ایک ملک ایک انتخاب معاملے میں کمیٹی تشکیل دی جائے گی، طے وقت پرسونپے گی رپورٹ

یہ فیصلہ وزیراعظم نریندرمودی کی صدارت میں آج یہاں ہونے والے مختلف سیاسی جماعتوں کے سربراہان کے اجلاس میں کیا گیا۔

Jun 20, 2019 12:12 AM IST | Updated on: Jun 20, 2019 12:13 AM IST
ایک ملک ایک انتخاب معاملے میں کمیٹی تشکیل دی جائے گی، طے وقت پرسونپے گی رپورٹ

نئی دہلی:  لوک سبھا اور اسمبلیوں کے انتخابات ایک ساتھ کرنے کے موضوع پرتفصیلی مطالعہ کے لئے وزیر اعظم نریندر مودی ایک کمیٹی قائم کریں گے۔  یہ فیصلہ وزیراعظم نریندرمودی کی صدارت میں آج یہاں ہونے والے مختلف سیاسی جماعتوں کے سربراہان کے اجلاس میں کیا گیا۔ وزیر دفاع راج ناتھ سنگھ نے تقریبا چارگھنٹے چلنے والی میٹنگ کے بعد نامہ نگاروں کو بتایا کہ اس میں زیادہ ترجماعتوں نے ملک میں تمام انتخابات ایک ساتھ کرنے کے معاملے کی حمایت کی۔ صرف مارکسی کمیونسٹ پارٹی اور کمیونسٹ پارٹی نے یہ سوال اٹھایا ہے کہ یہ کس طرح کریں گے اوراس کا طریقہ کیا ہوگا؟۔  ویسے ان دونوں جماعتوں نے بھی اس مسئلے کی مخالفت نہیں کی۔

راجناتھ سنگھ نے کہا کہ یہ کمیٹی مقررہ وقت میں اپنی رپورٹ دے گی اوراس کی بنیاد پر آگے قدم اٹھایا جائے گا۔ ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ یہ ملی جلی کمیٹی ہوگی۔ حکومت نے پارلیمنٹ میں نمائندگی کرنے والی 40 جماعتوں کے سربراہان کو اجلاس کے لئے مدعو کیا تھا، جن میں سے 21 نے میٹنگ میں حصہ لیا اور تین جماعتوں نے اپنی رائے تحریری طورپربھیجی ہے۔

Loading...

اہم اپوزیشن پارٹی کانگریس، ترنمول کانگریس، ڈی ایم کے، سماج وادی پارٹی، بہوجن سماج پارٹی، عام آدمی پارٹی، جھارکھنڈ مکتی مورچہ، تلگودیشم پارٹی، راشٹریہ جنتا دل اور جنتا دل ایس اجلاس میں حصہ نہیں لینے والی پارٹیوں میں شامل ہیں۔ اس کےعلاوہ قومی جمہوری اتحاد کی اتحادی پارٹی شیو سینا اورانادرمک نے بھی اس میں حصہ نہیں لیا۔

یہ اجلاس وزیراعظم نےایک ملک ایک انتخاب، پارلیمنٹ کے دونوں ایوانوں میں زیادہ سے زیادہ کام کاج کئے جانے، آزادی کے 75 ویں سال میں نئے بھارت کی تعمیر، بابائے قوم مہاتما گاندھی کے150 ویں یوم پیدائش سے متعلق تقریبات اور اہم متوقع ترقیاتی اضلاع کے مسائل پر بات چیت کے لئے بلایا تھا۔

Loading...