ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

الوداع 2015 : کبھی پیاز، کبھی ٹماٹر تو کبھی دال نے عام آدمی کورولایا

نئی دہلی: سرکاری اعداد وشمار میں مہنگائی خواہ کم از کم سطح پر رہی ہو پر اس سال عام آدمی کے کھانے کا اہم حصہ آلو، پیاز، ٹماٹر، دال اور تیل کی قیمتیں اسے پورے سال رولاتی رہیں۔ اس سال کے آغاز میں بے موسم بارش اور ژالہ باری کی وجہ سے تلہن اور دلہن کی فصلوں کو نقصان تو پہنچا ہی تھا ساتھ ہی سبزیاں خاص طورپر ٹماٹر کی قیمتوں نے اپنا رنگ دکھانا شروع کر دیا تھا۔

  • UNI
  • Last Updated: Dec 30, 2015 12:28 AM IST
  • Share this:
  • author image
    NEWS18-Urdu
الوداع 2015 : کبھی پیاز، کبھی ٹماٹر تو کبھی دال نے عام آدمی کورولایا
نئی دہلی: سرکاری اعداد وشمار میں مہنگائی خواہ کم از کم سطح پر رہی ہو پر اس سال عام آدمی کے کھانے کا اہم حصہ آلو، پیاز، ٹماٹر، دال اور تیل کی قیمتیں اسے پورے سال رولاتی رہیں۔ اس سال کے آغاز میں بے موسم بارش اور ژالہ باری کی وجہ سے تلہن اور دلہن کی فصلوں کو نقصان تو پہنچا ہی تھا ساتھ ہی سبزیاں خاص طورپر ٹماٹر کی قیمتوں نے اپنا رنگ دکھانا شروع کر دیا تھا۔

نئی دہلی: سرکاری اعداد وشمار میں مہنگائی خواہ کم از کم سطح پر رہی ہو پر اس سال عام آدمی کے کھانے کا اہم حصہ آلو، پیاز، ٹماٹر، دال اور تیل کی قیمتیں اسے پورے سال رولاتی رہیں۔ اس سال کے آغاز میں بے موسم بارش اور ژالہ باری کی وجہ سے تلہن اور دلہن کی فصلوں کو نقصان تو پہنچا ہی تھا ساتھ ہی سبزیاں خاص طورپر ٹماٹر کی قیمتوں نے اپنا رنگ دکھانا شروع کر دیا تھا۔


پورے برس کے دوران کئی مواقع پر پیاز اور ٹماٹر کی قیمت 80 روپے فی کلو تک پہنچ گئی۔ حکومت نے ضروری اشیا کی قیمتوں پر کنٹرول کے لئے 500 کروڑ روپے کی لاگت سے قیمت استحکام فنڈ (پی ایس ایف)قائم کیالیکن اس کا فائدہ عام لوگوں کو پورا نہیں ملا۔ عام طور پر جون جولائی میں ضروری اشیاء کی قیمتیں بڑھنے لگتی ہیں اور یہ صورتحال دسمبر تک برقرار رہتی ہے۔


اس دوران ارہر دال کی قیمت نے 210 روپے فی کلو تک پہنچ کر تاریخ بنائی۔ اس دوران دودھ کی قیمتیں مستحکم رہیں جبکہ نمک کی قیمتوں میں ایک روپے فی کلو تک اضافہ ہوا۔ صارفین امور کی وزارت کے مطابق جون میں دہلی میں ارہر دال کی اوسط قیمت 113.73 روپے فی کلو تھی جو نومبر میں 167.14 روپے فی کلو تک پہنچ گئی۔ اس دوران ملک کے کچھ حصوں میں اس کی خوردہ قیمت 210 روپے فی کلو تک پہنچ گئی تھی۔


جون میں دہلی میں اڑد دال کی اوسط قیمت 112.32 روپے فی کلو تھی جو نومبر میں بڑھکر 150.55 روپے فی کلو تک پہنچ گئی تھی۔ جون میں دہلی میں سرسوں تیل کی اوسط قیمت 119.09 روپے فی کلو تھی جو نومبر میں بڑھ کر 145.59 روپے فی لیٹر تک پہنچ گئی ۔اگرچہ دسمبر میں اس کی قیمت میں معمولی کمی آئی۔


چولہا چوکی کے لئے پیاز اور ٹماٹر کو لازمی سمجھا جاتا ہے لیکن 28 جولائی کو دہلی میں پیاز کی قیمت 42 روپے فی کلو تھی جو ستمبر میں بڑھ کر 59.48 روپے فی کلو تک پہنچ گئی۔ گزشتہ 22 اگست کو ممبئی میں پیاز کی قیمت 80 روپے فی کلو تک پہنچ گئی تھی۔


جون میں ٹماٹر کی قیمت نے اپنا رنگ دکھانا شروع کیا اور اس دوران اس کی قیمت 32.59 روپے فی کلو تک پہنچ گئی۔ اگلے ہی ماہ اس کی قیمت 43.30 روپے فی کلو تک پہنچ گئی تھی لیکن اگست میں اس کی قیمت پھر34.14 روپے فی کلو تک پہنچ گئی تھی۔ نومبر میں اس کی قیمت 54.97 روپے فی کلو تک تھی۔


اس دوران ملک کے چند حصوں میں اس کی خوردہ قیمت 80 روپے فی کلو تک آ گئی تھی۔ گزر رہے سال کے دوران دہلی میں آلو کی اوسط خوردہ قیمت 12.75 روپے فی کلو سے 23.38 روپے فی کلو تک رہی۔ خوراک شہری رسدا ت اور امور صارفین کے وزیر رام ولاس پاسوان نے بھی تسلیم کیا کہ جون سے نومبر کے دوران چند ضروری اشیاء کی قیمتیں مختلف اسباب سے بڑھتی ہیں۔

First published: Dec 30, 2015 12:28 AM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading