உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    وزیرا عظم مودی نے Lok Sabha میں کہا: 'کورونا دور میں کانگریس نے حد کردی، بہت بڑا گناہ کیا'

    PM Modi Speech in Lok Sabha: وزیر اعظم مودی نے کہا کہ اس کورونا کے دور میں کانگریس نے تو حد ہی کر دی۔ پہلی لہر کے دوران جب ملک لاک ڈاؤن پر عمل پیرا تھا، جب ڈبلیو ایچ او دنیا بھر کو مشورہ دیتا تھا، سبھی ہیلتھ ایکسپرٹس کہہ رہے تھے کہ جہاں ہیں ، وہیں رہیں۔ تب کانگریس کے لوگوں کے ذریعہ ممبئی کے ریلوے اسٹیشن پر کھڑے رہ کر ممبئی کے مزدوروں کو جانے کیلئے ان کو ٹکٹ دیا گیا، لوگوں کو جانے کی ترغیب دی گئی ۔

    PM Modi Speech in Lok Sabha: وزیر اعظم مودی نے کہا کہ اس کورونا کے دور میں کانگریس نے تو حد ہی کر دی۔ پہلی لہر کے دوران جب ملک لاک ڈاؤن پر عمل پیرا تھا، جب ڈبلیو ایچ او دنیا بھر کو مشورہ دیتا تھا، سبھی ہیلتھ ایکسپرٹس کہہ رہے تھے کہ جہاں ہیں ، وہیں رہیں۔ تب کانگریس کے لوگوں کے ذریعہ ممبئی کے ریلوے اسٹیشن پر کھڑے رہ کر ممبئی کے مزدوروں کو جانے کیلئے ان کو ٹکٹ دیا گیا، لوگوں کو جانے کی ترغیب دی گئی ۔

    PM Modi Speech in Lok Sabha: وزیر اعظم مودی نے کہا کہ اس کورونا کے دور میں کانگریس نے تو حد ہی کر دی۔ پہلی لہر کے دوران جب ملک لاک ڈاؤن پر عمل پیرا تھا، جب ڈبلیو ایچ او دنیا بھر کو مشورہ دیتا تھا، سبھی ہیلتھ ایکسپرٹس کہہ رہے تھے کہ جہاں ہیں ، وہیں رہیں۔ تب کانگریس کے لوگوں کے ذریعہ ممبئی کے ریلوے اسٹیشن پر کھڑے رہ کر ممبئی کے مزدوروں کو جانے کیلئے ان کو ٹکٹ دیا گیا، لوگوں کو جانے کی ترغیب دی گئی ۔

    • Share this:
      نئی دہلی : وزیر اعظم نریندر مودی نے پیر کو لوک سبھا میں صدرجمہوریہ کے خطاب پر شکریہ کی تحریک پر بحث کا جواب دیا۔ وزیر اعظم مودی نے ایوان میں اپنی تقریر کے دوران کانگریس پر جم کر نشانہ سادھا ۔ انہوں نے کہا کہ انگریز چلے گئے لیکن کانگریس تقسیم کرو اور راج کرو کی پالیسی نہیں چھوڑ رہی ہے۔ تقسیم کی پالیسی اس کے ڈی این اے میں داخل گئی ہے۔ اس لئے کانگریس ٹکڑے ٹکڑے گینگ کی لیڈر بن گئی ہے ۔

      وزیر اعظم مودی نے کہا کہ اس کورونا کے دور میں کانگریس نے تو حد ہی کر دی۔ پہلی لہر کے دوران جب ملک لاک ڈاؤن پر عمل پیرا تھا، جب ڈبلیو ایچ او دنیا بھر کو مشورہ دیتا تھا، سبھی ہیلتھ ایکسپرٹس کہہ رہے تھے کہ جہاں ہیں ، وہیں رہیں۔ تب کانگریس کے لوگوں کے ذریعہ ممبئی کے ریلوے اسٹیشن پر کھڑے رہ کر ممبئی کے مزدوروں کو جانے کیلئے ان کو ٹکٹ دیا گیا، لوگوں کو جانے کی ترغیب دی گئی ۔


      ہم سب ثقافت سے ، رویہ سے جمہوریت کیلئے پابند عہد ہیں اور آج سے نہیں صدیوں سے ہیں ۔ یہ بھی صحیح ہے کہ تنقید زندہ جمہوریت کا زیور ہے ، لیکن اندھی مخالفت جمہوریت کی توہین ہے ۔ انہوں نے کہا کہ کبھی کبھی مجھے خیال آتا ہے کہ ان کے ( کانگریس لیڈروں) بیانوں سے ، ان کے پروگراموں سے ، جس طرح سے آپ بولتے ہیں ، جس طرح سے آپ معاملات کو جوڑتے ہیں تو ایسا لگتا ہے کہ آپ نے ذہن بنالیا ہے کہ آپ کو 100 سالوں تک اقتدار میں نہیں آنا ہے ۔

      اپنی تقریر کے دوران وزیر اعظم مودی نے یہ بھی کہا کہ میں حیران ہوں کہ اچانک فرض کا معاملہ کانگریس کو چبھنے لگا ۔ آپ لوگ کہتے رہتے ہیں کہ مودی جی ، نہرو جی کا نام نہیں لیتے تو آج میں آپ کی خواہش پوری کر رہا ہوں۔ فرض کے بارے میں پنڈت نہرو جی نے کہا تھا : 'میں آپ سے پھر کہہ رہا ہوں کہ آزاد ہندوستان ہے، آزاد ہندوستان کی سالگرہ ہم مناتے ہیں، لیکن آزادی کے ساتھ ذمہ داری ہوتی ہے۔ ذمہ داری صرف حکومت کی نہیں بلکہ ہر ایک آزاد شخص کی ہوتی ہے۔ اگر آپ اس ذمہ داری کو نہیں سمجھتے تو آپ پوری طرح سے آزادی کا مطلب نہیں سمجھے ۔

      وزیرا عظم مودی نے کہا کہ یہ ملک کی بڑی بدقسمتی ہے کہ ایوان جیسا مقدس مقام جو ملک کیلئے کام آنا چاہئے ، لیکن اس کو پارٹی کیلئے کام میں لینے کی کوشش ہورہی ہے۔ بدقسمتی سے آپ میں سے بہت سے لوگ ایسے ہیں جن کا کانٹا 2014 میں اٹکا ہوا ہے اور وہ اس سے باہر نہیں نکل پار رہے ہیں ۔ اس کا خمیازہ بھی آپ کو بھگتنا پڑا ہے ۔ ملک کے لوگ آپ کو پہچان گئے ہیں، کچھ لوگ پہلے پہچان گئے ، کچھ لوگ اب پہچان رہے ہیں اور کچھ لوگ آنے والے وقت میں پہچاننے والے ہیں ۔
      Published by:Imtiyaz Saqibe
      First published: