سری نگر میں سرکاری کوارٹر میں منتقل کی گئیں پی ڈی پی سربراہ محبوبہ مفتی ، بیٹی نے کیا تھا مطالبہ

جموں و کشمیر سے آرٹیکل 370 ہٹائے جانے کے بعد سے ہی حراست اور نظر بندی میں رہ رہیں سابق وزیر اعلی اور پی ڈی پی سربراہ محبوبہ مفتی کو جمعہ کو چشمہ شاہی سے دوسری جگہ پر منتقل کردیا گیا ۔

Nov 15, 2019 11:08 PM IST | Updated on: Nov 15, 2019 11:08 PM IST
سری نگر میں سرکاری کوارٹر میں منتقل کی گئیں پی ڈی پی سربراہ محبوبہ مفتی ، بیٹی نے کیا تھا مطالبہ

محبوبہ مفتی ۔ فائل فوٹو ۔

جموں و کشمیر سے آرٹیکل 370 ہٹائے جانے کے بعد سے ہی حراست اور نظر بندی میں رہ رہیں سابق وزیر اعلی اور پی ڈی پی سربراہ محبوبہ مفتی کو جمعہ کو چشمہ شاہی سے دوسری جگہ پر منتقل کردیا گیا ۔ افسران کے مطابق محبوبہ مفتی کو اب تک شہر سے باہر رکھا گیا تھا ، لیکن جمعہ کو انہیں شہر کے اندر سرکاری کوارٹر میں منتقل کردیا گیا ۔ بتایا جارہا ہے کہ محبوبہ مفتی کی بیٹی التجا مفتی نے ٹھنڈ میں اضافہ کی وجہ سے انہیں منتقل کرنے کا مطالبہ کیا تھا ۔ افسران کا بھی یہی کہنا ہے کہ محبوبہ مفتی کو ٹھنڈ میں اضافہ اور بجلی میں کٹوتی کے پیش نظر منتقل کیا گیا ہے ۔

محبوبہ مفتی کو جس گیسٹ ہاوس میں رکھا گیا تھا ، وہاں سے انہیں جمعہ کی صبح ہی منتقل کیا جانا تھا اور اس کیلئے افسران اس گیسٹ ہاوس میں صبح پہنچ بھی گئے تھے ، لیکن اس کام میں کاغذی کارروائی پوری کرنے کی وجہ سے تاخیر ہوئی ۔ کاغذی کارروائی کو پورا کرنا لازمی تھا ۔ کارروائی مکمل کرنے کے بعد انہیں جمعہ کی شام کو سری نگر کے درمیان میں واقع سرکاری کوارٹر میں منتقل کردیا گیا ۔ اس سے پہلے اس جگہ کو انتظامیہ کی جانب سے جیل اعلان کردیا گیا ۔

Loading...

iltija and mehbooba

بتادیں کہ جموں و کشمیر کے سابق وزرائے اعلی محبوبہ مفتی ، عمر عبد اللہ اور فاروق عبداللہ کو پانچ اگست سے ہی حراست میں رکھا گیا ہے ۔ مرکزی حکومت کی جانب سے پانچ اگست کو ریاست سے آرٹیکل 370 ہٹائے جانے کے بعد امن کی بحالی کے پیش نظر یہ فیصلہ لیا گیا تھا ۔

خیال رہے کہ قبل ازیں پی ڈی پی سربراہ محبوبہ مفتی کو سابق وزیر اعلی اور نیشنل کانفرنس کے لیڈر عمر عبد اللہ کے ساتھ ہی ہری نیواس میں رکھا گیا تھا ، لیکن بعد میں انہیں چشمہ شاہی کے ایک ٹورسٹ ہٹ میں منتقل کردیا گیا تھا ۔ وہیں سپریم کورٹ نے پانچ ستمبر کو محبوبہ مفتی کی بیٹی التجا مفتی کو ان کی والدہ سے ملاقات کی اجازت دیدی تھی ۔ تاہم انہیں اس شرط پر اجازت دی گئی تھی کہ انہیں پہلے متعلقہ افسران سے اجازت لینی ہوگی ۔

Loading...