پنجاب کی اس یونیورسیٹی میں وارڈن نے تلاشی کے لئے طالبات کے اتروائے کپڑے

طالبات کا الزام تھا کہ بیت الخلا میں سینیٹری پیڈ کس نے پھینکا، یہ جانچ کرنے کے لئے وارڈن نے تقریبا ایک درجن طالبات کے زبردستی کپڑے اتروا دئیے

May 01, 2019 12:11 PM IST | Updated on: May 01, 2019 12:14 PM IST
پنجاب کی اس یونیورسیٹی میں وارڈن نے تلاشی کے لئے طالبات کے اتروائے کپڑے

پنجاب کی اس یونیورسیٹی میں وارڈن نے تلاشی کے لئے طالبات کے اتروائے کپڑے

پنجاب کے بھٹنڈا میں واقع اکال یونیورسیٹی میں ہوئے سینیٹری پیڈ تنازعہ کے بعد یونیورسیٹی انتظامیہ نے دو خاتون وارڈن اور دو خاتون سیکورٹی گارڈز کو برخاست کر دیا ہے۔ بتا دیں کہ منگل کو بھی پورے دن طالبات نے احتجاج کیا۔ ان کا الزام تھا کہ بیت الخلا میں سینیٹری پیڈ کس نے پھینکا، یہ جانچ کرنے کے لئے وارڈن نے تقریبا ایک درجن طالبات کے زبردستی کپڑے اتروا دئیے۔ معاملہ کو طول پکڑتا دیکھ کر یونیورسیٹی انتظامیہ نے اب یہ قدم اٹھایا ہے۔

بتا دیں کہ وارڈن کا یہ رویہ سامنے آنے کے بعد طالبات نے یونیورسیٹی انتظامیہ سے اس کی شکایت کی اور کارروائی کرنے کی مانگ کی۔ لیکن اسے محض غلطی بتا کر معاملہ کو رفع دفع کر دیا گیا۔ اس کے بعد بڑی تعداد میں طالبات کے احتجاج کے بعد چار ملازمین کو برخاست کر دیا گیا۔

Loading...

طالبات نے انتظامیہ پر تاخیر سے کارروائی کرنے کا الزام لگایا ہے۔ ساتھ ہی ان کا الزام ہے کہ کیمپس کے اندر دقیانوسی ماحول ہے اور ان کے طلبہ سے بھی بات چیت کرنے پر پابندی عائد کی گئی ہے۔

غور طلب ہے کہ تلونڈی سابو کی یونیورسیٹی میں دو دن پہلے ٹوائلٹ میں استعمال کئے گئے سینیٹری پیڈ ملے تھے۔ الزام ہے کہ ہاسٹل وارڈن نے مبینہ طور پر دو خاتون سیکورٹی گارڈوں کی مدد سے تقریبا 12 طالبات کے کپڑے اتروائے۔

 

Loading...