உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    EXCLUSIVE: آئی آئی ٹی کانپور کے AI الگورتھم کے ذریعے ہوگی پی ایم او عوامی شکایت پورٹل کی مدد، جانیے تفصیلات

    پی ایم او کو ان موضوعات سے متعلق بڑی تعداد میں عوامی شکایات موصول ہوتی ہیں

    پی ایم او کو ان موضوعات سے متعلق بڑی تعداد میں عوامی شکایات موصول ہوتی ہیں

    آئی آئی ٹی کانپور میں ریاضیات کی فیکلٹی نے ایک الگورتھم تیار کیا ہے جو مرکز کو شکایات کے مختلف زمروں کی نشاندہی کرنے میں مدد کرے گا، جیسے کہ وہ مقام جہاں سے کسی خاص زمرے میں زیادہ تر شکایات وصول ہوتی ہیں اور اس کا ’ون شاٹ سمارٹ تجزیہ‘ بھی کیا جائے گا۔

    • Share this:
      وزیراعظم کے دفتر Prime Minister’s Office کو ہر سال ملک بھر سے موصول ہونے والی لاکھوں عوامی شکایات سے نمٹنے میں اب آئی آئی ٹی کانپور IIT-Kanpur مدد کرے گا۔ نیوز 18 کو ذرائع سے پتہ چلا ہے کہ آئی آئی ٹی کانپور ان شکایات کے اسمارٹ تجزیہ کے لیے مصنوعی ذہانت artificial intelligence سے چلنے والے الگورتھم کے ساتھ پی ایم او کی مدد کرے گا۔

      یہ بات قابل ذکر ہے کہ پی ایم او کو ان موضوعات سے متعلق بڑی تعداد میں عوامی شکایات موصول ہوتی ہیں جو مختلف وزارتوں، محکموں یا ریاستوں کے دائرہ کار میں آتے ہیں۔ مرکز کو موصول ہونے والی تمام شکایات (30 لاکھ سالانہ) میں سے تقریباً 80 فیصد پی ایم او چینل کے ذریعے ہوتی ہیں اور پھر ان کو متعلقہ وزارتوں یا ریاستوں کو بھیج دیا جاتا ہے۔

      آئی آئی ٹی کانپور میں ریاضیات کی فیکلٹی نے ایک الگورتھم تیار کیا ہے جو مرکز کو شکایات کے مختلف زمروں کی نشاندہی کرنے میں مدد کرے گا، جیسے کہ وہ مقام جہاں سے کسی خاص زمرے میں زیادہ تر شکایات وصول ہوتی ہیں اور اس کا ’ون شاٹ سمارٹ تجزیہ‘ بھی کیا جائے گا۔

      انسٹی ٹیوٹ پہلے ہی یہ کام محکمہ دفاع کے لیے کر رہا تھا اور اس نے اسی فعالیت کو PMO کے عوامی شکایات کے پورٹل تک بڑھا دیا ہے۔ ایک سینئر سرکاری اہلکار نے نیوز 18 کو بتایا کہ ’’اس سے قبل ان شکایات کی طرف زیادہ توجہ اور تجزیاتی نقطہ نظر کی ضرورت تھی، جیسے ہر شکایت کی نوعیت اور اس کے مقام کی نشاندہی کرنے کا کام ضروری ہے۔ اسی لیے آئی آئی ٹی-کانپور کے ذریعہ اے آئی الگورتھم کے ساتھ ایک ڈیش بورڈ بنایا گیا ہے‘‘۔

      آئی آئی ٹی کانپور میں ریاضیات کی فیکلٹی نے ایک الگورتھم تیار کیا ہے
      آئی آئی ٹی کانپور میں ریاضیات کی فیکلٹی نے ایک الگورتھم تیار کیا ہے


      انہوں نے کہا کہ وزیر اعظم نریندر مودی نے ماہانہ پرگتی (پرو ایکٹو گورننس اور بروقت نفاذ) میٹنگ میں عوامی شکایات کا قریب سے جائزہ لیا اور وہ چاہتے ہیں کہ ایسی شکایات کے پیچھے بنیادی مسائل کی نشاندہی کی جائے۔

      دیہی علاقوں تک پہنچ:

      مرکزی حکومت اس بات کو بھی یقینی بنانا چاہتی ہے کہ دیہی علاقوں کے لوگ بھی پی ایم او کے پاس آن لائن شکایات درج کر سکیں، جس کے لیے مرکز نے گزشتہ ماہ کامن سروس سینٹرز (CSC) کے ساتھ ایک معاہدہ کیا تھا، تاکہ سنٹرلائزڈ عوامی شکایات کے ازالے اور نگرانی کی رسائی کو بڑھایا جا سکے۔ جسے مرکزی عوامی شکایات کے ازالے اور نگرانی کا نظام یا CPGRAMS کا نام دیا گیا ہے۔

      وہ دیہی علاقوں کے رہائشیوں کو آن لائن شکایات کے اندراج کے لیے CSCs کے پاس جانے کے قابل بنائے گا۔ نیز مرکز نے CPGRAMS کے لیے علاقائی زبان کا انٹرفیس تیار کرنے کے لیے سنٹر فار ڈیولپمنٹ آف ایڈوانسڈ کمپیوٹنگ کے ساتھ شراکت داری کی ہے تاکہ اسے لسانی اعتبار سے شامل کیا جا سکے۔ نیوز 18 کو معلوم ہوا ہے کہ اس مشق کے پہلے مرحلے کے لیے گجراتی، مراٹھی اور بنگلہ کو منتخب کیا گیا ہے۔ مرکز کو گزشتہ سال تقریباً 22 لاکھ شکایات موصول ہوئیں، جو مرکزی وزارتوں سے متعلق اور تقریباً آٹھ لاکھ ریاستوں سے متعلق تھیں۔ سنہ 2013 میں تین لاکھ شکایات کے بعد یہ تعداد ہر سال بڑھ رہی ہے۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: