ہوم » نیوز » مغربی ہندوستان

ہجومی تشدد : پہلو خان قتل کیس میں دو نابالغ قصورواروں کو ملی تین تین سال کی سزا

یکم اپریل 2017 کو بہروڈ شاہراہ پر پک اپ گاڑیوں میں گایوں اور بیلوں کولے جارہے پہلو خان اور ان کے بیٹوں کے ساتھ بھیڑ نے مارپیٹ کی تھی ۔ واقعہ کے دودن بعد پہلو خان کی اسپتال میں علاج کے دوران موت ہوگئی ۔

  • UNI
  • Last Updated: Mar 13, 2020 07:52 PM IST
  • Share this:
ہجومی تشدد : پہلو خان قتل کیس میں دو نابالغ قصورواروں کو ملی تین تین سال کی سزا
علامتی تصویر

راجستھان کے الور میں پیش آئے پہلوخان قتل معاملہ میں جوینائل جسٹس بورڈ نے آج دونابالغ قصورواروں کوتین تین سال کے لیے جوینائل ہوم میں رکھنے کا حکم دیا۔ اسی معاملہ میں ایک دیگر ملزم کا معاملہ پوکسو عدالت میں زیرالتواہے ۔ جوینائل جسٹس بورڈ کی پرنسپل مجسٹریٹ سریتا دھاکڑ نے شواہد سے متعلق ویڈیو فوٹیج دیکھنے کے بعد ان کو ہجومی تشدد کا قصور وار مانتے ہوئے یہ سزا سنائی ۔اس معاملہ کے دیگر ملزمان کو ایک عدالت نے ناکافی شواہد کی بناپر بری کردیا تھا۔


قابل ذکر ہے کہ یکم اپریل 2017 کو بہروڈ شاہراہ پر پک اپ گاڑیوں میں گایوں اور بیلوں کولے جارہے پہلو خان اور ان کے بیٹوں کے ساتھ بھیڑ نے مارپیٹ کی تھی ۔ واقعہ کے دودن بعد پہلو خان کی اسپتال میں علاج کے دوران موت ہوگئی ۔


اس معاملہ میں پولیس نے چھ بالغ اور تین نابالغ لڑکوں کے خلاف عدالت میں چالان پیش کیا تھا۔ 14اگست 2019 کو الور کے ایڈیشنل ضلع اور سیشن عدالت نے سبھی ملزمان کو بری کردیا تھا، جس کے خلاف ریاستی حکومت نے راجستھان ہائی کورٹ میں عرضی دائر کی تھی ۔

First published: Mar 13, 2020 07:52 PM IST