ہوم » نیوز » وطن نامہ

یوم دستور: اظہار رائے کی آزادی کا مطلب تشدد کرنا نہیں ہے:صدرجمہوریہ رام ناتھ کووند کا خطاب

صدر جمہوریہ رام ناتھ کووند نے کہا ہے کہ شہریوں کو اظہار رائے کی آزادی کے بنیادی حق سمیت آئین میں تمام ضروری حقوق حاصل ہیں لیکن شہریوں کو اس کی غلط تشریح اور تشدد کرکے عوامی املاک کو نقصان نہیں پہنچانا چاہئے

  • Share this:
یوم دستور: اظہار رائے کی آزادی کا مطلب تشدد کرنا نہیں ہے:صدرجمہوریہ رام ناتھ کووند کا خطاب
صدرجمہوریہ رام ناتھ کووندکاخطاب

صدر جمہوریہ رام ناتھ کووند نے کہا ہے کہ شہریوں کو اظہار رائے کی آزادی کے بنیادی حق سمیت آئین میں تمام ضروری حقوق حاصل ہیں لیکن شہریوں کو اس کی غلط تشریح اور تشدد کرکے عوامی املاک کو نقصان نہیں پہنچانا چاہئے اور تشدد سے دور رہنا چاہئے۔ رام ناتھ کووند نے پارلیمنٹ کے سنٹرل ہال میں آئین کو اپنانے کے 70 برس مکمل ہونے کے موقع پر منعقدہ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہاکہ آئین میں اظہاررائے کی آزادی کے حق کے ساتھ ہی سبھی شہریوں کو عوامی مقامات پر تحفظ برقرار رکھنے اور تشدد سے دور رہنے کی بھی سیکھ دی گئی ہے۔ آزادی کی غلط تشریح کرکےتشدد کرنے اورعوامی املاک کو پہنچنے والے نقصان سے بچنے کی ضرورت ہے۔


رام ناتھ کووند نے کہا کہ جو لوگ عوامی تشدد اور انتشار پھیلاتے ہیں انہیں بھی روکنے کی ضرورت ہے اور ایسا کرنے والے ملک کے ذمہ دار شہری ہوسکتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ضرورت اس بات کی ہے کہ ملک کے تمام شہری اپنے حقوق کی تکمیل کے ساتھ ساتھ اپنے فرائض کو سرانجام دیں تاکہ ملک کے تمام شہریوں کے حقوق کا مکمل تحفظ ہو۔صدرجمہوریہ نے اراکین پارلیمنٹ سے مطالبہ کیا کہ وہ آئین کے ساتھ لگن سے اور اپنے حلف کے مطابق اپنے انتخابی حلقوں اور ملک کے دیگر شہریوں کی خدمت کے لئے تیار رہنے کی اپیل کی اور کہا کہ عوامی خدمت کا موقع ہر کسی کو نصیب نہیں ہوتا اس لئے اس موقع کا پورا فائدہ اٹھاکراپنےعلاقے کے لوگوں کے جذبات کا احترام کریں اور ان کی امیدوں پرکھرااتریں۔ صدر جمہوریہ نے کہا کہ تمام شہریوں کا بنیادی فرض انسانیت کے جذبے کو فروغ دینا اور سب کے لئے حساس ہوکر خدمات انجام دینا ہے۔ اس سلسلے میں ، انہوں نے گجرات کی پدم شری یافتہ مکتابین ڈگلی کی مثال دی جنہوں نے بچپن میں اپنی بینائی کھو نے کے بعد اپنی زندگی میں دوسرے نابینا اور روشنی سے محروم لوگوں کے لئے قابل ذکر کام کیا ہے اور ان کی زندگی میں روشنی لانے کا سبب بنی ہیں۔رام ناتھ کووند نے کہا کہ آئین میں مکمل سماج کی تعمیر کےلئے التزام کئےگئے ہیں اور اس کےلئے آئین میں ترمیم جیسے پرامن طریقےسے انقلابی قدم اٹھانے کے التزام ہیں۔پارلیمنٹ آئینی ترامیم کو پاس کرکے بدلے ہوئے حالات کے مطابق انتظام کو وقت بر وقت ناٖفذ کرتا ہے۔انہوں نے کہا کہ یہ ملک کے سبھی شہریوں کا فرض ہے کہ وہ یہ ضرور دیکھیں کہ وہ جو بھی کام کررہے ہیں وہ آئین کے وقار اور اخلاق کے مطابق ہو۔  




رام ناتھ کووند نے کہا کہ بابائے وقوم مہاتما گاندھی نے بھی فرض اور حقوق کے موضوع پر یہی سیکھ دیتے ہوئے کہا ہے کہ حقوق کے حصول کا ذریعہ فرائض کی ادائیگی ہے۔اس عمل میں اگر ہر شخص اپنے فرائض انجام دیتا ہے تو پھر حقوق کا بآسانی نفاذ بھی کیاجاسکے گا۔اس کا مطلب یہ بھی ہوا کہ اگر فرائض انجام دئے بغیر حقوق کے پیچھے دوڑنا شروع کریں تو یہ لاحاصل ثابت ہوگا،اس لئے حقوق کو پانے سے پہلےسبھی کو اپنے فرائض انجام دینے چاہئے۔انہوں نے کہاکہ خود بابا صاحب امبیڈکر نے آئین میں آئینی اخلاقیت کا ذکر کرتے ہوئے کہا تھا کہ آئین کو سب سے زیادہ احترام دیتے ہوئے خیالات ونظریات کے اختلافات سے اوپراٹھ کر آئینی طریقہ کارپرعمل کرنا ضروری ہے اور یہی آئین اخلاقیت کا نچوڑبھی ہے۔حکومت کے سبھی حصوں اور ملک کے ہرشہری کو اس آئینی اخلاقیت پرعمل کرناچاہئے۔
First published: Nov 26, 2019 02:33 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading