کٹھوعہ معاملہ میں مجرموں کو سزا کے بعد اویسی نے بی جے پی سے پوچھا یہ سوال

اویسی نے کہا کہ بی جے پی کو بتانا چاہئے کہ جموں وکشمیر کی پچھلی حکومت میں اس کے وزرا نے کٹھوعہ معاملہ کے ملزمان کی حمایت میں منعقد ریلی میں حصہ کیوں لیا تھا؟

Jun 11, 2019 10:33 AM IST | Updated on: Jun 11, 2019 10:33 AM IST
کٹھوعہ معاملہ میں مجرموں کو سزا کے بعد اویسی نے بی جے پی سے پوچھا یہ سوال

آل انڈیا مجلس اتحاد المسلمین کے سربراہ اسد الدین اویسی: فائل فوٹو۔

جموں وکشمیر کے کٹھوعہ میں 8 سالہ بچی کی عصمت دری اور اس کے قتل معاملہ میں پٹھان کوٹ کی خصوصی عدالت نے کل 6 ملزمان کو مجرم قرار دیا اور انہیں سزا سنائی۔ ان سب کے درمیان آل انڈیا مجلس اتحاد المسلمین کے صدر اور رکن پارلیمنٹ اسدالدین اویسی کا ایک بیان سامنے آیا ہے۔ اپنے اس بیان میں حیدرآباد سے رکن پارلیمنٹ اویسی نے بی جے پی پر جم کر حملہ بولا۔

انہوں نے کہا کہ بی جے پی کو بتانا چاہئے کہ جموں وکشمیر کی پچھلی حکومت میں اس کے وزرا نے کٹھوعہ معاملہ کے ملزمان کی حمایت میں منعقد ریلی میں حصہ کیوں لیا تھا؟ انہوں نے کہا ’’ بی جے پی کو یہ بتانا چاہئے کہ اس کے وزیر ملزمان کی حمایت میں کیوں آئے تھے‘‘؟

Loading...

انہوں نے دعویٰ کیا کہ بی جے پی( اس وقت کی بی جے پی۔ پی ڈی پی کی مخلوط حکومت) سے منسلک وزرا نے ملزمان کی حمایت میں ایک ریلی میں حصہ لیا تھا۔ انہوں نے کٹھوعہ معاملہ میں فیصلہ کو لے کر سوالوں کا جواب دیتے ہوئے کہا ’’ ملزم خواہ کسی بھی مذہب کا ہو، اسے انصاف کے کٹہرے میں لایا جانا چاہئے‘‘۔

بتا دیں کہ  کٹھوعہ کیس میں پٹھان کوٹ اسپیشل کورٹ نے اہم ملزم سانجھی رام (گرام پردھان)، خصوصی پولیس آفیسر دیپک کھجوریہ، پولیس آفیسر سریندر کمار، رسانا گاؤں کے پرویش کمار، اسسٹنٹ سب انسپکٹر آنند دتہ، ہیڈ کانسٹیبل تلک راج کو مجرم قرار دیا ہے۔ جبکہ سانجھی رام کے بیٹے وشال کو بری کر دیا گیا ہے۔ وہیں، اس معاملہ میں نابالغ ملزم ( جو سانجھی رام کا بھتیجا بھی ہے) اس پر عدالت میں سماعت چل رہی ہے۔

 

Loading...
Listen to the latest songs, only on JioSaavn.com