ہوم » نیوز » وسطی ہندوستان

مدھیہ پردیش : بھوپال میں قاضی کانفرنس کا انعقاد

مساجد کمیٹی کے زیر اہتمام منعقدہ کانفرنس میں بھوپال میں قاضی ایکٹ نافذ کرنے کا مطالبہ کیا گیا ۔

  • Share this:
مدھیہ پردیش : بھوپال میں قاضی کانفرنس کا انعقاد
مدھیہ پردیش : بھوپال میں قاضی کانفرنس کا انعقاد

بھوپال میں مساجد کمیٹی کا قیام ریاست بھوپال اور انڈین یونین کے بیچ ہوئے انضمام ریاست کی رو سے عمل میں آیا تھا ۔ مساجد کمیٹی کے قیام کو سات دہائیاں گزر چکی ہیں ، لیکن ابھی تک یہاں پر قاضی ایکٹ کا نفاِذ نہیں کیا جا سکا ہے ۔ ریاست میں حکومتیں بلدتی رہیں ، لیکن کسی نے اس جانب توجہ نہیں دی ۔ حالانکہ اس ایشو کو لے کر سابقہ حکومت میں بھی کئی مرتبہ کوشش کی گئی ، لیکن نتیجہ ڈھاک کے تین پات ہی نکلا ۔ 2018 جب مدھیہ پردیش میں اسمبلی انتخابات ہوئے اور 15 سال سے بر سراقتدار جماعت کو یہاں کے عوام نے اقتدار سے ہٹا کر کانگریس کو اقتدار سونپا اور وزیر اعلی کمل ناتھ کی قیادت میں حکومت قائم ہوئی ، تو یہاں کے لوگوں میں کچھ امید پیدا ہوئی کہ شاید اب ان کی تقدیر کا ستارہ جو گردش میں ہے ، اسے بلندی عطا ہو سکے۔  یہاں پر مطالبات بھیجے گئے اور اس کے عملی نفاذ کو لے کر بھوپال میں مدھیہ پردیش کے اقلیتی وزیرعارف عقیل کی صدارت میں قاضی کانفرنس کا انعقاد کیا گیا ۔


مدھیہ پردیش کے وزیر برائے اقلیتی فلاح و بہبود عارف عقیل کہتے ہیں کہ ریاست میں اعلان نہیں بلکہ عمل کرنے والی حکومت ہے ۔ ائمہ وموذنین کے مسائل ہوں یا قاضی کے ڈریس کوڈ کا معاملہ سب کو لے کر میٹنگ کا انعقاد کیا گیا ہے اور اس کو لے کر وزیر اعلی کو نوٹ شیٹ بھیج دی ہے ۔ تاکہ اس کا فوری حل نکل سکے ۔


بھوپال میں پہلی بار منعقد کی گئی قاضی کانفرنس میں صرف بھوپال ہی نہیں بلکہ مدھیہ پردیش کے تمام اضلاع سے قاضی صاحبان نے شرکت کی تھی ۔ قاضی کانفرنس میں صوبہ میں قاضی ایکٹ کے نفاذ کا مطالبہ کرنے کے ساتھ مساجد کمیٹی کے دائرہ اختیار کو بڑھا کر مساجد بورڈ بنانے کی بھی تجویز پیش کی گئی ۔ کانفرنس میں شامل اندور کے شہر قاضی ڈاکٹر سید عشرت علی کا کہنا ہے کہ قاضی ایکٹ اورمساجد بورڈ کے قیام سے نہ صرف ائمہ وموذنین اور قاضیوں کے مسائل حل ہوں گے بلکہ ان کے وقار میں بھی اضافہ ہوگا ۔

First published: Feb 25, 2020 10:32 PM IST