ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

جامعہ ملیہ اسلامیہ :جے شری رام اور کون چاہتاہے آزادی کہتے ہوئے حملہ آور نے کیوں کی فائرنگ؟

پولیس کا کہناہے کہ حملہ آور نے چیخ چیخ کر کہا ، " جے شری رام کہتے ہوئے کہا کون آزادی چاہتا ہے؟ ، آؤ میں تمہیں گولی مار دوں گا اور پھر مظاہرین پر فائرنگ کردی ،اس واقعہ کے بعد جامعہ ملیہ اسلامیہ کے طلبا نے برہمی کا اظہار کیا۔

  • Share this:

جامعہ ملیہ اسلامیہ کے قریب شہریت ترمیمی مارچ کے خلاف احتجاجی مارچ پر ایک شخص نے فائرنگ کردی ہے۔ پولیس نے اس شخص کی شناخت کرلی ہے ۔ پولیس کا کہناہے کہ حملہ آور نے چیخ چیخ کر کہا ، " جے شری رام کہتے ہوئے کہا کون آزادی چاہتا ہے؟ ، آؤ میں تمہیں گولی مار دوں گا اور پھر مظاہرین پر فائرنگ کردی ،اس واقعہ کے بعد جامعہ ملیہ اسلامیہ کے طلبا نے برہمی کا اظہار کیا۔


نیوز18 سے بات چیت کرتے ہوئے طلبا نے اس واقعہ کے لیے پولیس کو ذمہ دار ٹہرایاہے۔ طلبا کا کہناہے کہ بی جے پی کے لیڈر انوراگ ٹھاکر نے 2دن پہلے ایک انتخابی جلسہ میں خطاب کرتے ہوئے ’’ دیش کے غداروں کو گولی مارنے کا نعرہ لگایاتھا۔ جامعہ ملیہ اسلامیہ کے طلبہ کا کہناہے کہ بی جے پی کے لیڈر وں کی جانب سے بعض لوگوں کو گولی مارنے کے لیے اکسایا جارہاہے۔انوراگ اور پرویش کو بی جے پی ا سٹار پرچارک کی فہرست سے باہر نکالنے کا حکم


طلبا نے کہا کہ ہندوستان میں یہ پہلا واقعہ ہے کہ احتجاجیوں پر گولی چلائی گئی ہے۔ احتجاجی طلبا کا کہناہے کہ بی جے پی کے لیڈر جامعہ ملیہ کے طلبا کو ملک کا دشمن سمجھ رہے ۔ طلبا نے ملک بھر میں شہریت ترمیمی قانون کے خلاف احتجاج کرنے والے احتجاجیوں سے اپیل کی ہے کہ وہ خود اپنی حفاظت کو یقینی بنائیں ۔احتجاجی طلبا نے اس واقعہ کی اعلیٰ سطحیٰ جانچ کروانے کا مطالبہ کیاہے۔

First published: Jan 30, 2020 03:04 PM IST