ہوم » نیوز » وسطی ہندوستان

مدھیہ پردیش: گستاخانہ خاکوں کے خلاف عوام میں سخت ناراضگی، فرانس کا پرچم جلا کر بھوپال میں کیا گیا احتجاج

فرانس کے صدرکی جانب سے گستاخانہ خاکوں کی عمومی اشاعت اور ناپاک حرکت کے خلاف بھوپال میں یوں تو کئی روز سے احتجاج کا سلسلہ جاری ہے، مگر بھوپال ایم ایل اے عارف مسعود کی جانب سے بھوپال کے اقبال میدان میں کئےگئے احتجاج نے بھوپال پولیس کو بے چین کردیا۔

  • Share this:
مدھیہ پردیش: گستاخانہ خاکوں کے خلاف عوام میں سخت ناراضگی، فرانس کا پرچم جلا کر بھوپال میں کیا گیا احتجاج
فرانس کا پرچم جلا کر بھوپال میں کیا گیا احتجاج

بھوپال: فرانس کے صدرکی جانب سے  گستاخانہ خاکوں کی عمومی اشاعت اور ناپاک حرکت کے خلاف بھوپال میں یوں تو کئی روز سے احتجاج کا سلسلہ جاری ہے، مگر بھوپال ایم ایل اے عارف مسعود کی جانب سے بھوپال کے اقبال میدان میں کئےگئے احتجاج نے بھوپال پولیس کو بے چین کردیا۔ اقبال میدان میں ہزاروں عاشقان رسول کی موجودگی کو دیکھتے ہوئے پورے اقبال میدان کو پولیس چھاؤنی میں تبدیل کردیا گیا تھا۔بھوپال اقبال میدان میں ہزاروں کی تعداد میں عاشقان رسول اللہ صل اللہ علیہ وسلم نے شرکت کی اور فرانس کے صدر سے معافی مانگنے کا مطالبہ کیا۔ بھوپال اقبال میدان میں منعقدہ احتجاج میں ہزاروں لوگوں کی شرکت اور حکومت کے احکام کی خلاف ورزی کو بنیاد بناکر پولیس نے بھوپال ایم ایل اے عارف مسعود سمیت دوسو لوگوں کے خلاف بھوپال تھانہ تلیا میں دفعہ ایک سو اٹھاسی کے تحت معاملہ درج کیا ہے۔

بھوپال اقبال میدان میں منعقدہ احتجاجی جلوس سے شہر قاضی سید مشتاق علی ندوی ،مفتی شہر مولانا ابوالکلام قاسمی،آل انڈیا مسلم تہوار کمیٹی کے صدر ڈاکٹر اوصاف شاہمیری خرم ،مولانا عظمت شاہ مکی،مولانا علی قدرسمیت دس علما نے خطاب کیا۔ سبھی مقررین نے فرانس کے صدر کی طرف گستاخانہ خاکوں کی اشاعت کو قابل مذمت قرار دیتے ہوئے فرانس صدر سے معافی مانگنے کا مطالبہ کیا۔


بھوپال اقبال میدان میں منعقدہ احتجاجی جلوس سے شہر قاضی سید مشتاق علی ندوی ،مفتی شہر مولانا ابوالکلام قاسمی،آل انڈیا مسلم تہوار کمیٹی کے صدر ڈاکٹر اوصاف شاہمیری خرم ،مولانا عظمت شاہ مکی،مولانا علی قدرسمیت دس علما نے خطاب کیا۔
بھوپال اقبال میدان میں منعقدہ احتجاجی جلوس سے شہر قاضی سید مشتاق علی ندوی ،مفتی شہر مولانا ابوالکلام قاسمی،آل انڈیا مسلم تہوار کمیٹی کے صدر ڈاکٹر اوصاف شاہمیری خرم ،مولانا عظمت شاہ مکی،مولانا علی قدرسمیت دس علما نے خطاب کیا۔


بھوپال ایم ایل اے عارف مسعود نے احتجاجی جلسے سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ اظہار رائے کی  آزادی  کی ایک حد ہے ۔ آزادی رائے کے نام پر آقا سرور کونین صل اللہ علیہ وسلم کی اہانت کی جا’ئے یہ کبھی قبول نہیں کی جا سکتی ہے۔ عارف مسعود نے  وزیر اور صدر جمہوریہ ہند کے نام کا میمورنڈم بھوپال ایس ڈی ایم کو پیش کرتے ہوئے کہا کہ حکومت کو فرانس کے سفیر کو بلا کر ہندستان کے مسلمانوں کے موقف سے آگاہ کرنا چاہیئے  ۔ ہندستان کے سبھی شہروں میں اس وقت عاشقان رسول اللہ صل اللہ علیہ وسلم  بنی کی اہانت کئے جانے سے بیچین ہیں ۔ہم تب تک چین سے نہیں بیٹھیں گے جب تک فرانس صدر معافی نہیں مانگتے ہیں ۔ ساتھ ہی ہم نے فرانس کے پرچم کو نذر آتش کر کے اس لئے احتجاج کیاہے کہ فرانس سمجھ لے کہ اس نے کس کے خلاف گستاخی کی ہے ۔اللہ رب العزت نے جسے رحمت اللعالمین بنا کر بھیجا ہے اگر فرانس کے صدر اور وہاں کی عوام سیرت طیبہ صل اللہ علیہ وسلم کاایک  بار بغور مطالعہ کرلیں تو میرا دعوی ہے کہ وہ کبھی ایسا گستاخی کرنے کی جسارت نہیں کرینگے ۔
مفتی شہر بھوپال مولانا ابوالکلام قاسمی نے احتجاجی جلسے سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ عاشق رسواللہ صل اللہ علیہ وسلم اپنی گردن کٹوا سکتا ہے مگر ناموس رسالت کبھی برداشت نہیں کر سکتا ہے ۔بھوپال شہر قاضی سید مشتاق علی ندوی نے احتجاجی جلسے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ۔۔۔کی محمد سے وفا تم نے تو ہم تیرے ہیں ۔یہ جہاں چیز ہے کیا لوح و قلم تیرے ہیں ۔ اللہ نے محمد رسول اللہ صل اللہ علیہ وسلم کو عالم انسانیت کے لئے رحمت اللعالمین بناکر بھیجا ہے ۔ صرف مسلمان ہی نہیں دوسری قوم کے لوگ جنہوں نے رسول اللہ کی سیرت کو پڑھا ہے وہ اسوہ رسول اللہ کے شیدائی ہے۔فرانس کے صدر گستاخانہ خاکوں کی اشاعت کی طرفادری کر کے قابل مذمت کام کیا ہے ۔
پروگرام کا اختتام اجتماعی دعا کے ساتھ کیاگیا۔اجتماعی دعا میں ملک میں امن وامان کے لئے خاص دعا کرنے کے ساتھ کورونا کے خاتمہ کے لئے بھی دعا کی گئی ۔
Published by: Nisar Ahmad
First published: Oct 29, 2020 11:56 PM IST