ہوم » نیوز » جنوبی ہندوستان

کرناٹک میں وقف بورڈ کے تحت 4 کورونا اسپتال قائم کرنے کا منصوبہ، 19 اگست کو ہوگی اہم میٹنگ

کورونا کی تیزی سے پھیل رہی وبا کو دیکھتے ہوئے کرناٹک ریاستی وقف بورڈ نے کووڈ 19 کے 4 اسپتال قائم کرنے کا منصوبہ بنایا ہے۔ 19 اگست کو ہونے والی وقف بورڈ کی میٹنگ میں اس سلسلے میں منظوری حاصل کرلی جائےگی۔

  • Share this:
کرناٹک میں وقف بورڈ کے تحت 4 کورونا اسپتال قائم کرنے کا منصوبہ، 19 اگست کو ہوگی اہم میٹنگ
کرناٹک میں وقف بورڈ کے تحت 4 کورونا اسپتال قائم کرنے کا منصوبہ

بنگلورو: کورونا کی تیزی سے پھیل رہی وبا کو دیکھتے ہوئے کرناٹک ریاستی وقف بورڈ نے کووڈ 19 کے 4 اسپتال قائم کرنے کا منصوبہ بنایا ہے۔ 19 اگست کو ہونے والی وقف بورڈ کی میٹنگ میں اس سلسلے میں منظوری حاصل کرلی جائےگی۔ بنگلورو میں وقف بورڈ کے رکن انور باشاہ نے یہ جانکاری دی۔ انور باشاہ نے کہا کہ ریاست کے 4 ڈویژن یعنی بنگلورو، میسور، گلبرگہ، اور بلگام میں وقف کی عمارتوں میں کورونا کے اسپتال قائم کرنے کا منصوبہ تیار ہے۔ اس انتہائی ضروری کاز کیلئے  ملت کے چند احباب مالی تعاون فراہم کرنے کیلئے آگے آئے ہوئے ہیں۔


انہوں نے کہا کہ کورونا اسپتال کے قیام کیلئے بنگلورو کے شانتی نگر اسمبلی حلقہ کے رکن اسمبلی این اے حارث نے 50 لاکھ روپئے فراہم کرنے کا بھروسہ دیا ہے۔ اسی طرح ملت کے چند اور احباب کی مالی مدد سے ریاست کے چار بڑے شہروں میں وقف بورڈ کے تحت کووڈ 19 کے اسپتال قائم کرنے کی پہل ہو رہی ہے۔ اس سلسلے میں وقف اداروں کے تحت موجود چند عمارتوں کی بھی نشاندہی کی گئی ہے۔ انور باشاہ نے کہا کہ حال ہی میں انتقال کرنے والے وقف بورڈ کے چیئرمین ڈاکٹر محمد یوسف کی صدارت میں کورونا اسپتالوں کے قیام کے سلسلے میں کوششیں شروع ہوئی تھیں، لیکن ڈاکٹر محمد یوسف کے اسپتال میں زیر علاج رہنے کے سبب بورڈ کی کوئی میٹنگ منعقد نہیں ہوئی۔ ڈاکٹر محمد یوسف کے اچانک انتقال پر گہرے دکھ اور رنج کا اظہار کرتے انور باشاہ نے کہا کہ آنے والے دنوں میں وقف بورڈ کورونا اسپتالوں کے قیام کے منصوبے کو عملی جامہ پہنائے گا۔ 19 اگست کو ہونے والی بورڈ کی میٹنگ میں اس معاملے پر تفصیلی گفتگو ہوگی۔


ڈاکٹر محمد یوسف کے انتقال کے بعد کرناٹک وقف بورڈ کے موجودہ اراکین کی تعداد 9 ہے۔ ان میں منتخب ارکان 5 اور ریاستی حکومت کی جانب سے نامزد ارکان 4 ہیں۔
ڈاکٹر محمد یوسف کے انتقال کے بعد کرناٹک وقف بورڈ کے موجودہ اراکین کی تعداد 9 ہے۔ ان میں منتخب ارکان 5 اور ریاستی حکومت کی جانب سے نامزد ارکان 4 ہیں۔


7 اگست 2020 کو کرناٹک ریاستی وقف بورڈ کے چیئرمین ڈاکٹر محمد یوسف کے اچانک انتقال کے بعد بورڈ کا اگلا چیئرمین کون ہوگا اس پر بھی گفتگو ہو رہی ہے۔ وقف بورڈ کے رکن مولانا محمد شافعی سعدی نے کہا کہ اس موضوع پر بورڈ کی آنے والی میٹنگ میں گفتگو ہوگی۔ اس دوران محکمہ اقلیتی بہبود، حج اور وقف بورڈ نے متولی کے زمرے کی ایک نشست کیلئے انتخابات منعقد کرنے کی ریجنل کمشنر، بنگلورو سے درخواست کی ہے۔ محکمہ اقلیتی بہبود کے سکریٹری کی جانب سے جاری مکتوب میں کہا گیا ہے کہ ڈاکٹر محمد یوسف کے انتقال کے بعد کرناٹک وقف بورڈ کے متولی زمرہ کی ایک نشست خالی ہوئی ہے۔ اس عہدے کو پُرکرنےکیلئے سالانہ ایک لاکھ روپئے سے زائد آمدنی والے وقف اداروں کے متولیوں کے درمیان الیکشن منعقد کیا جانا چاہئے۔ محکمہ اقلیتی بہبود نے کہا ہے کہ کرناٹک ریاستی وقف بورڈ کے پاس ریاست کے بڑے وقف اداروں کے متولیوں کی فہرست موجود ہے، جو ووٹنگ کیلئے اہل ہیں۔ وقف ایکٹ 1995 کے تحت وقف بورڈ کے انتخابات کیلئے ریجنل کمشنر ریٹرننگ افسر ہوں گے۔ محکمہ اقلیتی بہبود نے ریجنل کمشنر، بنگلورو ڈویژن سے درخواست کی ہے کہ متولی زمرہ کی ایک نشست کیلئے انتخابات منعقد کرنے کی کارروائی شروع کی جائے۔

واضح رہے کہ ڈاکٹر محمد یوسف کے انتقال کے بعد کرناٹک وقف بورڈ کے موجودہ اراکین کی تعداد 9 ہے۔ ان میں منتخب ارکان 5 اور ریاستی حکومت کی جانب سے نامزد ارکان 4 ہیں۔ منتخب ارکان میں راجیہ سبھا کے رکن ڈاکٹر ناصر حسین، ارکان اسمبلی تنویر سیٹھ اور کنیز فاطمہ، متولی زمرے کے رکن انور باشاہ، کرناٹک ریاستی بار کونسل کے رکن آصف علی شامل ہیں۔ جبکہ نامزد ارکان میں مولانا محمد شافعی سعدی، مولانا میر اظہر حسین، قاضی نفیسہ اور جی یعقوب شامل ہیں۔ دیکھنا یہ ہوگا کہ کرناٹک ریاستی وقف بورڈ کا اگلا چیئرمین کون ہوگا؟
Published by: Nisar Ahmad
First published: Aug 11, 2020 11:57 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading