ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

غیرضروری بیان بازی سے گریزکریں وزراء،سابق وزراءکےتجربات سےلیں سبق،کونسل میٹنگ سے پی ایم مودی کاخطاب

وزرا کی کونسل کے اجلاس میں وزیر اعظم نریندر مودی نے کہا کہ غیر ضروری بیان بازی سے گریز کرنا چاہیے۔کسی بھی موقع پر غیرضروری بات کرنے کی ضرورت نہیں ہے۔ وزرا کی کونسل کے اجلاس میں ، وزیر اعظم نے نئے وزراءکو یہ بھی بتایا ہے کہ آپ کابینہ چھوڑنے والوں کے تجربات سے سبق لیں۔ یہ آپ کے کام آئے گا۔ بعض اوقات سسٹم کی وجہ سے فیصلے کرنے پڑتے ہیں۔

  • Share this:
غیرضروری بیان بازی سے گریزکریں وزراء،سابق وزراءکےتجربات سےلیں سبق،کونسل میٹنگ سے پی ایم مودی کاخطاب
وزیراعظم نریندرمودی کی فائل فوٹو

وزیر اعظم نریندر مودی نے بدھ کے روز کابینہ میں توسیع اور تشکیل نو کے بعد نئی کونسل کی ویڈیو کانفرنسنگ کے ذریعے ہوئی میٹنگ کی صدارت کی اور وزراء کو گڈ گورننس کے گر بتائے وزرا کی کونسل کے اجلاس میں وزیر اعظم نریندر مودی نے کہا کہ غیر ضروری بیان بازی سے گریز کرنا چاہیے۔کسی بھی موقع پر غیرضروری بات کرنے کی ضرورت نہیں ہے۔ وزرا کی کونسل کے اجلاس میں ، وزیر اعظم نے نئے وزراءکو یہ بھی بتایا ہے کہ آپ کابینہ چھوڑنے والوں کے تجربات سے سبق لیں۔ یہ آپ کے کام آئے گا۔ بعض اوقات سسٹم کی وجہ سے فیصلے کرنے پڑتے ہیں۔


ذرائع کا کہناہے کہ وزیر اعظم نے وزرا کی میٹنگ میں جاوڈیکر ، روی شنکر اور کسی اور ہٹائے گئے وزیر کا ذکر نہیں کیا۔ انہوں نے کہا کہ صرف اپنی وزارت سے متعلق مسئلے کے بارے میں بات کریں۔ اپنی وزارت پر توجہ دیں اور سرکاری اسکیمیں زمین پر لیے جائیں۔ حکومت اور وزارت کے کام کو سوشل میڈیا پر بہتر انداز میں فروغ دیں۔ وزیر اعظم مودی نے کہا ہے کہ اپنے محکمہ کا مطالعہ کریں ، سینئر وزراء کے تجربات سے فائدہ اٹھائیں۔



اس سے پہلے انہوں نے مرکزی کابینہ کی میٹنگ کی صدارت کی ، جس میں کورونا وباسے نمٹنے کے لئے طبی شعبے میں بنیادی ڈھانچے کی سہولیات کے پیکیج اور زرعی شعبے میں بھی بہت سے اہم فیصلے کیے گئے تھے۔ وزیر اعظم کی نئے وزرا کے ساتھ دودن میں یہ دوسری میٹنگ ہے ۔ بدھ کو کابینہ میں توسیع سے پہلے بھی انہوں نے نئے وزرا ء کے ساتھ میٹنگ کی ۔

ذرائع کے مطابق وزیر اعظم نے وزراء کونسل میں توسیع اورتشکیل نو کے بعد پہلی میٹنگ میں تمام وزرا سے اپنی اپنی وزارتوں کے کام کو سمجھنے اور ان کی باریکیوں کو سمجھنے کے لئے کہا جس سے کام کاج سہل طریقے سے کیا جا سکے ۔ انہوں نے تمام وزراء سے ان کی وزارتوں سے متعلق اسکیموں کے بارے میں تجاویز طلب کیں۔وزراء کی باتوں کو غور سے سننے کے بعد انہوں نے سبھی کو سرکار کی اسکیموں کوزمینی سطح تک لوگوں کے درمیان لے جانے اور ان کا فائدہ پہنچانے کےلئے کام کرنے کو کہا ۔ انہوں نے سب کے ساتھ گڈ گورننس کے گر شیئر کیے جس سے حکومت کے تیئں لوگوں کا اعتماد قائم کیا جا سکے ۔


نئے پیکیج سےکورونا کے خلاف لڑائی میں نئی مضبوطی آئے گی: مودی
وزیر اعظم نریندر مودی نے مرکزی کابینہ کی میٹنگ میں کورونا سے متعلق 23 ہزار کروڑ روپے کے پیکیج پر مسرت کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ وباء کے خلاف ملک کی لڑائی کو نئی طاقت ملے گی ۔ مسٹر مودی نےجمعرات کے روز کابینہ کی میٹنگ کے بعد ٹویٹ کر کے کہا ’’ کورونا کے خلاف لڑائی کو مزید مضبوط بنانے کے لئے 23 ہزار کروڑ روپے سے زائد کے ایک نئے پیکیج کی منظوری دی گئی۔ اس کے تحت ملک کے سبھی اضلاع میں پیڈیاٹرک کیئر یونٹوں سے لے کر آئی سی یو بیڈ ، آکسیجن اسٹوریج ، ایمبولینس اور ادویات جیسی ضروری انتظامات کئے جائیں گے‘‘۔


زراعت اورکسانوں کی فلاح و بہبود سے متعلق کابینہ کے اجلاس میں کیے گئے فیصلے پرانہوں نے کہا ’’ آج کابینہ کے اجلاس میں زراعت اور کسانوں کی فلاح و بہبود سے متعلق اہم فیصلے لئے گئے ہیں ۔ منڈیوں کو بااختیار بنانے کے لئے زرعی انفراسٹرکچر فنڈ کے استعمال کے ساتھ ساتھ قرضوں پرسود میں ریاعت کا التزام کیا گیا ہے

ہندستانی مسابقتی کمیشن کے جاپان کے ساتھ معاہدہ کو کابینہ کی منظوری

وزیراعظم نریندر مودی کی صدارت میں آج یہاں ہوئی مرکزی کابینہ کی میٹنگ میں مسابقتی قانون اور پالیسی کے معاملے میں آپسی تعاون کو فروغ دینے اور اسے مضبوطی فراہم کرنے کے لئے کمپٹیشن کمیشن آف انڈیا (سی سی آئی) اور جاپان فیئر ٹریڈ کمیشن (جے ایف ٹی سی) کے مابین تعاون یادداشت (ایم او سی) کو منظوری دے دی گئی۔اس معاہدسے ضروری اطلاعات کے تبادلہ کے ذریعہ سی سی آئی کو جاپانی ہم منصب مسابقتی ایجنسی کے تجربات اور سبق سے سیکھنے اور ان کی تقلید میں مدد ملے گی جس سے اس کی کارکردگی میں اضافہ ہوگا۔ ساتھ ہی اس سے سی سی آئی کو کمپٹیشن ایکٹ 2020پر بہتر طریقہ سے عمل کرنے میں مدد ملے گی۔ اس کے نتیجہ میں صارفین کو بڑے پیمانہ پر فائدہ ہوگا اور یکسانیت اور شمولیت کو فروغ ملے گا۔

معاہدہ کے تحت اطلاعات کے تبادلہ کے ساتھ ساتھ تکنیکی تعاون، تجربات شیئر کرنے اور انفورسمنٹ کوآپریشن کے شعبہ میں مختلف صلاحیتوں کی تیاری کی پہلوں کے ذریعہ مسابقتی قانون اور پالیسی کے معاملے میں باہمی تعاون فروغ دینے او ر مضبوطی فراہم کرنے کا تصور کیا جائے گا۔کمپٹیشن ایکٹ 2020کی دفعہ 18کے تحت سی سی آئی کو ایکٹ کے تحت اپنے فرائض کی ادائیگی کرنے یا اپنے کاموں کو کامیابی کے ساتھ مکمل کرنے کے مقصد سے کسی بھی ملک کی کسی بھی ایجنسی کے ساتھ کوئی بھی معاہدہ یا بندوبست کرنے کی اجازت دی گئی ہے

یواین آئی ان پٹ کے ساتھ نیوز18 اردو کی رپورٹ
Published by: Mirzaghani Baig
First published: Jul 09, 2021 06:58 AM IST