ہوم » نیوز » وطن نامہ

آرٹیکل 370 کی منسوخی : جموں میں آباد مغربی پاکستان کے پناہ گزینوں میں خوشی کی لہر

  • Share this:
آرٹیکل 370 کی منسوخی : جموں میں آباد مغربی پاکستان کے پناہ گزینوں میں خوشی کی لہر
آرٹیکل 370 کی منسوخی : جموں میں آباد مغربی پاکستان کے پناہ گزینوں میں خوشی کی لہر۔(تصویر:نیوز18اردو)۔

دکھشا نامی مغربی پاکستان کی رفیوجی لڑکی کی دیرینہ مانگ اب پوری ہونے جارہی ہے۔ کیونکہ ریاست جموں و کشمیر سے دفعہ 370 ختم ہونے سے اسے جہاں شہریت کا حق حاصل ہوگا۔وہیں وہ اب سرکاری نوکری کا حق دار بن پائے گی۔ کئی برسوں سے شہریت کا حق پانے کے لئے ترس رہے ایسے کئی لوگوں کے لئےیہ موقع تاریخی ہے۔ دکھشا اور اسکے گھروالوں سمیت مغربی پاکستان سے آئے سینکڑوں کنبےجشن منا رہے ہیں ۔ریاست جموں و کشمیر سے دفعہ تین 370 ہٹائے جانے کے تاریخی فیصلے سے جموں میں آباد مغربی پاکستان کے رفیوجیوں نے مسرت کا اظہار کیا ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ اب انہیں جموں و کشمیر میں شہریت کا حق حاصل ہوگا۔


ان لوگوں کو جہاں ریاست میں شہریت کا درجہ حاصل ہوگا وہیں انکوووٹ دینے کا حق بھی مل جائے گا۔ایسے لوگ جوبرسوں سے اپنے حقوق کے لئے لڑتے آئے ہیں اب یہاں کے دوسرے لوگوں کی طرح زندگی کے ہر شعبے میں اپنا بھرپورحق پاسکیں گے۔ ان لوگوں کا کہنا ہے کہ اگرچہ سابقہ سرکاروں نے انکے ساتھ جھوٹے وعدے کئے تاہم موجودہ بی جے پی سرکار نے صحیح معنوں میں انکا درد سمجھ کر انکے ساتھ انصاف کیا ہے۔ ان لوگوں نے ان سیاست دانوں اور لوگوں کی نکتہ چینی کی جو سرکار کے اس فیصلے کی مخالفت کر رہے ہیں۔

واضح رہے کہ پارلیمنٹ میں منگل کو جموں و کشمیر کو خصوصی درجہ دینے سے متعلق آرٹیکل 370 کی زیادہ تر شقوں کو ختم کرنے سے وابستہ سنکلپ کو منظوری دیدی۔ راجیہ سبھا نے اس سنکلپ کو پیر کو ہی پاس کردیا تھا۔آج لوک سبھا نے اس کو منظوری دیدی۔لوک سبھا میں آرٹیکل 370 کی زیادہ تر شقوں کو ختم کرنے سے متعلق سنکلپ کو 72 کے مقابلہ میں 351 ووٹوں سے پاس کیا گیا۔وہیں لوک سبھا میں جموں و کشمیر تشکیل نو ایکٹ 2019 کو 70 کے مقابلہ میں 370 ووٹوں سے منظور کیا گیا۔

First published: Aug 07, 2019 10:19 AM IST