உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    RRB NTPC Exam Protest:پٹنہ کے مشہور ٹیچر خان سر سمیت کئی اداروں پر کیس درج، طلبہ کو مشتعل کرنے کا الزام

    پٹنہ کے مشہور ٹیچر خان سر سمیت کئی اداروں کے خلاف مقدمہ درج

    پٹنہ کے مشہور ٹیچر خان سر سمیت کئی اداروں کے خلاف مقدمہ درج

    اگر RRB مطالبہ مان لے تو پانچ منٹ میں احتجاج ختم ہو جائے گا، ہم صرف لڑکوں کو سمجھا رہے ہیں۔ ہم نے ہی تحریک کو پرتشدد ہونے سے روکا ہے۔ ورنہ کون سی انتظامیہ 2 کروڑ طلباء کو روکے گی۔

    • Share this:
      پٹنہ:ریلوے ریکروٹمنٹ بورڈ (RRB) نان ٹیکنیکل پاپولر کیٹیگری (NTPC) کے امتحان میں مبینہ بے ضابطگیوں کو لے کر بہار میں طلباء کا احتجاج تیسرے دن بھی جاری رہا۔ دریں اثنا، بدھ کو پٹنہ کے مشہور استاد خان سر (Khan Sir) اور دیگر تعلیمی اداروں کے خلاف مقدمہ درج کیا گیا ہے۔ رپورٹ کے مطابق خان صاحب پر طلبہ کو احتجاج اور تشدد پر اکسانے کا الزام ہے۔ بہار میں، طلباء گروپ ڈی میں RRB-NTPC کے نتائج اور CBT-2 امتحان میں فرق کے خلاف احتجاج کر رہے ہیں۔

      پیر کے روز، ہزاروں امتحانی امیدواروں نے پٹنہ کے راجندر نگر ریلوے ٹرمینل پر5 گھنٹے سے زیادہ ٹرینوں کو روکا اور مبینہ طور پر ریلوے املاک کو نقصان پہنچایا۔ یہ ایف آئی آر پٹنہ کے پترکار نگر پولیس اسٹیشن میں درج کی گئی تھی۔ خان سر کے علاوہ کچھ دیگر کوچنگ انسٹی ٹیوٹ اور 400 نامعلوم افراد کے خلاف بھی مقدمہ درج کیا گیا تھا۔ ان پر منگل کی شام راجندر نگر ٹرمینل اور بھیکھنا پہاڑی علاقوں میں سرکاری املاک کی توڑ پھوڑ اور تشدد بھڑکانے کا الزام ہے۔

      ایف آئی آر میں کہا گیا ہے کہ پولیس کو موصول ہونے والے بیانات اور ویڈیو کلپس سے ثابت ہوا ہے کہ مشتعل طلباء کے ساتھ ساتھ کوچنگ انسٹی ٹیوٹ کے مالکان نے پٹنہ میں امن و امان کو بگاڑنے کے لیے بڑے پیمانے پر تشدد کی سازش رچی تھی۔ خان سر اپنے مختلف انداز تدریس کے لیے جانے جاتے ہیں۔ وہ خان جی ایس ریسرچ سینٹر کے نام سے کوچنگ چلاتے ہیں۔

      طلبہ کو بھڑکانے کے الزام کا خان سر نے دیا جواب
      قبل ازیں منگل کو خان سر نے طلبہ کو اکسانے کے الزامات پر کہا تھا کہ جس دن وہ ریلوے اسٹیشن آئیں گے، طلبہ کے ساتھ ساتھ ٹرین میں بیٹھے لوگ بھی ان کے ساتھ احتجاج شروع کردیں گے۔ انہوں نے کہا کہ ہم تحریک کو بھڑکا نہیں رہے بلکہ اسے مشتعل ہونے سے بچا رہے ہیں۔

      سیاست کرنے کے سوال پر انہوں نے کہا تھا کہ ’’اس میں سیاست کی کوئی بات نہیں ہے۔ ریلوے میں سیاست کی کوئی بات نہیں ہے۔ریلوے میں سیاست نہیں نوکری ہوتی ہے۔ ہم حکومت کے خلاف نہیں ہیں بلکہ آر آر بی کے خلاف ہیں۔ اگر RRB مطالبہ مان لے تو پانچ منٹ میں احتجاج ختم ہو جائے گا، ہم صرف لڑکوں کو سمجھا رہے ہیں۔ ہم نے ہی تحریک کو پرتشدد ہونے سے روکا ہے۔ ورنہ کون سی انتظامیہ 2 کروڑ طلباء کو روکے گی۔
      Published by:Shaik Khaleel Farhaad
      First published: