உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    راجستھان بحران میں گہلوت کا ہاتھ نہیں، کانگریس آبزرورس نے دی کلین چٹ، کیا اب بھی بن سکتے ہیں صدر؟

    راجستھان بحران میں گہلوت کا ہاتھ نہیں، کانگریس آبزرورس نے دی کلین چٹ، کیا اب بھی بن سکتے ہیں صدر؟

    راجستھان بحران میں گہلوت کا ہاتھ نہیں، کانگریس آبزرورس نے دی کلین چٹ، کیا اب بھی بن سکتے ہیں صدر؟

    Rajasthan Crisis : راجستھان میں کانگریس ممبران اسمبلی کی بغاوت کے بعد جاری سیاسی بحران کو لے کر پارٹی آبزرورس نے اپنی رپورٹ کانگریس صدر سونیا گاندھی کو بھیج دی ہے ۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Rajasthan | Jaipur | Jodhpur
    • Share this:
      نئی دہلی : راجستھان میں کانگریس ممبران اسمبلی کی بغاوت کے بعد جاری سیاسی بحران کو لے کر پارٹی آبزرورس نے اپنی رپورٹ کانگریس صدر سونیا گاندھی کو بھیج دی ہے ۔ ذرائع کے مطابق اس رپورٹ میں راجستھان کے سیاسی بحران کیلئے اشوک گہلوت کو کلین چٹ دیدی گئی ہے ۔ آبزرورس نے انہیں اس واقعہ کیلئے تکنیکی طور پر کہیں ذمہ دار نہیں ٹھہرایا ہے ۔ حالانکہ اس میں ممبران اسمبلی کی لگاتار میٹنگ بلانے والے اہم لیڈروں کے خلاف تادیبی کارروائی کی سفارش کی گئی ہے ۔

      راجستھان کانگریس کے انچارج اور آبزرورس نے نو صفحات پر مشتمل اپنی رپورٹ میں سلسلہ وار طریقہ سے پورے سیاسی واقعات کے بارے میں بتایا ہے ۔ ذرائع کے مطابق اس رپورٹ میں راجستھان سرکار میں وزیر اور کانگریس ممبر اسمبلی شانتی لال دھاریوال ، پرتاپ سنگھ کھچریاواس اور کانگریس لیڈر دھرمیندر راٹھوڑ کے خلاف کارروائی کی سفارش کی گئی ہے ۔ اس کے علاوہ کچھ اور لیڈروں کے نام ہیں، جن کے خلاف کارروائی کی سفارش کی گئی ہے ۔

       

      یہ بھی پڑھئے: سپریم کورٹ سے ادھو گروپ کو بڑا جھٹکا، اصلی شیوسینا کون؟ اب الیکشن کمیشن کر سکے گا فیصلہ


      ادھر ذرائع نے ساتھ ہی بتایا کہ راجستھان کے وزیر اعلی اشوک گہلوت ابھی صدر کے عہدہ کے الیکشن کی ریس باہر نہیں ہوئے ہیں ۔ وہ الیکشن لڑنے کو لے کر ویٹ اینڈ واچ کی حالت میں ہیں ۔ اگر کانگریس صدر سونیا گاندھی کی جانب سے انہیں ہدایت ملتی ہے، تبھی وہ الیکشن کیلئے پرچہ نامزدگی داخل کریں گے۔

       

      یہ بھی پڑھئے: پولیس کا بڑا دعویٰ- پاکستان کے رابطے میں تھے پی ایف آئی اراکین، 50 سے زیادہ پاکستانی نمبر


      بتادیں کہ راجستھان بحران کے بعد کانگریس ورکنگ کمیٹی کے کچھ اراکین نے پارٹی اعلی کمان سے شکایت کی تھی کہ گہلوت کی جگہ کسی دوسرے کو امیدوار بنایا جائے۔ حالانکہ بتایا جارہا ہے کہ اعلی کمان اب بھی گہلوت کو ایک موقع دینے کے موڈ میں ہے ۔

      دراصل سونیا گاندھی نے پیر کو جے پور سے لوٹے دونوں آبزرورس ملکا ارجن کھڑگے اور اجے ماکن سے تحریری رپورٹ سونپنے کیلئے کہا تھا ۔ جے پور میں لیجسلیچر پارٹی کی میٹنگ نہیں ہوپانے اور وزیر اعلی اشوک گہلوت کے حامی ممبران اسمبلی کے باغیانہ تیور اپنانے کے بعد کھڑگے اور ماکن پیر کو دہلی لوٹے تھے اور کانگریس صدر کی رہائش گاہ 10 جن پتھ پہنچ کر سونیا گاندھی سے ملاقات کی تھی ۔
      Published by:Imtiyaz Saqibe
      First published: