وزیر خزانہ ارون جیٹلی کے خلاف عام آدمی پارٹی کی پریس کانفرنس، کئی سنگین الزام

نئی دہلی۔ سی بی آئی کے ذریعہ دہلی حکومت کے پرنسپل سکریٹری راجندر کمار کے دفتر پر کی گئی چھاپہ ماری سے برپا سیاسی ہنگامہ رکنے کا نام نہیں لے رہا ہے۔

Dec 17, 2015 11:26 AM IST | Updated on: Dec 17, 2015 01:54 PM IST
وزیر خزانہ ارون جیٹلی کے خلاف عام آدمی پارٹی کی پریس کانفرنس، کئی سنگین الزام

نئی دہلی۔ سی بی آئی کے ذریعہ دہلی حکومت کے پرنسپل سکریٹری راجندر کمار کے دفتر پر کی گئی چھاپہ ماری سے برپا سیاسی ہنگامہ رکنے کا نام نہیں لے  رہا ہے۔ اب یہ لڑائی براہ راست مرکز بمقابلہ ریاستی حکومت کی ہو گئی ہے۔ اس لڑائی کو آگے بڑھاتے ہوئے عام آدمی پارٹی نے آج مرکزی وزیر خزانہ ارون جیٹلی پر حملہ بولا۔  وزیر خزانہ ارون جیٹلی پر گھوٹالہ کا الزام لگاتے ہوئے عام آدمی پارٹی نے پریس کانفرنس کی۔ پارٹی نے جیٹلی کی نگرانی میں کروڑوں کے گھوٹالے کا الزام لگاتے ہوئے انہیں وزیر کے عہدہ سے ہٹانے کا مطالبہ کیا۔

پریس کانفرنس میں کمار وشواس، سنجے سنگھ، راگھو چڈھا اور اشوتوش شامل تھے۔ کمار وشواس نے کمان سنبھالتے ہوئے کہا کہ جیٹلی نے 15 سال تک ڈی ڈی سی اے کا غلط استعمال کیا ہے۔ ڈی ڈی سی اے پر خود بی جے پی ایم پی کیرتی آزاد نے بھی سوال اٹھائے۔ گھوٹالہ بے نقاب کرنے پر وزیر اعلی کو نشانہ بنایا۔ وزیر اعلیٰ کے دفتر میں زبردستی سی بی آئی کو بھیج کر وزیراعلیٰ دفتر سے منسلک فائلوں کو کھنگالا گیا۔ اس کے بعد وشواش نے راگھو چڈھا کو کمان دے دی۔

چڈھا نے کہا کہ ڈی ڈی سی اے میں 15 سال میں کروڑوں روپے کی دھوکہ دہی ہوئی ہے۔ انہوں نے کہا الزام نمبر 1- نیا اسٹیڈیم بنانے میں 24 کروڑ دیئے گئے تھے، لیکن اس میں 114 کروڑ خرچ کئے گئے۔ تو پھر 90 کروڑ کہاں گئے۔ الزام نمبر 2- دو قریبی لوگوں کو دیے گئے ٹھیکے۔ فرضی کمپنیاں بنا کر ڈی ڈی سی اے سے پیسہ نکالا گیا۔ الزام نمبر 3- بغیر انوائس لئے بل کی ادائیگی کر دی گئی۔ کچھ ایسی کمپنیوں کو اخراجات کی ادائیگی کر دی گئی جنہوں نے کام کیا ہی نہیں۔

چڈھا نے الزام لگایا کہ 16 فرموں کو 1 کروڑ 15 لاکھ روپے کی ادائیگی ایک ہی کام کے لئے کردی گئی۔ ڈی ڈی سی اے نے 1.55 کروڑ تین کمپنیوں کو لون دیا، لیکن اس کی وجہ نہیں بتائی گئی۔ پراکسی بلنگ کے ذریعے ڈی ڈی سی اے سے پیسہ نکالا گیا۔ ڈی ڈی سی اے کی ایگزیکٹو نے پراکسی بلنگ کروائی۔ ڈی ڈی سی اے کے خزانچی نریندر بترا کے ساتھ ارون جیٹلی کے کیا تعلقات ہیں بتایا جائے۔

Loading...

عام آدمی پارٹی کے ترجمان نے کہا کہ جیٹلی کے صدر عہدے کی مدت کے دوران فرضی کمپنی بنا کر کروڑوں کا گھوٹالہ کیا گیا۔ جب جیٹلی سے گھوٹالے کے بارے میں معلومات مانگی گئی تو اس کا جواب ان کے پاس نہیں تھا۔ کچھ ایسی کمپنیوں کو ادائیگی کی جا رہی ہے جنہوں نے کبھی کام کیا ہی نہیں۔ پانچ کمپنیوں کو ڈی ڈی سی اے نے رقم کی ادائیگی کی، پانچ کمپنیوں کے پتے ایک ہی جگہ پر۔ قریبی لوگوں کو دیے گئے ٹھیکے بغیرجانچ  بلوں کی ادائیگی کی گئی۔

چڈھا نے کہا کہ ڈی ڈی سی اے میں کہیں کوئی حساب نہیں رکھا اور ہزاروں روپے کے بل نقد میں ادا کئے گئے۔ جیٹلی نے پیسے دے کر فرضی کیس کروائے۔ جو آڈیٹر ڈی ڈی سی اے کے اکاؤنٹس کی جانچ پڑتال کرتا تھا خود اس کے خلاف ہی بدعنوانی کے الزام اور تحقیقات چل رہی ہے۔ جیٹلی جی سے مطالبہ کرتے ہیں کہ عوامی طور پر قبول کریں کہ ان کے ڈی ڈی سی اے کے خزانچی نریندر بترا سے کیا تعلقات تھے۔

جیٹلی جی نے ڈی ڈی سی اے میں بنے 10 کارپوریٹ باکسز کو کن لوگوں کو فروخت کیا۔ ان سے کتنا پیسہ لیا گیا؟ ڈی ڈی سی اے میں کھیلنے والے کھلاڑیوں کی عمر میں بھی دھاندلی ہوئی ہے۔ جیٹلی جی کے دور میں ڈی ڈی سی اے ایک ایلیٹ کلب بن گیا ہے، یہاں امیروں کا قبضہ ہو گیا۔ مودی جی آپ بدعنوان وزیر کو ہٹائیں، جیٹلی جی استعفی دیں اور ان کے خلاف تحقیقات ہو۔

ڈی ڈی سی اے کا الزام

ادھر ڈی ڈی سی اے کا الزام ہے کہ عام آدمی پارٹی پچھلے دروازے سے ادارہ میں گھسنے کی کوشش کر رہی ہے اس لیے وہ اس طرح کے الزامات لگا رہی ہے۔ ڈی ڈی سی اے کے نائب صدر چیتن چوہان کے مطابق وہ کسی بھی طرح کی تحقیقات کے لئے تیار ہیں۔ بتا دیں کہ اس سے پہلے کیجریوال کے پرنسپل سکریٹری پر چھاپے کے معاملے کو لے کر بدھ کو پارلیمنٹ میں بھی خوب ہنگامہ ہوا تھا، کارروائی شروع ہوتے ہی عام آدمی پارٹی کے چار میں سے دو ممبران پارلیمنٹ نے سی بی آئی پر حکومت کے اشارے پر کام کرنے کا الزام لگاتے ہوئے نعرے بازی شروع کر دی۔

Loading...