کانپور کی نور جہاں کرتی ہیں گھروں کو روشن ، من کی بات میں مودی نے بھی کیا تذکرہ

کانپور : اتر پردیش کی حکومت دیہاتوں میں روشنی پہنچانے کا خواہ جتنا بھی دعوی کرے ، لیکن زمینی سطح پر یہ دعوے بالکل کھوکھلے ہی ثابت ہوتے ہیں۔ اکثر گاؤں میں اندھیرا ہونے کی وجہ سے کئی مرتبہ لوگ حادثوں کے شکار بھی ہو چکے ہیں۔

Nov 29, 2015 09:07 PM IST | Updated on: Nov 29, 2015 09:07 PM IST
کانپور کی نور جہاں کرتی ہیں گھروں کو روشن ، من کی بات میں مودی نے بھی کیا تذکرہ

کانپور : اتر پردیش کی حکومت دیہاتوں میں روشنی پہنچانے کا خواہ جتنا بھی دعوی کرے ، لیکن زمینی سطح پر یہ دعوے بالکل کھوکھلے ہی ثابت ہوتے ہیں۔ اکثر گاؤں میں اندھیرا ہونے کی وجہ سے کئی مرتبہ لوگ حادثوں کے شکار بھی ہو چکے ہیں۔

آج ہم آپ کو بتاتے ہیں ایک ایسی خاتون کی کہانی ، جس کا تذکرہ اتوار کو وزیر اعظم مودی نے اپنے من کی بات کے پروگرام میں کیا۔ وزیر اعظم نے کانپور کی ایک خاتون نور جہاں کا تذکرہ کیا ، جنہوں نے شمسی توانائی کے میدان میں اہم کام انجام دیا ہے۔

نور جہاں شمسی توانائی کا استعمال کر کے تقریبا 500 گھروں کو روشن کر رہی ہیں۔ خیال رہے کہ کانپور دیہات کی کچھ خواتین نے مل کر ایک کمیٹی بنائی ہے اور اس کمیٹی کی طرف سے دیہاتیوں کو سولر لالٹین تقسیم کی جاتی ہیں ، جس کی وجہ سے اب یہاں رات میں بھی گاؤں روشن رہنے لگے ہیں۔

کانپور دیہات میں میتھا تحصیل کے بیری درياوں علاقے کے لوگ نور جہاں کے مرید ہو چکے ہیں ، کیونکہ نور جہاں کی وجہ سے ہی بیری درياوں علاقہ کے پچاس گھر بجلی کے بغیر بھی اندھیری راتوں میں روشن رہتے ہیں، جس کے لئے یہاں کے لوگوں سے 100 روپے ماہانہ بطور چارج لیا جاتا ہے ۔ اس میں سے 1700 روپے ماہانہ کمیٹی میں جمع کر دئے جاتے ہیں ، جو سولر لالٹین کے مٹننس پر خرچ کیا جاتا ہے۔

Loading...

ہر روز شام ڈھلتے ہی علاقے کے لوگ نور جہاں کے گھر آنا شروع کردیتے ہیں ، جہاں سے انہیں یہ سولر لالٹین ملتی ہیں۔ ان کا استعمال رات میں یہاں کے لوگ کرنے کے بعد صبح نور جہاں کے گھر واپس کردیتے ہیں ، جس کے بعد نور جہاں پورا دن سولر پینل کے سہارے ان پچاس لائٹوں کو چارج کرنے کا کام کرتی ہیں اور پھر شام کو لوگ انہیں اپنے گھروں کو روشن کرنے کے لئے لے جاتے ہیں۔

اس کمیٹی نے اب تک یہاں کے تقریبا دس شہروں میں اس طرح کے سولر لالٹین چارج سینٹر بنائے ہیں ، جن کے سہارے دس مختلف شہروں میں 500 گھروں کو روشن کرنے کا کام انجام دیا جارہا ہے۔ اب حال یہ ہے کہ یہاں کے لوگ سولر لالٹین کے بغیر نہیں رہ پا رہے ہیں۔

ساتھ ہی علاقے کے لوگ نور جہاں جیسی دیگر خواتین کی طرف گھروں کو روشن کرنے کی اس پہل کو قابل ستائش کام کا درجہ دینے لگے ہیں اور تو اور دیہی علاقوں کے غریب کسانوں کے لیے بھی یہ کسی سوغات سے کم نہیں ہے۔ کیونکہ اگر لوگوں کے گھروں میں کوئی چھوٹے موٹے پروگرام بھی ہوتے ہیں ، تو نور جہاں کی یہ لائیٹیں ہی ان پروگراموں کو روشن کرنے کا کام بھی کرتی ہیں۔

Loading...