உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    RRB-NTPC: بہار بند کی حمایت میں اتری طلبہ تنظیمیں، سڑک پر لگائی آگ، نقل و حمل متاثر

    ریاست میں انتظامیہ نے قانون کو اپنے ہاتھ میں لینے والے طلباء کے خلاف بھی تحقیقات شروع کر دی ہیں۔ جمعرات کو دارالحکومت پٹنہ کے راجندر نگر ٹرمینل پر پتھراؤ اور توڑ پھوڑ کے الزام میں 4 لوگوں کو گرفتار کیا گیا ہے۔

    ریاست میں انتظامیہ نے قانون کو اپنے ہاتھ میں لینے والے طلباء کے خلاف بھی تحقیقات شروع کر دی ہیں۔ جمعرات کو دارالحکومت پٹنہ کے راجندر نگر ٹرمینل پر پتھراؤ اور توڑ پھوڑ کے الزام میں 4 لوگوں کو گرفتار کیا گیا ہے۔

    ریاست میں انتظامیہ نے قانون کو اپنے ہاتھ میں لینے والے طلباء کے خلاف بھی تحقیقات شروع کر دی ہیں۔ جمعرات کو دارالحکومت پٹنہ کے راجندر نگر ٹرمینل پر پتھراؤ اور توڑ پھوڑ کے الزام میں 4 لوگوں کو گرفتار کیا گیا ہے۔

    • Share this:
      پٹنہ:ریلوے ریکروٹمنٹ بورڈ (RRB) کے نان ٹیکنیکل پاپولر کیٹیگری امتحان (NTPC) کے نتائج کے خلاف بہار میں طلباء نے احتجاج جاری ہے۔ اسی سلسلے میں کئی طلبہ اور نوجوان تنظیموں نے جمعہ کو بہار بند کی کال دی ہے۔ کئی سیاسی جماعتیں بھی طلبہ کی حمایت میں آگئی ہیں۔ جمعہ کو آر جے ڈی کے کئی لیڈروں کے مظاہرے کی وجہ سے جام رہا۔ کئی اہم راستوں پر ٹرینوں کے پھنسے ہونے کی اطلاعات ہیں۔ اس کے علاوہ تنظیموں نے مرکزی وزارت ریلوے کی طرف سے تشکیل دی گئی کمیٹی کو بھی ’دھوکہ دہی‘ قرار دیا ہے۔ ریاست میں طلباء نے منگل کو بہار شریف ریلوے اسٹیشن پر پہلے مرحلے کے امتحانی نتائج میں مبینہ بدعنوانی کے خلاف احتجاج کیا تھا۔

      اس کے علاوہ ریاست میں انتظامیہ نے قانون کو اپنے ہاتھ میں لینے والے طلباء کے خلاف بھی تحقیقات شروع کر دی ہیں۔ جمعرات کو دارالحکومت پٹنہ کے راجندر نگر ٹرمینل پر پتھراؤ اور توڑ پھوڑ کے الزام میں 4 لوگوں کو گرفتار کیا گیا ہے۔ پٹنہ کے ضلع مجسٹریٹ چندر شیکھر سنگھ نے جمعرات کو نامہ نگاروں سے بات چیت میں کہا، ’24 جنوری کو راجندر نگر ٹرمینل پر پتھراؤ کرنے اور توڑ پھوڑ کرنے کے الزام میں 4 لوگوں کو گرفتار کیا گیا ہے۔‘

      آر جے ڈی لیڈر نے لگائی آگ
      ویشالی ضلع کے حاجی پور نگر کے رامشیش چوک پر مہوا کے آر جے ڈی ایم ایل اے ڈاکٹر مکیش روشن نے آگ لگائی اور سڑک کو جام کیا اور حکومت کے خلاف نعرے لگائے۔ اس دوران حاجی پور مظفر پور، حاجی پور چھپرا، حاجی پور سمستی پور سمیت اہم سڑکوں پر گاڑیوں کی لمبی قطاریں لگ گئیں اور جام کی وجہ سے ٹریفک ٹھپ ہو کر رہ گئی۔ یہ جام این ٹی پی سی امتحان کے نتائج میں دھاندلی، طلبہ کی گرفتاری اور انہیں جھوٹے مقدمات میں پھنسانے کے خلاف احتجاج میں کیا گیا ہے۔
      Published by:Shaik Khaleel Farhaad
      First published: