شمالی ہند میں زلزلہ کے تیز جھٹکے، پاکستان میں شدید زلزلہ سے کم از کم 12 ہلاک، شمالی افغانستان میں 6ء7 کا زلزلہ

نئی دہلی۔ ہندستان، پاکستان اور افغانستان کے کئی حصے آج زلزلے کے تیز جھٹکوں سے ہل گئے۔

Oct 26, 2015 03:15 PM IST | Updated on: Oct 26, 2015 04:49 PM IST
شمالی ہند میں زلزلہ کے تیز جھٹکے، پاکستان میں شدید زلزلہ سے کم از کم 12 ہلاک، شمالی افغانستان میں 6ء7 کا زلزلہ

نئی دہلی۔ ہندستان، پاکستان اور افغانستان کے کئی حصے آج زلزلے کے تیز جھٹکوں سے ہل گئے۔ ہندستانی محکمہ موسمیات نے بتایا ہے کہ ریختر اسکیل پر زلزلے کی شدت کا اندازہ 7.5 لگایا گیا ہے۔ اس کا مرکز افغانستان کے ہندوكش علاقے میں بتایا گیا ہے۔

شمالی ہندوستان بشمول دہلی میں آج سہ پہر 2 بج کر 40 منٹ پر زلزلہ کے شدید جھٹکے محسوس کئے گئے جس سے لوگ گبھراگئے۔ زلزلہ سے عمارتیں ہلنے لگیں ۔لوگ خطرے کو محسوس کرکے کھلے میدانوں میں آگئے۔ ابتدائی اطلاعات کے مطابق زلزلہ کا مرکز افغانستان میں تھاا ور اس کی شدت ریختر پیمانے پر 7ء7 ناپی گئی ہے۔

 دہلی سمیت پورے شمالی ہندوستان میں زلزلے کے جھٹکوں سے چاروں طرف دہشت مچ گئی۔ زلزلے کے جھٹکوں سے خوفزدہ لوگ فوری طور پر گھروں اور دفاتر سے باہر نکل آئے۔ ہماچل پردیش کے چمبا، جموں کے ڈوڈہ سمیت تمام علاقوں میں دو بڑے جھٹکے آئے۔ متھرا اور آگرہ میں بھی زلزلے کے جھٹکے محسوس کئے گئے ہیں۔ جموں و کشمیر کے سرینگر میں بھی زلزلے کے تیز جھٹکے آئے۔ لوگ فوری طور پر اپنے گھروں سے باہر نکل آئے۔

اس کے علاوہ پنجاب، راجستھان، ہریانہ، اتر پردیش، بہار اورمغربی بنگال میں بھی زلزلے کے جھٹکے محسوس کئے گئے۔ جھٹکوں کی وجہ سے دہلی میں میٹرو سروس بھی کچھ دیر کے لئے بند کر دی گئی۔ میٹرو کو درمیان میں ہی روک دیا گیا۔ تاہم بعد میں میٹرو سروس دوبارہ شروع کر دی گئی۔ دہلی میں جزوی طور پر موبائل سروس بھی متاثر ہوئی۔

Loading...

پاکستان میں شدید زلزلہ سے کم از کم بارہ افراد ہلاک

دوسری طرف، پاکستان کے شمالی علاقہ جات سمیت افغانستان  میں زلزلے کے شدید جھٹکے محسوس کیے گئے۔ امریکن جیولوجیکل سروے کے مطابق زلزلے کی شدت 7.7 تھی جس سے ملک کے کئی شہر لرز اٹھے، جبکہ پاکستان کے محکمہ موسمیات کے مطابق زلزلے کی شدت 8.1 تھی اور اس کی زیر زمین گہرائی 1.86 کلومیٹر تھی۔ محکمہ موسمیات نے آئندہ 24 گھنٹوں کے دوران متاثرہ علاقوں میں آفٹر شاکس کا خدشہ ظاہر کیا ہے۔

ذرائع کے مطابق دارالحکومت اسلام آباد، لاہور، گجرانوالہ اور پشاور سمیت ملک کے کئی شہروں میں زلزلے کے شدید جھٹکے محسوس کیے گئے۔ زلزلے کے جھٹکے مالاکنڈ، کوہاٹ، بھکر اور گرد و نواح میں بھی محسوس کیے گئے، جبکہ لاہور میں زلزلے کے بعد آفٹر شاکس کا سلسلہ بھی جاری ہے۔

زلزلے کے باعث پشاور اور لاہور میں مواصلاتی نظام متاثر ہونے سے موبائل فون سروسز رک گئیں جبکہ لوگ خوفزدہ ہوکر لوگ گھروں سے باہر نکل آئے۔ زلزلے کے نتیجے میں باجوڑ ایجنسی میں عمارتوں کی چھتیں اور دیواریں گرنے سے 4 افراد، کلر کہار میں ایک بچہ، سرگودھا میں ایک جبکہ سوات میں 6 افراد کے جاں بحق ہونے اور متعدد کے زخمی ہونے کی اطلاع موصول ہوئی ہے۔

سوات کے سیدو شریف ہسپتال میں 200 زخمیوں کو لایا گیا جہاں 6 افراد ہلاک ہوگئے جبکہ ہسپتال میں زخمیوں کو لانے کا سلسلہ جاری ہے۔ چترال میں بھی زلزلے کے باعث 2 افراد کے ہلاک ہونے کی اطلاعات ہیں۔ پشاور کے لیڈی ریڈنگ ہسپتال میں 100 سے زائد زخمیوں کو لایا گیا ہے۔

زلزلے کے جھٹکوں کے باعث قذافی اسٹیڈیم میں میچ روک دیا گیا جبکہ اسٹیڈیم کے فلڈ لائٹ ٹاور دیر تک ہلتے رہے۔زلزلے کے باعث بٹگرام میں متعدد مکانات گرگئے جبکہ مالم جبہ میں زلزلے سے کئی مکانات کی چھتیں گرنے کی اطلاعات بھی ملی ہیں۔

پشاور کے وارسک روڈ پر ایک عمارت کا کچھ حصہ گرنے اور شمالی علاقہ جات کے مختلف حصوں میں موبائل ٹاورز اور بجلی کے کھمبے گرنے کی اطلاعات بھی موصول ہوئی ہیں۔ سرگودھا میں اسکول کی دیوار گرنے سے خاتون جاں بحق جبکہ 10 افراد زخمی ہوگئے۔

باک فوج کے شعبہ تعلقات عامہ انٹرسروسز پبلک ریلیشنز (آئی ایس پی آر) کے مطابق آرمی چیف جنرل راحیل شریف نے فوج کو کسی ہدایت کے انتظارکے بغیرمتاثرین کی امداد کی ہدایت کی ہے۔ جبکہ ایمرجنسی 1122 کو پنجاب بھر میں ہائی الرٹ کردیا گیا ہے۔

وزیراعظم نواز شریف نے سول ملٹری اور صوبائی ایجنسنزکو متحرک ہونے کی ہدایت کرتے ہوئے کہا ہے کہ تمام ادارے پورے وسائل کے ساتھ شہریوں کی امداد کے لیےتیاررہیں۔

شمالی افغانستان میں سات اعشاریہ چھ کا زلزلہ

وہیں شمال مشرقی افغانستان میں آج 6ء7 شدت کا زلزلہ آیا۔ یہ اطلاع امریکہ ارضیاتی سروے نے دی ہے۔ اس زلزلہ کے جھٹکے ہندوستان اور پاکستان میں بھی محسوس کئے گئے ہیں۔

زلزلہ کا مرکز ہندوکش پہاڑی سلسلہ میں افغانستان کے دور افتادہ فیض آباد سے 82 کلومیٹر جنوب مشرق میں 196 کلومیٹر کی گہرائی میں تھا۔ فی الحال کسی جانی ومالی نقصان کی کوئی اطلاع نہیں ہے۔

Loading...