آر سی ای پی کو لے کر پیوش گوئل نے سونیا گاندھی پر کیا جوابی حملہ ، پوچھے کئی سوالات

پیوش گوئل نے مجوزہ ریجنل کمپرہینسو اکنامک پارٹنرشپ ( آر سی ای پی ) اور فری ٹرید ایگریمنٹ ( ایف ٹی اے ) کو لے کر کانگریس صدر سونیا گاندھی کے بیان پر جوابی حملہ کیا ہے ۔

Nov 03, 2019 11:54 AM IST | Updated on: Nov 03, 2019 11:54 AM IST
آر سی ای پی کو لے کر پیوش گوئل نے سونیا گاندھی پر کیا جوابی حملہ ، پوچھے کئی سوالات

مرکزی وزیر پیوش گوئل ۔ فوٹو : پی ٹی آئی / نیوز 18 ڈاٹ کام ۔

کامرس اور انڈسٹریز کے مرکزی وزیر پیوش گوئل نے مجوزہ ریجنل کمپرہینسو اکنامک پارٹنرشپ ( آر سی ای پی ) اور فری ٹرید ایگریمنٹ ( ایف ٹی اے ) کو لے کر کانگریس صدر سونیا گاندھی کے بیان پر جوابی حملہ کیا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ یو پی اے حکومت کے دوران ہی ہندوستان ان سمجھوتوں کیلئے بات چیت میں شامل ہوا تھا ۔

گوئل نے ٹویٹ کیا کہ سونیا گاندھی جی ، آر سی ای پی اور ایف ٹی اے کو لے کر اچانک بیدار ہوگئی ہیں ۔ جب آسیان کے ساتھ ایف ٹی اے پر 2010 میں دستخط ہوئے تھے ، تب وہ کہاں تھیں ؟ جب جنوبی کوریا کے ساتھ ایف ٹی اے پر 2010 میں دستخط ہوئے تھے ، تب وہ کہاں تھیں ؟ جب ملیشیا کے ساتھ ایف ٹی اے پر 2011 میں دستخط ہوئے تھے ، جب جاپان کے ساتھ 2011 میں ایف ٹی اے پر دستخط ہوئے تھے ، تب وہ کہاں تھیں ؟ ۔

انہوں نے مزید ٹویٹ کیا کہ اس وقت وہ کہاں تھیں جب ان کی حکومت نے آسیان ممالک کیلئے اپنا 74 فیصد بازار کھول دیا تھا ، لیکن انڈونیشیا جیسے امیر ملک نے ہندوستان کیلئے صرف 50 فیصد بازار کھولا تھا ؟ وہ امیر ممالک کو بھاری چھوٹ دینے کے خلاف کیوں نہیں بولیں؟ ۔

گوئل نے کہا کہ اس وقت سونیا جی کہاں تھی جب ان کی حکومت 2007 میں ہندوستان – چین ایف ٹی اے پر تبادلہ خیال کرنے پر رضامند ہوئی تھی ؟ مجھے امید ہے کہ سابق وزیر اعظم ڈاکٹر منموہن سنگھ اس بے عزتی کے خلاف بولیں گے ۔

خیال رہے کہ سونیا گاندھی نے 16 ایشیائی ممالک کے ساتھ مجوزہ آر سی ای پی سمجھوتہ کا تذکرہ کرتے ہوئے کہا تھا کہ حکومت کے کئی فیصلوں سے معیشت کو کیا کم نقصان نہیں ہوا تھا کہ اب وہ آر سی ای پی کے ذریعہ بڑا نقصان پہنچانے کی تیاری میں ہے ۔ اس سے ہمارے کسانوں ، دکانداروں کو سنگین نتائج بھگتنے پڑیں گے ۔

Loading...