ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

عام آدمی کو ایک اور جھٹکا ، مہنگائی نے توڑا چھ مہینے کا ریکارڈ ، مئی میں سی پی آئی 6.30 فیصد پر آئی

مہنگائی کے محاذ پر عوام کو ایک اور جھٹکا لگا ہے ۔ دراصل تھوک مہنگائی کے بعد اب ریٹیل مہنگائی بھی بڑھتی نظر آرہی ہے ۔

  • Share this:
عام آدمی کو ایک اور جھٹکا ، مہنگائی نے توڑا چھ مہینے کا ریکارڈ ، مئی میں سی پی آئی 6.30 فیصد پر آئی
عام آدمی کو ایک اور جھٹکا ، مہنگائی نے توڑا چھ مہینے کا ریکارڈ ، مئی میں سی پی آئی 6.30 فیصد پر آئی

نئی دہلی : مہنگائی کے محاذ پر عام آدمی کو دوہرا جھٹکا لگا ہے ۔ پیر کی صبح جہاں تھوک مہنگائی شرح 12.94 فیصد کی ریکارڈ اونچی سطح پر پہنچ گئی تو وہیں اب خبر آئی ہے کہ مئی میں ریٹیل مہنگائی بڑھ کر  6.3 فیصد پر پہنچ گئی ہے ۔ یہ گزشتہ چھ مہینے میں خوردہ مہنگائی کی سب سے اونچی شرح ہے ۔ سرکار کی جانب سے پیر کو جاری خوردہ مہنگائی کے اعداد و شمار میں یہ بات سامنے آئی ہے ۔


مئی میں سی پی آئی ( خوردہ مہنگائی ) 4.23 فیصد سے بڑھ کر 6.30 فیصد پر آگئی ہے جبکہ اس کے 5.39 فیصد پر رہنے کا اندازہ تھا ۔ مئی میں کھانے پینے کی چیزوں کی ریٹیل مہنگائی کی شرح اپریل کے 1.96 فیصد سے بڑھ کر 5.01 فیصد پر آگئی ۔ وہیں ماہ در ماہ کی بنیاد پر مئی میں سبزیوں کی مہنگائی کی شرح -14.18 فیصد سے بڑھ کر -1.92 فیصد پر آگئی ہے ۔


ایندھن اور بجلی کی مہنگائی کی شرح ۔۔ فیصد پر آئی


مئی مہینے میں ایندھن اور بجلی کی مہنگائی کی شرح اپریل کے 7.91  فیصد سے بڑھ کر 11.58 فیصد پر آگئی ہے ۔ ہاوسنگ مہنگائی کی شرح 3.73 فیصد سے بڑھ کر 3.86 فیصد پر آگئی ہے ۔ مئی میں کپڑے ، جوتے ، چپل کی مہنگائی کی شرح بڑھ کر 5.32 فیصد پر آگئی ہے ۔ ماہ درہ ماہ کی بنیاد پر مئی میں دالوں کی مہنگائی کی شرح کی 7.51 فیصد سے بڑھ کر 9.39 فیصد پر آگئی ۔ مئی میں کور مہنگائی شرح اپریل کے 5.40 فیصد سے بڑھ کر 6.6 فیصد پر آگئی ۔

آج ہی تھوک مہنگائی کے بھی اعداد و شمار آئے

بتادیں کہ خام تیل اور تیارہ شدہ سامان کی قیمتوں میں اضافہ کی وجہ سے تھوک قیمتوں پر مبنی افراط زر کی شرح مئی میں بڑھ کر ریکارڈ اونچی سطح 12.94 فیصد پر پہنچ گئی ۔ مئی 2020 میں ڈبلیو پی آئی کی افراط زر کی شرح منفی 3.37 فیصد رہی ۔
Published by: Imtiyaz Saqibe
First published: Jun 14, 2021 08:25 PM IST