وزیر اعظم مودی بولے۔ اب جموں وکشمیر کے لوگوں کو ملے گا روزگار

قوم کے نام اپنے خطاب میں وزیر اعظم مودی جموں وکشمیر کو خصوصی درجہ دینے سے متعلق آرٹیکل 370 کے التزامات کو منسوخ کرنے اور ریاست کو مرکز کے زیر اقتدار دو ریاستوں میں بانٹنے کے فیصلہ کے بارے میں جانکاری دے رہے ہیں۔

Aug 08, 2019 08:08 PM IST | Updated on: Aug 08, 2019 09:15 PM IST
وزیر اعظم مودی بولے۔ اب جموں وکشمیر کے لوگوں کو ملے گا روزگار

آرٹیکل 370 اور آرٹیکل 35 اے کو ہٹائے جانے کے بعد وزیر اعظم نریندر مودی نے جمعرات کی رات قوم سے خطاب کیا۔

جموں وکشمیر کو خصوصی درجہ دینے سے متعلق آرٹیکل 370 اور آرٹیکل 35 اے کو ہٹائے جانے کے بعد وزیر اعظم  نریندر مودی نے جمعرات کی رات قوم سے خطاب کیا۔ قوم کے نام اپنے خطاب میں وزیر اعظم مودی نے جموں وکشمیر کو خصوصی درجہ دینے سے متعلق آرٹیکل 370 کے التزامات کو منسوخ کرنے اور ریاست کو مرکز کے زیر انتظام دو ریاستوں میں بانٹنے کے فیصلہ کے بارے میں جانکاری دی۔

وزیر اعظم مودی نے کہا کہ ملک اور ایک کنبہ کے طور پر ہم نے تاریخی فیصلہ لیا ہے۔ سردار پٹیل نے جو خواب دیکھا تھا اسے پورا کیا گیا۔ آرٹیکل 370 کو ہٹانے کی کیوں ضرورت تھی، اپنے بیان میں وزیر اعظم نے اس کا ذکر کیا۔

Loading...

قوم سے خطاب کرتے ہوئے وزیر اعظم مودی نے کہا کہ اب ملک بھر کے تمام شہریوں کے حقوق برابر ہیں اور ان کے فرائض بھی یکساں ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اب جموں و کشمیر کے عوام کو بھی تمام حقوق فراہم ہوں گے۔ وزیر اعظم نے کہا کہ ملک نے ایک تاریخی فیصلہ لیا ہے جس کی وجہ سے جموں و کشمیر اور لداخ کے بھائیوں اور بہنوں کو فائدہ ملے گا۔ انہوں نے کہا کہ ترقی میں جو رکاوٹ تھی وہ ہم سب کی کوششوں سے اب دور ہو گئی ہے۔

وزیر اعظم نے کہا کہ مجھے پورا یقین ہے کہ جموں وکشمیر کے عوام اچھی حکمرانی اور شفافیت کے ماحول میں نئے جوش وجذبے کے ساتھ اپنے اہداف کو حاصل کریں گے۔ وزیر اعظم نے کہا کہ دہائیوں کی کنبہ پروری نے جموں وکشمیر کے نوجوانوں کو قیادت کا موقع ہی نہیں دیا۔ اب میرے نوجوان جموں وکشمیر کی ترقی کی قیادت کریں گے اور اسے نئی اونچائی پر لے جائیں گے۔ میں نوجوانوں، وہاں کی بہنوں اور بیٹیوں سے اپیل کروں گا کہ وہ اپنے علاقہ کی ترقی کی کمان خود سنبھالیں۔

وزیراعظم نریندر مودی نے کہا کہ جموں وکشمیر کو خصوصی ریاست کا درجہ والے آرٹیکل 370 ختم کرکے ریاست کی دو مرکز کے زیرانتظام ریاستوں میں تقسیم کے بعد کچھ وقت تک وہاں راست مرکزکی حکومت ہوگی۔ مودی نے جمعرات کی رات قوم کے نام اپنے خطاب میں کہا کہ جموں وکشمیر میں صدر راج کے بعد ریاست میں ترقیاتی کاموں میں تیزی آئی ہے اور بدعنوانی پر لگام لگی ہے۔ صدر راج کے دوران ریاست میں امن اور ترقی ہوئی ہے اس لئے کچھ وقت تک مرکز کی راست طورپر وہاں حکومت ہوگی۔ انہوں نے کہا کہ لداخ تو مرکز کے زیرانتظام علاقہ رہے گا لیکن جموں وکشمیر میں یہ نظام نہیں رہے گا اور اسے مکمل ریاست کا درجہ دیا جائے گا۔ انہوں نے وہاں کے نوجوانوں سے اپیل کی کہ انہیں کسی طرح سے گھبرانے کی ضرورت نہیں ہے ان کے درمیان سے اراکین اسمبلی منتخب ہوں گے اور آپ کی اپنی اسمبلی ہوگی۔

مودی نے کہا کہ آرٹیکل 370کی وجہ سے لوگوں کا کتنا نقصان ہوتا تھا، اس پر کہیں بات نہیں ہوتی تھی۔ اس کی وجہ سے دہشت گردی، علاحدگی پسندی اور کنبہ پروری پنپ رہی تھی اور پورا نظام بدعنوانی کی زد میں تھا۔ اس آرٹیکل کی وجہ سے پاکستان لوگوں کے جذبات بھڑکا رہا تھا اور اس آرٹیکل کا استعمال اپنا مقصد پورا کرنے کے لئے ہتھیار کے طورپر ہورہا تھا۔

انہوں نے کہا کہ حکومت نے جو قدم اٹھائے ہیں ان کی وجہ سے وہاں کی صورتحال میں بہتری آئے گی۔ لداخ میں ترقی کو نئی رفتار ملے گی۔ لداخ کی چوطرفہ ترقی ہوگی۔ پورے جموں وکشمیر اور لداخ علاقہ میں نئے دور کی شروعات ہوگی۔ اس ریاست کو آرٹیکل 370 سے آزاد کرنے کا پورے ملک نے تاریخی فیصلہ کیا ہے۔ دہائیوں کی کنبہ پروری سے جموں وکشمیر کو آزادی ملے گی اور وہاں کے نوجوانوں کو نئے نظام میں قیادت کرنے کا موقع ملے گا۔

وزیراعظم نے کہا کہ کوئی تصور نہیں کرسکتا تھا کہ آرٹیکل 370کی وجہ سے ملک کی پارلیمنٹ میں بننے والے قوانین کو جموں وکشمیر میں نافذ نہیں کیا جاسکتا تھا۔ پارلیمنٹ میں جو قانون پورے ملک کی آبادی کے لئے بنتے تھے ان قوانین کو آرٹیکل کی وجہ سے جموں وکشمیر میں نافذ نہیں کیا جاسکتا تھا۔ جموں وکشمیر کے ڈیڑھ کروڑ لوگ اس قانون سے محروم رہ جاتے تھے۔

مودی نے کہا کہ آرٹیکل 370گزشتہ دنوں کی بات ہوگئی ہے۔ یہ تاریخ کی بات ہوگئی ہے۔ اس کی وجہ سے وہاں کے لوگوں کو ملک کی حکومت کے ذریعہ اٹھائے گئے اقدامات کا فائدہ نہیں مل رہا تھا۔ انہوں نے کہا کہ یہ آرٹیکل ہٹا دیا گیا ہے اور انہیں اب امید ہے کہ جموں و کشمیر اور لداخ جلد ہی اس آرٹیکل کے منفی اثرات سے باہر نکلیں گے۔

انہوں نے کہا کہ نئے نظام سے ملک کے عوام کو جو بھی فائدہ مل رہا ہے، جموں وکشمیر کے لوگوں کو بھی اب وہی فوائد ملنے شروع ہوجائیں گے۔ جلد ہی وہاں کے لوگوں کے لئے روزگار کے نئے مواقع پیدا ہوں گے۔ جموں وکشمیر اور لداخ کے نوجوانوں کو روزگار فراہم کرنے کے لئے خصوصی مہم کے تحت فوج اور نیم فوجی دستوں اور پولیس میں بھرتی کی جائے گی۔ بھرتی میلہ کا انعقاد ہوگا اور وہاں کے نوجوان ان میں شامل ہوکر روزگار کے مواقع حاصل کریں گے۔

یو این آئی، اردو کے ان پٹ کے ساتھ

Loading...