உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Presidential Election 2022: صدارتی انتخابات کی تاریخ کا اعلان، 18 جولائی کو ووٹنگ، 21 کو ووٹوں کی گنتی

    Presidential Election 2022: صدر جمہوریہ کے الیکشن کی تاریخ کا اعلان، 18 جولائی کو ووٹنگ، 21 کو ووٹوں کی گنتی

    Presidential Election 2022: صدر جمہوریہ کے الیکشن کی تاریخ کا اعلان، 18 جولائی کو ووٹنگ، 21 کو ووٹوں کی گنتی

    Presidential Election 2022 : الیکشن کمیشن آف انڈیا نے صدارتی انتخابات کی تاریخ کا اعلان کر دیا ہے۔ الیکشن کمیشن کے مطابق اگلے صدر کے انتخاب کے لیے ووٹنگ 18 جولائی کو ہوگی جبکہ ووٹوں کی گنتی 21 جولائی کو ہوگی۔

    • Share this:
      نئی دہلی: الیکشن کمیشن آف انڈیا نے صدارتی انتخابات کی تاریخ کا اعلان کر دیا ہے۔ الیکشن کمیشن کے مطابق اگلے صدر کے انتخاب کے لیے ووٹنگ 18 جولائی کو ہوگی جبکہ ووٹوں کی گنتی 21 جولائی کو ہوگی۔ موجودہ صدر رام ناتھ کووند کی میعاد 24 جولائی کو ختم ہو رہی ہے۔ الیکشن کمیشن صدارتی انتخاب کے لیے خصوصی سیاہی والا قلم فراہم کرے گا۔ الیکشن کمیشن نے کہا کہ صدارتی انتخاب کے لیے ارکان پارلیمنٹ کو 1،2،3 لکھ کر اپنی پسند بتانی ہوگی ۔

      چیف الیکشن کمشنر راجیو کمار نے پریس کانفرنس میں کہا کہ ہندوستان کے صدر کا عہدہ دنیا کی سب سے بڑی جمہوریت کا عہدہ ہے۔ میں ہندوستان کے 16ویں صدر کے انتخاب کے لیے الیکشن کا اعلان کرتے ہوئے فخر محسوس کر رہا ہوں۔ صدر جمہوریہ کووند کی میعاد 24 جولائی کو ختم ہو رہی ہے، 25 جولائی کو نئے صدر کو حلف اٹھانا ہے ۔

       

      یہ بھی پڑھئے : مزید بڑھیں گی شرح سود! ماہرین نے بتایا-سال کے آخر تک کیا ہوگا ریپو ریٹ


      صدارتی انتخاب کے لیے کاغذات نامزدگی 29 جون تک داخل کئے جائیں گے اور 2 جولائی تک نام واپس لیے جا سکیں گے۔ نامزدگی میں 50 تجویز کنندگان ہونے چاہئیں۔ کاغذات نامزدگی داخل کرنے کا عمل 11 بجے سے 3 بجے تک جاری رہے گا۔ کاغذات نامزدگی کے لیے 15,000 روپے کی رقم جمع کرنی ہوگی۔

       

      یہ بھی پڑھئے : اشتعال انگیز بیان پر دہلی پولیس کا ایکشن، اسدالدین اویسی و نرسمہانند پر بھی FIR درج


      خیال رہے کہ صدارتی الیکشن میں لوک سبھا اور راجیہ سبھا کے تمام ممبران اور سبھی ریاستوں کے ایم ایل ایز اپنا ووٹ ڈالتے ہیں ۔ ان تمام لوگوں کے ووٹوں کی اہمیت یعنی ویلیو الگ الگ ہوتی ہے۔ یہاں تک کہ مختلف ریاستوں کے ایم ایل ایز کے ووٹوں کی ویلیو بھی الگ ہے۔

      وہیں اگر صدارتی انتخاب میں ووٹ ڈالنے والے الیکٹورل کالج میں سیاسی اتحاد کے کی بات کریں تو کانگریس کی قیادت والے یو پی اے اتحاد کے پاس تقریباً 23 فیصد ووٹ ہیں۔ وہیں این ڈی اے اتحاد کے پاس تقریباً 49 فیصد ووٹ ہیں۔
      Published by:Imtiyaz Saqibe
      First published: