உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    خاتون وکیل نے بی جے پی لیڈرپر جنسی استحصال کا الزام، میڈیا کے سامنے کاٹے بال

    الہ آباد ہائی کورٹ کی لکھنو بنچ کی خاتون وکیل نے اپنے سینئر وکیل اور بی جے پی لیڈر پر جنسی استحصال اور مارپیٹ کا الزام لگایا ہے۔ خاتون کا الزام ہے کہ سینئر وکیل اور بی جے پی لیڈر نے اسے جان سے مروانے کے لئے کئی حملے بھی کروائے۔

    الہ آباد ہائی کورٹ کی لکھنو بنچ کی خاتون وکیل نے اپنے سینئر وکیل اور بی جے پی لیڈر پر جنسی استحصال اور مارپیٹ کا الزام لگایا ہے۔ خاتون کا الزام ہے کہ سینئر وکیل اور بی جے پی لیڈر نے اسے جان سے مروانے کے لئے کئی حملے بھی کروائے۔

    الہ آباد ہائی کورٹ کی لکھنو بنچ کی خاتون وکیل نے اپنے سینئر وکیل اور بی جے پی لیڈر پر جنسی استحصال اور مارپیٹ کا الزام لگایا ہے۔ خاتون کا الزام ہے کہ سینئر وکیل اور بی جے پی لیڈر نے اسے جان سے مروانے کے لئے کئی حملے بھی کروائے۔

    • Share this:
      لکھنو: الہ آباد ہائی کورٹ کی لکھنو بنچ کی خاتون وکیل نے اپنے سینئر وکیل اور بی جے پی لیڈر پر جنسی استحصال اور مارپیٹ کا الزام لگایا ہے۔ خاتون کا الزام ہے کہ سینئر وکیل اور بی جے پی لیڈر نے اسے جان سے مروانے کے لئے کئی حملے بھی کروائے۔

      پریس کانفرنس کے دوران متاثرہ بے حد جذباتی ہوگئیں اور قینچی  سے اپنے بالوں کو کاٹنا تک شروع کردیا۔ بعد میں میڈیا کے نمائندوں کے روکنے پر وہ خاموش ہوگئیں۔

      متاثرہ خاتون کا الزام ہے کہ ملزم وکیل کے خلاف پولیس نے مقدمہ درج کیا ہے، لیکن اس کی گرفتاری نہیں کی گئی ہے۔ متاثرہ کے مطابق سینئر وکیل کے اقتدار اور سرکار میں کافی رسوخ ہے، جس سے اس کے خلاف کوئی جانچ نہیں ہورہی ہے۔ متاثرہ نے اودھ بار ایسوسی ایشن سے بھی گہار لگائی، لیکن کوئی کارروائی نہیں۔

      دراصل متاثرہ کا کہنا ہے کہ ملزم بی جے پی لیڈر گزشتہ تین سالوں سے مسلسل اس کوجسمانی اور ذہنی طور سے پریشان کررہا تھا۔ اتنا ہی نہیں مقدمہ واپس لینے کا دباو بھی بنارہا ہے۔ متاثرہ نے دھمکی دی ہے کہ منگل تک ملزم بی جے پی لیڈر کی گرفتاری نہیں ہوئی تو وہ عدالت احاطے میں خود کشی کرلے گی۔

      دراصل ریاست میں بی جے پی سرکار کی مشکلیں کم ہونے کا نام نہیں لے رہی ہیں۔ گزشتہ ماہ اناو کی ایک لڑکی کے ساتھ بی جے پی کے بانگر مئو اسمبلی حلقہ سے ممبراسمبلی کلدیپ سنگھ سینگر پر ان کے اور ان کے گروہ کے ذریعہ عصمت دری کرائے جانے اور اس کے والد کا قتل کا معاملہ ابھی تھما نہیں تھا کہ اب لکھنو کی ایک لڑکی نے بی جے پی لیڈر پر مسلسل گزشتہ تین سالوں سے جسمانی استحصال کا الزام لگاتے ہوئے لکھنو کے غازی پور تھانے میں تحریر دی ہے۔

      آپ کو بتادیں کہ پورا معاملہ بی جے پی لیڈر اور ہائی کورٹ کے وکیل ستیش شرما سے متعلق بتایا جارہا ہے۔ متاثرہ کی مانیں تو وہ ہائی کورٹ میں ہی ستیش شرما کی جونیئر تھی اور اسی کے ساتھ کام کرتی تھی۔ تقریباً تین سال قبل ستیش شرما نے متاثرہ کی ایک نیم برہنہ ویڈیو بنالی، جس کے بعد وہ مسلسل متاثرہ کو بلیک میل کرتے ہوئے اس کا جسمانی اور ذہنی استحصال کرتا رہا۔ ساتھ ہی متاثرہ کو دھمکی دیتا رہا کہ اگر پولیس میں شکایت کی تو وہ پورے خاندان کے خلاف جھوٹے مقدمے لکھوا کر پھنسا دے گا۔

       

       
      First published: