உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    آسام میں پولیس اور مظاہرین کے درمیان جھڑپ، دو افراد کی موت، سات پولیس اہلکار زخمی

    آسام میں پولیس اور مظاہرین کے درمیان جھڑپ، دو افراد کی موت، سات پولیس اہلکار زخمی ۔ تصویر : ANI

    آسام میں پولیس اور مظاہرین کے درمیان جھڑپ، دو افراد کی موت، سات پولیس اہلکار زخمی ۔ تصویر : ANI

    دارنگ کی ڈپٹی کمشنر تھاؤسین نے مقامی میڈیا کو بتایا کہ ہمیں اطلاع ملی ہے کہ پر تشدد جھڑپوں میں دوافراد ہلاک ہو گئے اور سات پولیس اہلکاروں کو سنگین چوٹیں آئی ہیں‘۔

    • UNI
    • Last Updated :
    • Share this:
      گوہاٹی : آسام کے ضلع دارنگ کے سیپاجھار علاقے میں’غیرقانونی قابضوں‘ سے زمین خالی کروانے کے لیے ریاستی حکومت کی جانب سے چلائی گئی ایک بے داخلی مہم کے دوران پولیس اور مقامی افراد کے درمیان جد و جہد میں کم از کم دو افراد کی مو ت ہو گئی اور سات پولیس اہلکاروں سمیت دیگر کئی زخمی ہو گئے۔ واقعہ کا ایک مبینہ ویڈیو وائرل ہو گیا ہے جس میں مقامی افراد کی جانب سے اقلیتی برادری کے خلاف بے دخلی مہم کی مخالفت کرنے کے بعد شہریوں پر پولیس کی جانب سے فائرنگ کو دکھایا گیا ہے۔

      ویڈیو میں ایک مظاہرہ کرنے والے شخص کو گرتے دکھایا گیا ہے اور اس کے بعد پولیس نے اس کی بے رحمی سے پٹائی کی۔ دارنگ کی ڈپٹی کمشنر تھاؤسین نے مقامی میڈیا کو بتایا کہ ہمیں اطلاع ملی ہے کہ پر تشدد جھڑپوں میں دوافراد ہلاک ہو گئے اور سات پولیس اہلکاروں کو سنگین چوٹیں آئی ہیں‘۔

      ریاست کے سینیئر وزیر پٹووری، پدما ہزاریکا اور بھارتیہ جنتا پارٹی کے جنرل سکریٹری دلیپ سَیکیا صورتحال کا جائزہ لینے کے لیے دارالحکومت گوہاٹی سے تقریباً 56 کلومیٹر دور جائے وقوعہ سیپاجھار پہنچ گئے ہیں۔

      آل انڈیا یونائیٹیڈ ڈیموکریٹک فرنٹ (اے آئی یو ڈی ایف) کے رکن اسمبلی اشرف الحسین نے ٹویٹ کیا کہ ’فاشسسٹ، فرقہ پرست اور سخت گیر حکومت کی قوت نے اپنے ہی شہریوں پر گولی چلائی۔ ان دیہی افراد کی بے دخلی کے خلاف اپیل ہائی کورٹ میں زیر التواء ہے۔ کیا حکومت عدالت کے حکم تک انتظار نہیں کر سکتی‘؟

      جمعرات کی صبح جب ضلع دارنگ انتظامیہ کے افسر مسلح سکیورٹی اہلکاروں کی ایک بڑی ٹیم کی حمایت کے ساتھ بے دخلی مہم کو انجام دینے کے لیے سیپاجھار-دھول پور علاقے میں پہنچے تو مقامی افراد نے مخالفت کی۔

      مخالفت جلد ہی پرتشدد ہو گئی کیونکہ مظاہرین نے پولیس اہلکاروں اور دیگر انتظامیہ کے افسران پر لاٹھی اور دیگر دھار دار ہتھیاروں سےے حملہ کیا۔
      Published by:Imtiyaz Saqibe
      First published: