اپنا ضلع منتخب کریں۔

    سیکس ریکیٹ کی شکایت پر پہنچی پولیس ، صرف خواتین ملیں تو اس جرم میں بھیج دیا جیل

    پولیس نے جیسے ہی ان سے پوچھ گچھ کی تو سچائی سامنے آگئی ۔ پولیس نے ان کے پاس سے گیارہ موبائل فون اور کئی قابل اعتراض چیزیں برآمد کیں ۔ پولیس نے سارے ثبوت ملنے کے بعد چاروں لڑکیوں سمیت سبھی چھ لوگوں کو گرفتار کرلیا ۔ (علامتی تصویر)

    پولیس نے جیسے ہی ان سے پوچھ گچھ کی تو سچائی سامنے آگئی ۔ پولیس نے ان کے پاس سے گیارہ موبائل فون اور کئی قابل اعتراض چیزیں برآمد کیں ۔ پولیس نے سارے ثبوت ملنے کے بعد چاروں لڑکیوں سمیت سبھی چھ لوگوں کو گرفتار کرلیا ۔ (علامتی تصویر)

    چھتیس گڑھ ( Chhattisgarh ) کے مہاسمند ( Mahasamund ) ضلع کے تمگاوں میں پولیس کو سیکس ریکیٹ چلنے کی شکایت ملی تھی ۔

    • Share this:
    چھتیس گڑھ ( Chhattisgarh ) کے مہاسمند ( Mahasamund ) ضلع کے تمگاوں میں پولیس کو سیکس ریکیٹ ( Sex Racket ) چلنے کی شکایت ملی تھی ، جس کے بعد پولیس نے تمگاوں تھانہ حلقہ کے بنگلا پارہ سے پانچ خواتین کو گرفتار کیا ہے ۔ پانچ خواتین میں ایک مہاسمند ، تین رائے پور اور ایک کولکاتہ کی رہنے والی بتائی جارہی ہیں ۔ حالانکہ پولیس کو وہاں سے سیکس ریکیٹ سے وابستہ کوئی ثبوت نہیں ملا ، لیکن شکایت کی بنیاد پر دفعہ 151 کے تحت انہیں گرفتار کرکے عدالت میں پیش کیا گیا ، جہاں سے انہیں جیل بھیج دیا گیا ۔

    مہاسمند پولیس سے موصولہ اطلاعات کے مطابق تمگاوں تھانہ حلقہ کے باشندے گزشتہ دو دنوں سے سیکس ریکیٹ کی شکایت کررہے تھے ، جس کے بعد بدھ کو پولیس نے چھاپہ ماری کی کارروائی انجام دی ۔ جیل بھیجی گئیں پانچوں خواتین اس سے پہلے بھی جسم فروشی کے دھندہ میں گرفتار ہوچکی ہیں ۔ چھاپہ ماری کے دوران صرف پانچ خواتین ہی پکڑی گئیں ۔ لہذا پولیس نے 151 کے تحت معاملہ درج کرکے کارروائی کی ۔

    علامتی تصویر

    پہلے بھی ہوچکی ہے شکایت

    بتایا جارہا ہے کہ مہاسمند کے تمگاوں تھانہ حلقہ کا یہ علاقہ سالوں سے اس طرح کے غلط کاموں کیلئے جانا جاتا ہے ۔ کئی مرتبہ اس کو لے کر شکایتیں بھی جاچکی ہیں ۔ شکایتوں کے باوجود اس پر پوری طرح سے لگام نہیں لگایا جاسکا ہے ۔ تمگاوں تھانہ انچارج پردیپ منج نے بتایا کہ مہاسمند اور تمگاوں میں پیٹا ایکٹ نافذ ہے ، جس کے تحت ابھی تک 28 افراد کے خلاف کارروائی کی جاچکی ہے ۔ شکایت پر مستقبل میں بھی کارروائی جاری رہے گی ۔
    First published: