پاک مقبوضہ کشمیرمیں دہشت گردوں کے ٹھکانوں پرہندوستانی فوج کی سرجیکل اسٹرائیک

آرمی چیف جنرل بپن راوت نےکہا کہ ہندوستانی فوج نے پی اوکےکی نیلم وادی میں ایسےتین دہشت گردانہ لانچ پیڈس کو تباہ کردیا ہے۔

Oct 22, 2019 10:12 PM IST | Updated on: Oct 22, 2019 10:12 PM IST
پاک مقبوضہ کشمیرمیں دہشت گردوں کے ٹھکانوں پرہندوستانی فوج کی سرجیکل اسٹرائیک

(PTI Photo)

منوج گپتا - سی این این، نیوز 18 کی رپورٹ

ہندوستانی فوج نے پاکستان مقبوضہ کشمیرمیں اتوارکودہشت گردوں کےلانچ پیڈس کونشانہ بنا کربڑی کارروائی کوانجام دیا تھا۔ ہندوستانی فوج کا یہ قدم آرٹیکل 370 کے ہٹائے جانے کے بعد وادی میں ماحول خراب کرنےاورسردیوں میں ہونے والی دراندازی کوروکنے کےلئے بے حد ضروری مانا جارہا ہے۔ ذرائع کےمطابق ہندوستانی خفیہ ایجنسی نےکشمیرمیں دہشت گردوں کی دراندازی کوروکنےکےلئے واضح احکامات جاری کئے تھے۔ ایجنسیوں کو اطلاع ملی تھی کہ سرحد پارسے دہشت گرد گروپ اسی ماہ ہرحال میں زیادہ سے زیادہ دہشت گرد دراندازی کرنےکے فراق میں ہیں۔

Loading...

آرمی چیف جنرل بپن راوت نےاتوارکوکہا کہ ہندوستانی فوج نے پی اوکےکی نیلم وادی میں ایسےتین دہشت گردانہ لانچ پیڈس کو تباہ کردیا ہے۔ وہیں توپ خانوں کے زبردست آگ کے سبب چوتھے لانچ پیڈ کوکافی نقصان پہنچا ہے۔

ذرائع نےاطلاع دی کہ لائن آف کنٹرول کےقریب بنےان لانچ پیڈس میں دہشت گرد گروپ گزشتہ ماہ سےنئے دہشت گردوں کی بھرتیاں کررہے تھے۔ اکتوبرکے پہلے ہفتے میں اطلاع ملی تھی کہ زمینی خفیہ اطلاعات کے مطابق وہاں جیش محمد، لشکرطیبہ اورالبدرکےکئی دہشت گرد وہاں موجود ہیں۔ ان دہشت گردوں کے لانچ پیڈس کی جی پی ایس لوکیشنس دہلی اور سری نگرمیں فوج کے ساتھ شیئرکی گئی تھی۔

سرکاری عہدیداروں نے بتایا کہ ایک بارجی پی ایس کےلوکیشنس ملنےکےبعد سیکورٹی اسٹیبلشمنٹ نےان مقامات پرسیٹلائٹ کوسیٹ کیا اوران کی سرگرمیوں پرنظررکھنی شروع کر دی۔ انہوں نے بتایا کہ اس سے معلوم ہوا کہ یہ دہشت گرد ہی تھےکیونکہ عام شہریوں اور دہشت گردوں کی سرگرمیاں الگ ہوتی ہیں۔ جنرل بپن راوت نےکہا تھا کہ جموں وکشمیر کے تنگدھاراورکیرن سیکٹرکے دوسری طرف ہندوستانی فوج کی جوابی کارروائی میں 6 سے 10 پاکستانی فوجی مارے گئےاورتین دہشت گردانہ کیمپ تباہ کردیئے گئے۔

بپن راوت نےکہا تھا کہ ہندوستانی فوجیوں کی کارروائی میں ایک دیگردہشت گرانہ کیمپ کو زبردست نقصان پہنچا۔ ساتھ ہی کنٹرول لائن کے دوسری طرف دہشت گردوں کے بنیادی ڈھانچےکو زبردست نقصان پہنچا ہے۔  ہندوستانی فوج کےسربراہ جنرل بپن راوت نےاتوارکو کہا تھا کہ جموں وکشمیرکے تنگدھاراورکیرن سیکٹرکے دوسری طرف ہندوستانی فوج کی جوابی کارروائی میں 6 سے 10 پاکستانی فوجی مارے گئے اورتین دہشت گردانہ کیمپ برباد کردیئے گئے۔

جنرل بپن راوت نےکہا تھا کہ ہندوستانی فوجیوں کی کارروائی میں ایک دہشت گردانہ کیمپ کوزبردست نقصان پہنچا۔ ساتھ ہی کنٹرول لائن کے دوسری طرف دہشت گردوں کے بنیادی ڈھانچےکوزبردست نقصان پہنچا ہے۔ سرکاری ذرائع نے آفیشیل اعدادوشمار پیش کرتے ہوئے بتایا کہ اس کارروائی میں 18 دہشت گرد ہلاک ہوگئے۔ وہیں پاکستانی فوج کے 12 جوان مارگرائےگئے۔ انہوں نے بتایا کہ اس دوران 6 عام شہریوں کی بھی جان چلی گئی۔

پاکستانی فوج نصف شب ان لاشوں کوایمبولینس کے ذریعہ وہاں سے لے گئی۔ حالانکہ اس کے باوجود بھی پاکستان نے ہندوستان کےلانچ پیڈ کوتباہ کرنےکے ہندوستان کے دعوے کو مسترد کردیا۔ پاکستان کا کہنا تھا کہ ہندوستان اپنے دعوے کوثابت کرنےکےلئے مبینہ دہشت گردانہ کیمپ تک کسی غیرملکی سفارتکاریا میڈیا کو لے جاسکتا ہے۔

Loading...