உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    PM Kisan:کسانوں کے لئے بڑی خبر، جانیے 12 کروڑ کسانوں کے بینک اکاونٹ میں کب آئیں گے دوہزار روپیے

    PM Kisan:  پردھان منتری کسان سمان ندھی (پی ایم-کسان) اسکیم کے تحت، فائدہ اٹھانے والے کسان خاندانوں کو ہر سال 2,000 روپے کی تین مساوی قسطوں میں 6,000 روپے کی مالی امداد دی جاتی ہے۔

    PM Kisan: پردھان منتری کسان سمان ندھی (پی ایم-کسان) اسکیم کے تحت، فائدہ اٹھانے والے کسان خاندانوں کو ہر سال 2,000 روپے کی تین مساوی قسطوں میں 6,000 روپے کی مالی امداد دی جاتی ہے۔

    PM Kisan: پردھان منتری کسان سمان ندھی (پی ایم-کسان) اسکیم کے تحت، فائدہ اٹھانے والے کسان خاندانوں کو ہر سال 2,000 روپے کی تین مساوی قسطوں میں 6,000 روپے کی مالی امداد دی جاتی ہے۔

    • Share this:
      نئی دہلی:وزیر اعظم نریندر مودی نے یکم جنوری کو پی ایم کسان یوجنا کے تحت کسانوں کے کھاتے میں 2000 روپے کی 10ویں قسط منتقل کر دی ہے۔ پردھان منتری کسان سمان ندھی (پی ایم-کسان) اسکیم کے تحت، فائدہ اٹھانے والے کسان خاندانوں کو ہر سال 2,000 روپے کی تین مساوی قسطوں میں 6,000 روپے کی مالی امداد دی جاتی ہے۔ یہ رقم براہ راست فائدہ اٹھانے والے کے بینک اکاؤنٹ میں منتقل کی جاتی ہے۔ 10ویں قسط جنوری کے پہلے ہفتے میں آئی، اس کے حساب سے یہ اندازہ لگایا جا رہا ہے کہ 11ویں قسط اپریل کے پہلے ہفتے میں کسانوں کے کھاتے میں آجائے گی۔


      ایسے چیک کریں اپنا اسٹیٹس
      -سب سے پہلے پی ایم کسان کی آفیشل ویب سائٹ https://pmkisan.gov.in/ پر جائیں۔
      - یہاں آپ کو دائیں جانب Farmers Corner کا آپشن ملے گا۔

      یہاں Beneficiary Status کے آپشن پر کلک کریں۔ یہاں ایک نیا صفحہ کھلے گا۔

      نئے صفحہ پر، آدھار نمبر، بینک اکاؤنٹ نمبر یا موبائل نمبر میں سے کسی ایک آپشن کو منتخب کریں۔ ان تین نمبروں کے ذریعے آپ یہ جان سکتے ہیں کہ آپ کے اکاؤنٹ میں رقم آئی ہے یا نہیں۔

      آپ کے منتخب کردہ آپشن کا نمبر درج کریں۔ پھر ڈیٹا حاصل کریں پر کلک کریں۔

      یہاں کلک کرنے کے بعد آپ کو لین دین کی تمام معلومات مل جائیں گی۔ یعنی آپ کے اکاؤنٹ میں قسط کب آئی اور کس بینک اکاؤنٹ میں جمع ہوئی۔

      آپ کو اپنی قسط سے متعلق تمام معلومات یہاں مل جائیں گی۔

      - اگر آپ دیکھتے ہیں کہ FTO تیار ہوا ہے اور ادائیگی کی تصدیق باقی ہے تو اس کا مطلب ہے کہ آپ کی رقم پر کارروائی ہو رہی ہے۔
      Published by:Shaik Khaleel Farhaad
      First published: