ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

دہلی میں تشدد کا معاملہ: بی جے پی کے 4 لیڈروں کے خلاف درج ہو مقدمات، ہائی کورٹ

عدالت نےمتنازعہ تقاریر کے معاملہ میں بی جے پی رکن پارلیمنٹ انوراگ ٹھاکر، کپل مشرا، پرویش ورما، اور ابھے ورما کے خلاف ایف آئی آر درج کرنے کا حکم دیاہے۔

  • Share this:
دہلی میں تشدد کا معاملہ: بی جے پی کے 4 لیڈروں کے خلاف درج ہو مقدمات، ہائی کورٹ
کپِل مشرا

دہلی میں تشدد پھوٹ پڑنے کے متعلق عرضداشتوں پر سماعت کے دورا ن کورٹ نے بی جے پی لیڈروں کی جانب سے کی گئی تقاریر کو سنا۔عرضداشت گزاروں کا کہناہے کہ اس متنازعہ تقاریر کے سبب ہی دہلی میں تشد د پھوٹ پڑا ہے اور حالات کشیدہ ہوگئے ہیں۔ جس پر درخواست گزاروں نے دعوی ٰکیا ہے کہ بی جے پی رہنماؤں انوراگ ٹھاکر ، پرویش ورما ، اور کپل مشرا کے خلاف ایف آئی آر درج نہیں کی گئی ہے۔جس پر عدالت نے پولیس سے جواب مانگا۔درخواست گزار نے کہا کہ یہ بہت سنجیدہ معاملہ ہے ، جو عدالت کے روبرو آیا ہے۔ یہ چونکا دینے والی بات ہے کہ ہمیں اب بھی ایف آئی آر کا انتظار کرنے کے لئے کہا جارہا ہے۔عدالت نےمتنازعہ تقاریر کے معاملہ میں بی جے پی رکن پارلیمنٹ انوراگ ٹھاکر، کپل مشرا، پرویش ورما، اور ابھے ورما کے خلاف ایف آئی آر درج کرنے کا حکم دیاہے۔



دہلی ہائی کورٹ میں بدھ کے روز شمال مشرقی دہلی میں جاری تشدد اورکشیدہ حالات کے معاملے سے متعلق سماعت ہوئی۔ دہلی پولیس کے جانب سے عدالت میں پیش سالیسیٹر جنرل تشار مہتا ، کہا کہ ابھی کوئی حکم نہیں دیا جانا چاہئے۔ اسی دوران ، وکیل راہول مہرہ نے دہلی حکومت کی طرف سے پیشی کی ، کہا کہ فوری طور پر گرفتاری کا حکم دیا جانا چاہئے۔ راہول مہرہ نے کہا کہ تشار مہتا پولیس کمشنر کی نمائندگی نہیں کرتے ہیں۔

اس معاملے میں ، ہائی کورٹ میں بی جے پی کے رکن پارلیمنٹ انوراگ ٹھاکر سے متعلق ویڈیو ، 'ملک کے غداروں کو گولی مارو ... چلایا گیا تھا۔ اس کے بعد لکشمی نگر سیٹ سے بی جے پی کے ممبر اسمبلی ابھے ورما کی ویڈیو چلائی گئی۔ یہ منگل کی شام کی ویڈیو ہے۔ عرضداشت گذار نے عدالت کو بتا یا کہ یہ ویڈیو کل ہی ریکار ڈ کیاگیاتھا۔جس پر عدالت نے پولیس سے سوال کیا کہ دفعہ 144 نافذ نہیں ہے؟۔ پولیس نے بتایا کہ لکشمی نگر میں سیکشن 144 نافذ نہیں کیاگیاتھا۔ تیسری ویڈیو بی جے پی لیڈر کپل مشرا کی ہے۔ عدالت نے کہا کہ ہم نے یہ ویڈیو دیکھی ہے۔ دیکھنا نہیں چاہتے ہیں اس کے بعد ، مغربی دہلی سے بی جے پی کے ممبر پارلیمنٹ پرویش ورما کی ویڈیو عدالت میں چلائی گئی۔


'دہلی میں دوبارہ 1984 کا اعادہ نہیں ہوگا:تشدد پر ہائی کورٹ کا سخت تبصرہ

اس سے پہلے بدھ کے روز دہلی ہائی کورٹ نے اس معاملے میں ایک سخت تبصرہ کیا تھا۔ سماعت کے دوران جسٹس مرلی دھر نے کہا کہ دہلی ہائی کورٹ میں رہتے ہوئے وہ1984 کے فسادات کے واقعے کو دہرانے کی اجازت نہیں ہوگی۔ عدالت نے کہا کہ مرکز اور ریاست کے اعلیٰ عہدیداروں کو تشددکے متاثرین اور ان کے اہل خانہ سے ملنا چاہئے۔ کیس کی سماعت کے دوران جج نے کہا کہ اب وقت آگیا ہے کہ عام شہریوں کو بھی 'زیڈ زمرہ' سکیورٹی فراہم کی جانی چاہئے۔

فیصلہ سنانے سےپہلے عدالت پولیس کی سرزنش کی اور کہا کہ نفرت انگیز تقاریر کے خلاف ایف آئی آر کے اندراج میں تاخیر کے نتائج کو "سنجیدگی سے غور کرنا" چاہئے۔ بنچ نے مزید کہا ، "حکام کو قانون کے مینڈیٹ پر سختی سے عمل کرنا چاہئے عدالت کا کہنا ہے کہ ، کمشنرکو للیتا کماری کے رہنمایانہ خطوط پر عمل کرنا چاہیے تھااور ایف آئی آر درج نہ کرنے کے لیے انہیں سنگین نتائج کا سامنا ہوگا۔ کوئی بھی قانون کے اصول سے بالاتر نہیں ہے۔

جس کے بعد عدالت کے ریمارکس کا جواب دیتے ہوئے سالیسیٹر جنرل تشار مہتا کا کہنا ہے کہ ، "منتخب ویڈیوز کے ذریعے کو ئی فیصلہ نہیں کیا جاناچاہیے۔ پولیس پکنک کے لئے میدان میں نہیں ہے۔ اب وقت نہیں آیا ہے کہ فورس کے وقار کو مجروح کیاجائے۔جس کے بعد عدالت نے کہا کہ آپ ایف آئی آر کب درج کریں گے؟ کتنی جانیں ضائع ہوگی؟ کتنے مکانوں کو آگ لگائی جائیگی؟
جسٹس مرلی دھر نےکیس کی سماعت کرتے ہوئے کہتے ہیں ، "ہمیں جس وجہ سے تشویش لاحق ہے وہ یہ ہے کہ تمام ویڈیوز میں ایک ہی نعرے دہرائے جارہے ہیں۔ جب آپ ایف آئی آر درج نہیں کروائی گئی تو ، ایک غلط پیغام نکلتا ہے جو لوگوں کو اس نعرے کو استعمال کرنے سے باز نہیں رکھتا ہے۔ "ایف آئی آر درج نہ ہونے پر عدالت نے سالیسیٹر جنرل سےکہا ۔۔ ہماری تکلیف یہ ہے کہ آئینی عدالت کی حیثیت سے جو کچھ ہو رہا ہے اسے نظرانداز نہیں کرسکتے ہیں۔ عدالت نے سالیسیٹر جنرل تشار مہتا سے کہا کہ آپ کے خیال میں آپ کے پاس مقدمہ درج کرنے کا مناسب وقت کب ہے؟ کتنی جانیں ضائع ہوسکتی ہیں؟ آپ کے مقدمہ درج کروانے سے پہلے گھروں کو جلایا جاسکتا ہے ؟ عدالت نے مزید کہا کہ کب آپ ایف آئی آر درج کروائیں گے؟ سارا شہر جل جانے کے بعد؟

یہ نوٹ کرتے ہوئے کہ شمال مشرقی دہلی میں پیش آنے والے واقعات میں ایف آئی آر درج کی گئیں ، بنچ نے کہا ، "آپ ایف آئی آر درج کرکے کسی جرم کی موجودگی کو تسلیم کرتے ہیں۔ اگر آپ ایف آئی آر درج نہیں کرتے ہیں تو ، آپ کارروائی کیسے کریں گے۔ جتنا آپ مزید تاخیر کریں گے۔ ، یہ تقاریر مزید تشدد کا باعث بنی ہیں۔ عدالت نے کہا کہ جب آپ ایف آئی آر درج نہیں کرتے ہیں تو ، غلط پیغام جاتا ہے اور لوگوں کو اس کو دہرانے سے باز نہیں رکھا جاتا ہے۔ کیا یہ خطرے کی گھنٹی کی وجہ نہیں ہے؟ جسٹس جے مرلی دھر نےریمارک کیا۔

تشدد کے متعلق ہائی کورٹ نے حکم جاری کردیا

دہلی ہائی کورٹ نے شمال مشرقی دہلی میں جاری تشدد سے متعلق درخواست کی سماعت کے بعد ، اپنے احکامات سنائے ہیں۔جس میں کہا گیا ہے کہ پولیس، مریضوں اور مہلوکین کی آخری رسوم پر لواحقین کے تحفظ کو یقینی بنائیں۔ ایک ہیلپ لائن نمبربنانے کے لیے اقدامات کرنے کی ہدایت دی گئی ہےوہیں شلٹر ہوم بنانے اور اس میں بنیادی سہولیات جیسے کمبل ، دوائیں ، کھانا اور صفائی ستھرائی کے انتظامات کرنے کا حکم دیاہے۔
First published: Feb 26, 2020 05:45 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading