உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Policy Bazar:پالیسی بازار کے 5.64کروڑ گاہکوں کی نجی و خفیہ جانکاریاں ہوئیں افشاں، سائبرایکس9کادعویٰ

    پالیسی بازار نے جان بوجھ کر چینی حکومت کو دی شہریوں کی نجی معلومات۔

    پالیسی بازار نے جان بوجھ کر چینی حکومت کو دی شہریوں کی نجی معلومات۔

    Policybazaar System: دفاعی ملازمین کے معاملے میں ان کا عہدہ، ان کی تعیناتی کی جگہ، وہ کس کام میں مصروف ہیں... جیسی معلومات بھی لیک ہو گئی ہیں۔

    • Share this:

      نئی دہلی:Policybazaar System: آن لائن انشورنس کمپنی پالیسی بازار کے نظام میں کمزوریوں کی وجہ سے، اس کے تقریباً 56.4 ملین صارفین کی خفیہ اور حساس ذاتی معلومات لیک ہو گئی ہیں۔ سائبر سیکیورٹی ریسرچ کمپنی سائبر ایکس 9 نے بدھ کو اپنی ایک رپورٹ میں دعویٰ کیا ہے کہ ان صارفین میں دفاعی اہلکار بھی شامل ہیں۔


      سائبرایکس 9 نے کہا، "ہمارے تجزیہ کی بنیاد پر، اس بات کا بہت زیادہ اندیشہ ہے کہ پالیسی بازار نے جان بوجھ کر ایسا کیا ہے تاکہ چینی حکومت کو ہندوستانی شہریوں اور خاص طور پر دفاعی اہلکاروں کی حساس معلومات تک رسائی کی اجازت دی جا سکے۔"

      سائبر سیکیورٹی ریسرچ کمپنی نے کہا کہ اس لیک کی اطلاع 18 جولائی کو پالیسی بازار کو دی گئی۔ اس کے بعد، 24 جولائی کو، آن لائن انشورنس بروکر نے اسٹاک ایکسچینج کو بتایا کہ اس نے 19 جولائی کو کچھ خامیاں پائی ہیں، لیکن صارفین کی کوئی اہم معلومات سامنے نہیں آئیں۔

      بیمہ بروکر میں چینی کمپنی کی سرمایہ کاری
      آن لائن بروکر کی بنیادی کمپنی پی بی فن ٹیک شیئر بازاروں میں فہرست میں شامل ہے۔ چین کی کمپنی ٹینسینٹ ہولڈنگس پالیسی بازار کے سرمایہ کاروں میں شامل ہے۔

      الزام
      حساس معلومات کو چین کی حکومت تک پہنچانے کی نیت سے جان بوجھ کر ایسا کیا گیا۔

      یہ بھی پڑھیں:

      Bengal SSC Scam: سی بی آئی نے کی پہلی گرفتاری، دو بڑے افسران حراست میں

      یہ بھی پڑھیں:
      MP Latest : مدرسہ بورڈ میں جن مدارس کے نہیں ہیں رجسٹریشن ان کے خلاف ہوگی کارروائی

      پین، آدھار و پاسپورٹ سمیت یہ جانکاریاں لیک
      خفیہ اور حساس ذاتی معلومات جو لیک کی گئی ہیں ان میں صارفین کا پورا نام، تاریخ پیدائش، مکمل رہائشی پتہ، ای میل آئی ڈی، موبائل نمبر، پالیسی کی تفصیلات، نامزد کی تفصیلات، صارف کے بینک اکاؤنٹ اسٹیٹمنٹس کی کاپیاں، انکم ٹیکس گوشواروں سے منسلک دستاویزات شامل ہیں۔
      اس کے علاوہ پاسپورٹ، آدھار کارڈ اور پین کارڈ وغیرہ کی تفصیلات بھی سامنے آئی ہیں۔
      دفاعی ملازمین کے معاملے میں ان کا عہدہ، ان کی تعیناتی کی جگہ، وہ کس کام میں مصروف ہیں... جیسی معلومات بھی لیک ہو گئی ہیں۔
      Published by:Shaik Khaleel Farhaad
      First published: