پاکستان نے پھر کی جنگ بندی کی خلاف ورزی، فائرنگ میں بی ایس ایف افسر کی موت

جموں۔ ہندستان اور پاکستان کے درمیان ایک دوسرے پر مارٹر نہ داغنے سے متعلق اتفاق رائے قائم ہونے کے محض 24 گھنٹے بعد ہی سرحد پار سے فوجیوں نے جموں و کشمیر کے راجوری ضلع میں کنٹرول لائن پر مارٹر داغے جس میں بی ایس ایف کے ایک افسر کی جان چلی گئی۔

Sep 14, 2015 08:00 AM IST | Updated on: Sep 14, 2015 08:00 AM IST
پاکستان نے پھر کی جنگ بندی کی خلاف ورزی، فائرنگ میں بی ایس ایف افسر کی موت

جموں۔ ہندستان اور پاکستان کے درمیان ایک دوسرے پر مارٹر نہ داغنے سے متعلق اتفاق رائے قائم ہونے کے محض 24 گھنٹے بعد ہی سرحد پار سے فوجیوں نے جموں و کشمیر کے راجوری ضلع میں کنٹرول لائن پر مارٹر داغے جس میں بی ایس ایف کے ایک افسر کی جان چلی گئی۔ بارڈر سیکورٹی فورس (بی ایس ایف) اور پاکستان رینجرز کے درمیان دہلی میں ہوئی ڈائریکٹر جنرل سطح کی بات چیت میں جنگ بندی کو قائم رکھنے پر اتفاق رائے ہونے کے ایک دن بعد بی ایس ایف کے ایک سینئر افسر نے کہا کہ پاکستانی فوجیوں کی طرف سے جنگ بندی کی خلاف ورزی کی گئی۔ انہوں نے راجوری ضلع کے منجا کوٹے میں کنٹرول لائن پر واقع چوکیوں پر مارٹر داغے۔

افسر نے بتایا کہ اتوار کی شام چھ بج کر بیس منٹ کے قریب انہوں نے 82 ایم ایم کے دو مارٹر بم داغے، جن میں ایک ہندستانی چوکی کے پاس دھماکہ ہوا۔ اس میں بی ایس ایف کے ایک افسرشدید طورپر زخمی ہو گئے۔ راجستھان کے سیکر ضلع کے رہنے والے اے ایس آئی سوہن لال کی بعد میں موت ہو گئی۔ واقعہ کے بعد سرحد کی حفاظت میں تعینات ٹکڑیوں نے جوابی کارروائی کی۔ اس سے پہلے دن میں پاکستانی سرحد کی حفاظت میں لگے فوجیوں نے سامبا ضلع میں بین الاقوامی سرحد پر فائرنگ کی تھی۔

Loading...

بی ایس ایف کے ایک افسر نے بتایا کہ پاکستانی رینجرز نے اتوار کی صبح چھوٹے ہتھیاروں سے تین راؤنڈ فائرنگ کی۔ سامبا میں ایک سرحدی چوکی ان کا نشانہ تھی۔ انہوں نے بتایا کہ حالانکہ بی ایس ایف نے اس سلسلے میں کوئی جوابی کارروائی نہیں کی۔ اس سال ستمبر میں پاکستان اب تک 15 بار جنگ بندی کی خلاف ورزی کر چکا ہے۔

Loading...