ہوم » نیوز » مغربی ہندوستان

راجستھان: سچن پائلٹ 12 اراکین اسمبلی کے ساتھ سونیا گاندھی سے ملنے پہنچے، اشوک گہلوت حکومت پر بحران

اراکین اسمبلی کی خرید وفروخت معاملے میں ایس اوجی (SOG) کے ذریعہ معاملہ درج کرنے کے بعد کانگریس (Congress) کے 12 اراکین اسمبلی دہلی پہنچے ہیں۔ نائب وزیر اعلیٰ سچن پائلٹ (Deputy CM Sachin Pilot) پہلے سے ہی دہلی میں موجود ہیں۔

  • Share this:
راجستھان: سچن پائلٹ 12 اراکین اسمبلی کے ساتھ سونیا گاندھی سے ملنے پہنچے، اشوک گہلوت حکومت پر بحران
راجستھان کی اشوک گہلوت حکومت پر بحران، سچن پائلٹ 12 اراکین اسمبلی کے ساتھ سونیا گاندھی سے ملنے پہنچے

جے پور: راجستھان (Rajasthan) میں حکومت گرانے کے لئے اراکین اسمبلی کی خریدوفروخت کو لے کر راجستھان پولیس (Police) کے اسپیشل آپریشن گروپ (SOG) نے بڑی کارروائی کی ہے۔ ایس اوجی نے معاملے میں کیس درج کیا ہے۔ اس کے بعد کانگریس کے 12 اراکین اسمبلی دہلی پہنچے ہیں۔ نائب وزیر اعلیٰ سچن پائلٹ (Deputy CM Sachin Pilot) پہلے سے ہی دہلی میں موجود ہیں۔ بتایا جارہا ہے کہ سچن پائلٹ اور باقی 12 اراکین اسمبلی اشوک گہلوت سے خفا ہیں۔ یہ سبھی آج پارٹی صدر سونیا گاندھی سے مل سکتےہیں۔ بتایا جارہا ہے کہ سچن پائلٹ ایس اوجی کی ایف آئی آر میں حکومت گرانے کی سازش میں ان پر نشانہ سادھنے سے خفا ہیں۔


اس درمیان کانگریس نے ان تین آزاد اراکین اسمبلی کی میعاد ختم کردی۔ اب تک یہ تینوں ٹاک خوش ویر، جوجاور اور اوم پرکاش ہڈلا اشوک گہلوت حکومت کو حمایت دے رہے تھے، لیکن ایس او جی نے تینوں کے خلاف خرید وفروخت معاملے میں کیس درج کرلیا ہے۔ تینوں پر الزام ہے کہ حکومت گرانے کے لئے اراکین اسمبلی کی خریدوفروخت کی کوشش کی۔


سچن پائلٹ اور باقی 12 اراکین اسمبلی اشوک گہلوت سے خفا ہیں۔ یہ سبھی آج پارٹی صدر سونیا گاندھی سے مل سکتےہیں۔
سچن پائلٹ اور باقی 12 اراکین اسمبلی اشوک گہلوت سے خفا ہیں۔ یہ سبھی آج پارٹی صدر سونیا گاندھی سے مل سکتے ہیں۔


وزیر اعلیٰ اشوک گہلوت کو حمایت 

اس درمیان ہفتہ کی دیر رات وزیراعلیٰ اشوک گہلوت کو دیر رات کئی اراکین اسمبلی اور وزرا نے حمایتی خط سونپے اور گہلوت کی قیادت میں  اعتماد کا اظہارکیا۔ دیر رات راجستھان کی سرحد بھی سیل کردی گئی۔ بغیر پاس کے راجستھان سے باہر جانے کی اجازت نہیں ہے۔ حالانکہ حکومت نے کورونا انفیکشن کو سرحد سیل کرنے کی وجہ بتائی ہے، لیکن مانا جا رہا ہے کہ موجودہ سیاسی حادثات کو دیکھ کر اراکین اسمبلی کے باہر جانے کے خدشات میں فیصلہ کیا گیا ہے۔ ایس اوجی کی ایف آئی آر کے بعد اب راجستھان میں سیاسی بحران گہراتا جا رہا ہے۔

اس سے قبل راجستھان میں سیاسی رسہ کشی کے درمیان وزیراعلیٰ اشوک گہلوت نے بی جے پی پر بڑا الزام لگاتے ہوئے کہا کہ بی جے پی پر کانگریس حکومت (Congress Govt) کو گرانے کی سازش کررہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ اپوزیشن جماعت بی جے پی کانگریس کے اراکین اسمبلی کو 15 کروڑ روپئے تک کا آفر کر رہی ہے۔ اشوک گہلوت نے کہا کہ کووڈ بحران (Coronavirus Pandemic) کے دوران جہاں حکومت لوگوں کے لئے کام کر رہی ہے۔ وہیں بی جے پی ریاست کی منتخب حکومت اور لوگوں کے لئے پریشانی کھڑی کر رہی ہے۔ بی جے پی مسلسل ہماری حکومت کو گرانے کی کوشش کر رہی ہے۔

اس سے قبل راجستھان میں سیاسی رسہ کشی کے درمیان وزیراعلیٰ اشوک گہلوت نے بی جے پی پر بڑا الزام لگاتے ہوئے کہا کہ بی جے پی پر کانگریس حکومت (Congress Govt) کو گرانے کی سازش کررہی ہے۔
اس سے قبل راجستھان میں سیاسی رسہ کشی کے درمیان وزیراعلیٰ اشوک گہلوت نے بی جے پی پر بڑا الزام لگاتے ہوئے کہا کہ بی جے پی پر کانگریس حکومت (Congress Govt) کو گرانے کی سازش کررہی ہے۔


اشوک گہلوت نے کہی یہ بات

اشوک گہلوت نے کہا کہ کرناٹک اور مدھیہ پردیش میں بی جے پی نے خریدوفروخت کے ذریعہ ہی ہماری حکومت گرائی ہیں۔ انہوں نےکہا، اسی ضمن میں بی جے پی نے ہمارے کچھ اراکین اسمبلی کو 15 کروڑ روپئے اور دیگر طرح کی لالچ دی ہے اور ایسا مسلسل ہو رہا ہے۔ اشوک گہلوت نے کہا کہ بی جے پی نے راجیہ سبھا الیکشن کے لئے گجرات میں بھی اراکین اسمبلی کی خرید وفروخت کی تھی اور اب ایسا ہی وہ کچھ راجستھان میں کر رہے ہیں۔ وہیں اراکین اسمبلی کی خریدوفروخت کے معاملے میں راجستھان پولیس کی ایس اوجی تین اراکین اسمبلی خوش ویر سنگھ جوجاور، سریش ٹاک اور اوم پرکاش ہڈلا کے کردار کی جانچ کرے گی۔ تینوں ہی اراکین اسمبلی ہیں۔ راجیہ سبھا الیکشن میں تینوں اراکین اسمبلی نے کانگریس کی حمایت کی تھی۔ واضح رہے کہ راجستھان میں کانگریس کے پاس 200 سیٹوں میں سے 107 سیٹیں ہیں۔ وہیں کانگریس کو 12 اراکین اسمبلی کی بھی حمایت حاصل ہے۔
Published by: Nisar Ahmad
First published: Jul 12, 2020 10:29 AM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading