உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    نوجوت سنگھ سدھو سے ٹکراو کے موڈ میں وزیر اعلیٰ چنی، ایڈوکیٹ جنرل اے پی ایس دیول کا استعفیٰ نامنظور: ذرائع

    پنجاب کانگریس کے صدر نوجوت سنگھ سدھو اور وزیر اعلیٰ چرنجیت سنگھ چنی۔

    پنجاب کانگریس کے صدر نوجوت سنگھ سدھو اور وزیر اعلیٰ چرنجیت سنگھ چنی۔

    Punjab Advocate General: پنجاب کانگریس کے صدر نوجوت سنگھ سدھو کی طرف سے تنقید کئے جانے کے بعد پیر کے روز وزیر اعلیٰ کو اے پی ایس دیول نے استعفیٰ سونپا تھا۔ ذرائع کے حوالے سے خبر آئی ہے کہ وزیر اعلیٰ چرنجیت سنگھ چنی نے ان کا استعفیٰ نا منظور کردیا ہے۔

    • Share this:
      چنڈی گڑھ: پنجاب کے وزیر اعلیٰ چرنجیت سنگھ چنی (Charanjit Singh Channi) نے ریاست کے سالیسٹر جنرل کے طور پر اے پی ایس دیول (Punjab Advocate General APS Deol) کا استعفیٰ منظور کرنے سے انکار کردیا ہے۔ ذرائع نے منگل کو یہ جانکاری دی۔ پنجاب کانگریس کے صدر نوجوت سنگھ سدھو (Navjot Singh Sidhu) کے حملوں کے بعد اے پی ایس دیول نے پیر کے روز وزیر اعلیٰ چرنجیت سنگھ چنی کو اپنا استعفیٰ سونپا تھا۔

      پنجاب کانگریس کے صدر نوجوت سنگھ سدھو کی طرف سے تنقید کئے جانے کے بعد پیر کے روز وزیر اعلیٰ کو اے پی ایس دیول نے استعفیٰ سونپا تھا۔ دراصل اے پی ایس دیول بے ادبی اور پولیس فائرنگ معاملے میں دو ملزم پولیس اہلکاروں کی نمائندگی کر رہے تھے۔ ایسے میں نوجوت سنگھ سدھو نے مطالبہ کیا تھا کہ انہیں اس عہدے سے ہٹایا جائے۔ سدھو کی طرف سے مسلسل پنجاب کے ڈی جی پی اور ایڈوکیٹ جنرل کو بدلنے کا مطالبہ کیا جا رہا ہے۔

       پنجاب کانگریس کے صدر نوجوت سنگھ سدھو کی طرف سے تنقید کئے جانے کے بعد پیر کے روز وزیر اعلیٰ کو اے پی ایس دیول نے استعفیٰ سونپا تھا۔

      پنجاب کانگریس کے صدر نوجوت سنگھ سدھو کی طرف سے تنقید کئے جانے کے بعد پیر کے روز وزیر اعلیٰ کو اے پی ایس دیول نے استعفیٰ سونپا تھا۔


      اس تازہ سیاسی صورتحال کو ریاستی حکومت پر نوجوت سنگھ سدھو کے عوامی حملوں کے ردعمل کے طور پر دیکھا جا رہا ہے۔ سدھو نے بجلی شرح میں تخفیف کے اعلان سے متعلق پیر کو وزیر اعلیٰ چرنجیت سنگھ چنی پر تنقید کی تھی۔ این ڈی ٹی وی کی رپورٹ میں ذرائع کے حوالے سے بتایا گیا کہ نوجوت سنگھ سدھو کے ذریعہ ریاستی حکومت پر مسلسل تنقید کئے جانے کے سبب وزیر اعلیٰ چرنجیت سنگھ چنی نے یہ قدم اٹھایا ہے۔

      پنجاب اور ہریانہ ہائی کورٹ کے سینئر وکیل اے پی ایس دیول کو ستمبر میں ایڈوکیٹ جنرل عہدے پر مقرر کیا گیا تھا۔ ان سے پہلے اس عہدے کو  اتل نندا سنبھال رہے تھے۔ کیپٹن امریندر سنگھ کے وزیر اعلیٰ عہدہ سے استعفیٰ دینے کے بعد انہوں نے استعفیٰ دے دیا تھا۔ اے پی ایس دیول سال 2015 میں مذہبی گرنتھ بے ادبی معاملے کے بعد ہوئی پولیس گولی باری کے معاملے میں سابق پولیس جنرل ڈائریکٹر سمیدھ سنگھ سینی کے وکیل تھے۔

      وہیں پنجاب کانگریس کے صدر نوجوت سنگھ سدھو نے پیر کو ریاست میں اپنی ہی پارٹی کی حکومت پر بالواسطہ طور پر حملہ کرتے ہوئے ان لیڈروں کو نشانے پر لیا جو الیکشن سے پہلے عوام کو لالی پاپ دے کر لبھاتے ہیں۔

      نوجوت سنگھ سدھو نے لوگوں سے کہا کہ انہیں صرف پنجاب کے فلاح وبہبود کے ایجنڈے پر ہی ووٹ دینا چاہئے۔ سدھو کا بیان ایسے دن آیا ہے، جب وزیر اعلیٰ چرنجیت سنگھ چنی نے گھریلو استعمال کے لئے بجلی بل کی شرح تین روپئے فی یونٹ کم کرنے کا اعلان کیا ہے اور اس کے ساتھ ہی ریاستی حکومت کے ملازمین کا مہنگائی بھتہ بڑھایا ہے۔ ہندو مہا سبھا کی طرف سے منعقدہ ایک عوامی تقریب کو خطاب کرتے ہوئے نوجوت سنگھ سدھو نے کہا کہ ریاست کی فلاح وبہبود کی بات کوئی نہیں کر رہا ہے۔

       
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: