உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    4th COVID-19 Wave:کورونا کی چوتھی لہر کے امکانات بہت ہی کم، ملک میں اب کوویڈ وبا مقامی بیماری کی لے رہی ہے شکل

    ملک میں چوتھی لہرکا کتنا ہے اندیشہ؟

    ملک میں چوتھی لہرکا کتنا ہے اندیشہ؟

    4th COVID-19 Wave:جیکب جان نے بڑھتے ہوئے کیسز کے درمیان اسکول بند کرنے کے عمل کو بھی غلط قرار دیا۔ انہوں نے کہا کہ اسکول بند کرنے کی ضرورت نہیں ہے۔ اسکول کھلے رہنے چاہیے۔ اگر کیسز پائے جاتے ہیں تو ان کو کیس کی بنیاد پر نمٹا جانا چاہیے۔ ایک سوال کے جواب میں، انہوں نے نئے ویرینٹ کے ابھرنے کے امکان کو بھی مسترد کر دیا۔

    • Share this:
      4th COVID-19 Wave: ملک کے مشہور وائرولوجسٹ اور ویلور میں کرسچن میڈیکل کالج (سی ایم سی) کے سابق پروفیسر ڈاکٹر ٹی جیکب جان نے منگل کو کہا کہ ملک میں کورونا کی وبا کی چوتھی لہر کا امکان بہت کم ہے۔ جب ان سے پوچھا گیا کہ کچھ ریاستوں میں کورونا کیسز میں اضافے کی خبریں کیوں آرہی ہیں، تو جان نے کہا کہ پچھلے دو سے تین ہفتوں میں دہلی اور ہریانہ میں معاملات میں کچھ اضافہ ہوا ہے، لیکن یہ مسلسل نہیں رہی۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ جہاں تک وہ جانتے ہیں، کسی بھی ریاست میں کورونا کیسز میں اچھال کی اطلاع نہیں ہے۔ مارچ اور اپریل میں کورونا کی صورتحال کمزور رہی اور بہت کم کیسز سامنے آئے۔

      جیکب جان نے کہا کہ ہندوستان میں کورونا کی وبا اب مقامی بیماری کی شکل اختیار کر رہی ہے، یعنی یہ صرف کچھ حصوں تک محدود ہے۔ ایسی صورت حال میں ہمیشہ کیسز میں کمی کی امید نہیں کی جاتی۔ بعض اوقات معاملات بڑھ جاتے ہیں۔ دہلی میں ایک ہزار کیسز ہونے کا مطلب ہے ہر ایک لاکھ پر پانچ کیس۔

      یہ بھی پڑھیں:
      IITمدراس نے کورونا وائرس کا ڈھونڈا سستا علاج، مریضوں پر اثردار ثابت ہوئی یہ دوا

      ماسک کا استعمال بے حد ضروری
      جب ان سے پوچھا گیا کہ کیسز میں اضافے کو روکنے کے لیے کیا کرنا چاہیے تو وائرولوجسٹ نے کہا کہ ماسک پہننا سب سے اہم چیز ہے۔ انہوں نے کہا، 'ماسک نہ پہننا پہلا جرم ہے۔ میں بہت مایوس ہوں کہ ماہرین اور پالیسی ساز لوگوں سے بات کر رہے ہیں لیکن انہیں ماسک پہننے کے فوائد کے بارے میں نہیں بتا رہے ہیں۔

      یہ بھی پڑھیں:
      Covid 19 in India :وزیراعظم نریندر مودی آج وزرائے اعلیٰ کے ساتھ کریں گے میٹنگ

      اسکول بند کرنے کی بھی ضرورت نہیں
      جیکب جان نے بڑھتے ہوئے کیسز کے درمیان اسکول بند کرنے کے عمل کو بھی غلط قرار دیا۔ انہوں نے کہا کہ اسکول بند کرنے کی ضرورت نہیں ہے۔ اسکول کھلے رہنے چاہیے۔ اگر کیسز پائے جاتے ہیں تو ان کو کیس کی بنیاد پر نمٹا جانا چاہیے۔ ایک سوال کے جواب میں، انہوں نے نئے ویرینٹ کے ابھرنے کے امکان کو بھی مسترد کر دیا۔
      Published by:Shaik Khaleel Farhaad
      First published: