ہوم » نیوز » وطن نامہ

دارالحکومت پٹنہ کے آسرا ہوم کی حالت انتہائی نازک، لڑکیاں انتہائی خوف زدہ

شیلٹر ہوم کے پڑوس میں رہنے والی ایک خاتون نے جانچ ٹیم کو بتایا کہ آئے دن لڑکیوں کے رونے چلانے کی آوازآتی رہتی ہے۔

  • UNI
  • Last Updated: Aug 14, 2018 01:37 PM IST
  • Share this:
  • author image
    NEWS18-Urdu
دارالحکومت پٹنہ کے آسرا ہوم کی حالت انتہائی نازک، لڑکیاں انتہائی خوف زدہ
نیوز 18 کریئٹوس: میر سهیل

مظفر پور گرلس شیلٹر ہوم جنسی استحصال معاملہ کا انکشاف ہونے کے بعد راجدھانی پٹنہ کے شیلٹر ہوم آسراہوم کے بارے میں جانچ کی بنیاد پر کمیونسٹ پارٹی آف انڈیا ( مارکسوادی۔ لینن وادی ) نے کہا کہ شیلٹر ہوم کی حالت انتہائی نازک ہے اور یہاں رہ رہیں انتہائی بچیاں خوف زدہ ہیں۔


سی پی آئی (ایم ایل ) ، اکھل بھارتیہ پرگتی شیل مہیلا سنگھ ( آئی سا ) کی مشترکہ جانچ ٹیم نے راجدھانی پٹنہ کے راجیو نگر حلقہ میں چل رہی غیر سرکاری تنظیم ( این جی او ) انو مایا ہیومن ریسورس فاونڈین کے شیلٹر ہوم آسراہوم کا معائنہ کیا۔ جانچ ٹیم نے بتایا کہ شیلٹر کی لڑکیوں اور آس پاس کے لوگوں سے بات چیت سے واضح ہوتا ہے کہ ببلی (40) اور پونم (17) کی موت کوئی عام واقعہ نہیں ہے بلکہ دونوں کا سازش کے تحت قتل کیا گیا ہے۔ اس شیلٹر ہوم کی حالت بیحد خوفناک ہے اور وہاں رہ رہی لڑکیاں پوری طرح سے خوف زدہ ہیں۔


ٹیم نے کہا کہ لڑکیوں نے کھڑکی پر آکر بتایا کہ 10 اگست کو تین سے چار بجے کے درمیان ادارہ کی خزانچی منیشا دیال کی گاڑی پر طبیعت خراب ہونے کی وجہ سے ببلی دیوی کو علاج کیلئے لے جایا گیا۔ پونم ان کی دیکھ بھال کے لئے ساتھ گئی تھی لیکن آسرام ہوم میں رہ رہی لڑکیوں کو آج تک ان دونوں کی موت کا پتہ نہیں۔ ایسے میں سوال اٹھتا ہے کہ محض تین چار گھنٹے کے درمیان آخر ایسا کیا ہوا کہ دونوں کی موت ہو گئی۔


شیلٹر ہوم کے پڑوس میں رہنے والی ایک خاتون نے جانچ ٹیم کو بتایا کہ آئے دن لڑکیوں کے رونے چلانے کی آوازآتی رہتی ہے۔ ہوم میں تعینات گارڈ انہیں پیٹا کرتا ہے۔ انہیں نہ تو ٹھیک سے کھانا دیاجاتا ہے اور نہ ہی ان کا علاج ومعالجہ کرایا جاتا ہے۔ جانچ ٹیم کو آسرا ہوم میں رہنے والی خواتین۔ لڑکیوں نے وہاں سے نکالنے کی اپیل کی ہے۔ جانچ ٹیم نے مانگ کی ہے کہ شیلٹر ہوم میں رہنے والی سبھی 52  خواتین کو فی الحال دوسرے محفوظ جگہ منتقل کیا جائے اور ان میں جو اپنے گھر جانا چاہتی ہیں انہیں بلاتاخیر گھر بھیجا جائے۔
First published: Aug 14, 2018 07:46 AM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading