ہوم » نیوز » جموں وکشمیر

جموں وکشمیر: حراست میں رکھے گئےلیڈروں کے پاس سے11موبائل فون برآمد

افسران کا کہنا ہےکہ گرفتارکئےگئے لوگوں کا تعلق دہشت گردوں سے ہوسکتا ہے۔ ان لیڈروں کو گزشتہ ہفتے سینٹورہوٹل سے یہاں لایا گیا ہے کیونکہ کشمیروادی میں سردیاں بڑھنےکے سبب وہاں سہولیات کی کمی ہوگئی تھی۔

  • Share this:
جموں وکشمیر: حراست میں رکھے گئےلیڈروں کے پاس سے11موبائل فون برآمد
جموں وکشمیر میں حراست میں رکھےگئے لیڈروں کے پاس سے11موبائل فون برآمد

سری نگر: سری نگرمیں ایم ایل اے ہاسٹل میں حراست میں رکھے گئے کئی اہم لیڈروں کے پاس سے 11 موبائل فون برآمد کئے گئے ہیں۔ پولیس نےاتوارکو یہ اطلاع دی۔ ایک پولیس افسرنے بتایا کہ جیل ضوابط کے مطابق ہفتہ کی شام تلاشی مہم چلائی گئی۔ دراصل اس بارے میں خفیہ اطلاع ملی تھی کہ ایم ایل اے ہاسٹل میں رکھےگئے لوگ موبائل فون کا استعمال کر رہے ہیں۔ اس ہاسٹل کوذیلی جیل میں تبدیل کردیا گیا ہے۔ افسرنے بتایا 'تلاشی مہم کےدوران ایم ایل اے ہاسٹل سے 11 موبائل فون برآمد کئےگئے ہیں'۔ انہوں نے بتایا کہ اس بارے میں جانچ جاری ہےکہ یہ موبائل فون وہاں کیسے پہنچ گئے۔


پانچ اگست سے حراست میں ہیں لیڈران


جموں وکشمیرکو خصوصی ریاست کا درجہ دینے والےآرٹیکل 370 کے بیشترالتزامات کو ختم کرنےاورریاست کومرکزکے زیرانتظام دوخطوں میں تقسیم کرنےکے 5 اگست کے مرکزی حکومت کے فیصلے کے بعد سے تقریباً تین درج لیڈروں کوحراست میں لیا گیا ہے۔ ان لیڈروں کویہاں ایم اے روڈ کے پاس ایم ایل اے ہاسٹل میں رکھا گیا ہے۔ ان لیڈروں کو گزشتہ ہفتے سینٹورہوٹل سے یہاں لایا گیا ہے کیونکہ کشمیروادی میں سردیاں بڑھنے کے سبب وہاں سہولیات کی کمی ہوگئی تھی۔


دھمکانے والے لوگوں کوکیا گیا گرفتار

وہیں جموں وکشمیرمیں پوسٹرچسپا کرکے مقامی تاجروں کو مبینہ طورپردھمکانے اورکشمیر وادی میں عام حالات کی بحالی میں رکاوٹ ڈالنےکولےکرنامعلوم تعداد میں اشخاص کو گرفتار کیا گیا ہے۔ افسران کا کہنا ہےکہ گرفتارکئےگئے لوگوں کا تعلق دہشت گردوں سےہوسکتا ہے۔ کشمیرکےانسپکٹرجنرل آف پولیس ایس پی پانی نے پی ٹی آئی کوبتایا کہ دوکانداروں کو خوفزدہ کرنے کےلئے پوسٹرچسپا کرنےکے حادثات پرپولیس نے نوٹس لیا ہےاوراس میں شامل اشخاص کے خلاف سخت کارروائی کی جارہی ہے۔
First published: Nov 24, 2019 05:55 PM IST