ہوم » نیوز » مشرقی ہندوستان

آرجے ڈی کو بڑا جھٹکا، رگھونش پرساد سنگھ نے دیا استعفیٰ، 5 ایم ایل سی نے پارٹی چھوڑ کر تھام لیا جے ڈی یو کا دامن

آرجے ڈی پانچ ایم ایل سی (Legislative Councilors) نے جے ڈی یو کا دامن تھام لیا ہے۔ وہیں پارٹی کے نائب صدر رگھونش پرساد سنگھ (Raghuvansh Prasad Singh) نے بھی اپنے عہدے سے استعفیٰ دے دیا ہے۔ بتایا جارہا ہے کہ وہ راما سنگھ کو آرجے ڈی (RJD) میں شامل کئے جانے سے ناراض ہیں۔

  • Share this:
آرجے ڈی کو بڑا جھٹکا، رگھونش پرساد سنگھ نے دیا استعفیٰ، 5 ایم ایل سی نے پارٹی چھوڑ کر تھام لیا جے ڈی یو کا دامن
بہار اسمبلی انتخابات سے قبل جے ڈی یو نے آرجے ڈی کو بڑا جھٹکا دیا ہے۔ پانچ ایم ایل سی جے ڈی یو میں شامل ہوگئے ہیں جبکہ رگھونش پرساد سنگھ نے بھی عہدے سے استعفیٰ دے دیا ہے۔

پٹنہ: راشٹریہ جنتا دل (آرجے ڈی) کو بڑا جھٹکا لگا ہے۔ پانچ اراکین قانون ساز کونسل (Legislative Councilors) کے استعفیٰ کے بعد پارٹی کے نائب صدر اور سینئر لیڈر رگھونش پرساد سنگھ (Raghuvansh Prasad Singh) نے بھی اپنے عہدے سے استعفیٰ دے دیا ہے۔ بتایا جارہا ہے کہ وہ راما سنگھ کو آرجے ڈی (RJD) میں شامل کئے جانے کو لے کر ناراض ہیں۔ رگھونش پرساد سنگھ کورونا پازیٹیو ہیں اور ان کا علاج ابھی پٹنہ کے ایمس میں چل رہا ہے۔ واضح رہے کہ لوک جن شکتی پارٹی (LJP) کے سابق رکن پارلیمنٹ اور مافیا کہے جانے والے رام کشور سنگھ عرف راما سنگھ الیکشن سے ٹحیک قبل لالو پرساد یادو (Lalu Prasad Yadav) کی پارٹی آرجے ڈی کا دامن تھامنے کی بات کہی جا رہی ہے۔ چرچا ہے کہ راما سنگھ 29 جون کو آرجے ڈی جوائن کریں گے۔ اسی بات سے رگھونش پرساد سنگھ ناراض بتائے جارہے ہیں۔




راشٹریہ جنتا دل کے نائب صدر رگھونش پرساد سنگھ نے اپنے عہدے سے استعفیٰ دے دیا ہے۔
راشٹریہ جنتا دل کے نائب صدر رگھونش پرساد سنگھ نے اپنے عہدے سے استعفیٰ دے دیا ہے۔

5 ایم ایل سی جے ڈی یو میں شامل ہوگئے


واضح رہے کہ منگل کو ہی 5 اراکین قانون ساز کونسل نے راشٹریہ جنتا دل (آرجے ڈی) کا ساتھ چھوڑ کر جے ڈی یو کا دامن تھام لیا۔ جن لیڈروں نے جے ڈی یو کا دامن تھام لیا ہے ان کے نام ہیں رادھا چرن سیٹھ، سنجے پرساد، رنوجے سنگھ، دلیپ رائے اور قمر عالم ہیں۔ واضح رہے کہ بہار اسمبلی انتخابات کی تاریخوں کا اعلان ہونے کا امکان ظاہر کیا جارہا ہے، ایسے میں بہار میں پارٹی بدلنے کا کھیل تیز ہوگیا ہے۔


 راما سنگھ نے تیجسوی یادو سے کی تھی ملاقات


واضح رہے کہ دو دن پہلے ہی راما سنگھ نے تیجسوی یادو سے ملاقات کی تھی اور چرچا یہ ہے کہ ان کے ساتھ ہی اعلیٰ ذات کے کئی دوسرے لیڈر  بھی آر جے ڈی میں شامل ہوں گے۔ کسی زمانے میں لالو پرساد یادو اور رگھونش پرساد سنگھ کے سخت حریف رہے سابق رکن پارلیمنٹ راما سنگھ کے شامل کئے جانے کی خبروں سے پارٹی کے اندر کئی لیڈران ناراض بتائے جا رہے ہیں۔




سابق رکن پارلیمنٹ رام کشور سنگھ عرف راما سنگھ الیکشن سے ٹھیک قبل لالو پرساد یادو کی پارٹی آرجے ڈی کا دامن تھامنے کی بات کہی جا رہی ہے۔ انہوں نے حال ہی میں تیجسوی یادو سے ملاقات کی ہے۔
سابق رکن پارلیمنٹ رام کشور سنگھ عرف راما سنگھ الیکشن سے ٹھیک قبل لالو پرساد یادو کی پارٹی آرجے ڈی کا دامن تھامنے کی بات کہی جا رہی ہے۔ انہوں نے حال ہی میں تیجسوی یادو سے ملاقات کی ہے۔

لالو یادو اور راما سنگھ میں رہی ہے سیاسی عداوت


راما سنگھ وہی لیڈر ہیں جو کبھی لالو پرساد یادو اور آرجے ڈی کے قومی نائب صدر رگھونش پرساد سنگھ کے سخت حریف مانے جاتے رہے ہیں۔ سال 2014 کے لوک سبھا الیکشن میں راما سنگھ نے تقریباً ایک لاکھ سے زیادہ ووٹ سے رگھونش پرساد سنگھ کو ویشالی لوک سبھا سیٹ سے شکست دی تھی۔ حالانکہ رام ولاس پاسوان کی (ایل جے پی) نے عام انتخابات 2019 میں راما سنگھ کو ٹکٹ نہیں دیا تھا۔

First published: Jun 23, 2020 02:32 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading