உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Petrol, Diesel Prices: چار دنوں میں پٹرول، ڈیزل کی قیمتوں میں 2.40 روپے کا اضافہ، ایندھن کے تازہ ترین قیمت چیک کریں

    قابل ذکر بات یہ ہے کہ پٹرول کی قیمت روپے سے اوپر ہے۔ مدھیہ پردیش، آندھرا پردیش، مہاراشٹر، تلنگانہ، کرناٹک، راجستھان، اڑیسہ، جموں و کشمیر اور لداخ جیسی ریاستوں میں 100 فی لیٹر ہوگیا ہے اور وہیں دوسری ریاستوں میں یہ قیمت 100 روپیے سے بھی بڑھ گئی ہے۔

    قابل ذکر بات یہ ہے کہ پٹرول کی قیمت روپے سے اوپر ہے۔ مدھیہ پردیش، آندھرا پردیش، مہاراشٹر، تلنگانہ، کرناٹک، راجستھان، اڑیسہ، جموں و کشمیر اور لداخ جیسی ریاستوں میں 100 فی لیٹر ہوگیا ہے اور وہیں دوسری ریاستوں میں یہ قیمت 100 روپیے سے بھی بڑھ گئی ہے۔

    قابل ذکر بات یہ ہے کہ پٹرول کی قیمت روپے سے اوپر ہے۔ مدھیہ پردیش، آندھرا پردیش، مہاراشٹر، تلنگانہ، کرناٹک، راجستھان، اڑیسہ، جموں و کشمیر اور لداخ جیسی ریاستوں میں 100 فی لیٹر ہوگیا ہے اور وہیں دوسری ریاستوں میں یہ قیمت 100 روپیے سے بھی بڑھ گئی ہے۔

    • Share this:
      پیٹرول، ڈیزل کی تازہ قیمتوں کا اعلان (Petrol, Diesel Fresh Prices Announced): ایک دن کی مہلت کے بعد آج 25 مارچ 2022 کو ملک میں پیٹرول اور ڈیزل کی قیمتوں میں پھر اضافہ ہوا ہے۔ پیٹرول کی قیمتوں میں 76 تا 84 پیسے کا اضافہ کیا گیا ہے، جب کہ ڈیزل کی قیمتوں میں 76 تا 85 پیسے کا اضافہ ہوا ہے۔

      آئی او سی کی تازہ ترین پیش رفت کے مطابق دہلی میں پٹرول اور ڈیزل کی قیمت آج بالترتیب 97.81 روپے فی لیٹر اور 89.07 روپے فی لیٹر ہے (80 پیسے کا اضافہ ہوا)۔ ممبئی میں پٹرول اور ڈیزل کی فی لیٹر قیمتیں 112.51 روپے اور 96.70 روپے (بالترتیب 84 پیسے اور 85 پیسے کا اضافہ) ہوگیا ہے۔

      چینائی میں پٹرول کی قیمت 103.67 روپے اور ڈیزل کی قیمت 93.71 روپے (76 پیسے کا اضافہ) اور کولکتہ میں، پٹرول کی قیمت 106.34 روپے (84 پیسے کا اضافہ) اور ڈیزل کی قیمت 91.42 روپے (80 پیسے کا اضافہ) ہے۔

      قابل ذکر بات یہ ہے کہ پٹرول کی قیمت روپے سے اوپر ہے۔ مدھیہ پردیش، آندھرا پردیش، مہاراشٹر، تلنگانہ، کرناٹک، راجستھان، اڑیسہ، جموں و کشمیر اور لداخ جیسی ریاستوں میں 100 فی لیٹر ہوگیا ہے اور وہیں دوسری ریاستوں میں یہ قیمت 100 روپیے سے بھی بڑھ گئی ہے۔

      مزید پڑھیں: نوین شیکھرپا کی جسد خاکی کا آخری دیدار، والد بولے رسومات کے بعد بیٹے کی Body میڈیکل کالج کو ڈونیٹ کردیں گے

      اس سے پہلے ایندھن کی قیمتوں میں منگل اور پھر بدھ کو دوبارہ اضافہ کیا گیا تھا۔ قیمتوں میں ہر بار 80 پیسے فی لیٹر اضافہ کیا گیا۔ ہندوستان میں پیٹرول اور ڈیزل کی شرح مختلف عوامل پر منحصر ہے جیسے ایندھن کی طلب، USD کے مقابلے میں INR کی قدر اور ریفائنریوں کی کھپت کا تناسب ہوتا ہے۔ پٹرول اور ڈیزل کی قیمتیں مقامی ٹیکسوں جیسے ویلیو ایڈڈ ٹیکس (VAT) اور فریٹ چارجز پر بھی منحصر ہوتی ہیں اور ریاست سے ریاست میں تبدیل ہو سکتی ہیں۔

      مزید پڑھیں: پاکستانی PM کی کرسی پر عمران خان بس کچھ ہی دنوں کے مہمان! اب Pakistan Army نے بھی دیا الٹی میٹم

      پیٹرول اور ڈیزل کی قیمتیں 4 نومبر سے منجمد تھیں۔ اس عرصے کے دوران خام مال (خام تیل) کی قیمت 30 ڈالر فی بیرل تک بڑھ گئی۔ 10 مارچ کو اسمبلی انتخابات ختم ہونے کے فوراً بعد شرح پر نظر ثانی متوقع تھی لیکن اسے ٹال دیا گیا۔ تیل کمپنیاں اب اس نقصان کی تلافی کر رہی ہیں۔ Moody’s Investors Services کی ایک رپورٹ کے مطابق ہندوستان کے سب سے بڑے ایندھن کے خوردہ فروش IOC، BPCL اور HPCL کو پانچ ریاستوں میں انتخابات کے دوران پٹرول اور ڈیزل کی قیمتوں کو روکے رکھنے کی وجہ سے تقریباً 2.25 بلین ڈالر (19,000 کروڑ روپے) کی آمدنی کا نقصان ہوا۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: