممبران اور راجیہ سبھا ووٹ دینے کے اہل ہیں۔

    • Share this:
      چھ اگست 2022 کو ہونے والے نائب صدر کے انتخاب کے لیے نامزدگی کے عمل کے پہلے دن منگل کے روز پانچ لوگوں نے کاغذات داخل کیے، جن میں ایک عرف رامائنی چائے والا (Ramayani Chaiwala) کے نام سے جانے جاتے ہیں۔ وہیں ایک دوسرے امیدوار کے کاغذات نامزدگی کو لازمی طور پر پیش کرنے میں ناکامی پر مسترد کر دیا گیا۔

      19 جولائی کاغذات نامزدگی داخل کرنے کی آخری تاریخ ہے۔ ریٹرننگ افسر کے دفتر کے پاس دستیاب تفصیلات کے مطابق تمل ناڈو کے سیلم ضلع کے کے پدمراجن، احمد آباد سے پریش کمار نانو بھائی ملانی، بنگلورو سے ہوسمتھ وجیانند اور آندھرا پردیش سے نائیڈوگاری راج شیکھر سریموکھلنگم نے نائب صدر کے انتخابات کے لیے اپنے کاغذات نامزدگی داخل کیے ہیں۔

      مدھیہ پردیش کے گوالیار سے تعلق رکھنے والے آنند سنگھ خوشواہا پارلیمنٹ میں ریٹرننگ افسر کے دفتر میں کاغذات نامزدگی داخل کرنے والوں میں شامل تھے۔ جنہیں رامائنی چائی والا کے نام سے جانا جاتا ہے۔ سریموکھلنگم کے کاغذات مسترد کر دیے گئے کیونکہ وہ لوک سبھا حلقے کی ووٹر لسٹ میں امیدوار سے متعلق اندراج کی تصدیق شدہ کاپی جمع کرانے میں ناکام رہے جس میں وہ مقیم ہیں۔

      دیگر چار نامزدگیاں 20 جولائی کو جانچ پڑتال کے لیے آئیں گی۔ ان نامزدگیوں کو مسترد کر دیا جائے گا کیونکہ ان کی حمایت 20 پارلیمنٹیرین نے بطور تجویز کنندہ اور 20 دیگر نے حمایتی کے طور پر نہیں کی۔ نائب صدر کے انتخاب میں امیدوار کے طور پر کامیاب نامزدگی کے لیے ایک نامزد کو 20 ایم پیز بطور تجویز کنندہ اور 20 دیگر حمایتی کے طور پر درکار ہوتے ہیں۔

      موجودہ ایم وینکیا نائیڈو کی میعاد 10 اگست کو ختم ہو رہی ہے اور اگلے نائب صدر 11 اگست کو حلف لیں گے۔بی جے پی کی قیادت والے قومی جمہوری اتحاد (این ڈی اے) کو انتخابات میں واضح برتری حاصل ہے، جس میں لوک سبھا کے ممبران اور راجیہ سبھا ووٹ دینے کے اہل ہیں۔

      سیاسی جماعتوں نے ابھی تک الیکشن کے لیے اپنے امیدواروں کے نام نہیں بتائے۔ نائب صدر راجیہ سبھا کے چیئرپرسن بھی ہیں۔

      الیکشن کمیشن (ای سی) نے 29 جون کو جاری کردہ ایک بیان میں کہا کہ نائب صدر کے انتخابات میں الیکٹورل کالج پارلیمنٹ کے دونوں ایوانوں کے کل 788 ارکان پر مشتمل ہے۔ چونکہ تمام رائے دہندگان پارلیمنٹ کے رکن ہیں، اس لیے ہر رکن پارلیمان کے ووٹ کی قدر ایک جیسی ہوگی۔ انتخابات متناسب نظام کے مطابق ہوتے ہیں۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: